کٹاری

0
152
Urdu Drama Stories
- Advertisement -

(پوری تفصیلات کے ساتھ فلمی کہانی) 

فلم کے عنوان ختم ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔ آخری عنوان کے عقب میں’’بہارستان‘‘ کا ٹریڈ مارک ہے۔۔۔۔۔۔ ایک پھول اور دو کلیاں۔۔۔۔۔۔ ہم ڈزالو کرتے ہیں۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی سے ملحقہ باغ 

ٹریڈ مارک کا پھول اور کلیاں، اصلی شکل اختیار کرلیتی ہیں۔۔۔۔۔۔ کیمرہ پیچھے ہٹتا ہے۔۔۔۔۔۔ مالی پھول چن رہا ہے کچھ عرصہ اسی طرح مشغول رہنے کے بعد وہ اپنی دائیں طرف دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ کیمرہ اور پیچھے ہٹتا ہے۔ 

- Advertisement -

مالی: (دائیں طرف دیکھتے ہوئے)چمیلی! 

کیمرہ بین ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ مالی کی لڑکی جو کہ چل رہی تھی، رک جاتی ہے۔ 

مالی: سرکار آنے والے ہیں۔۔۔۔۔۔ جا کپڑے بدل لے۔ 

چمیلی اپنے میلے کپڑوں کی طرف دیکھتی ہے۔ 

چمیلی: اچھا۔ 

یہ کہہ وہ چلتی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹ کرکے ہم مالی پر آتے ہیں۔ وہ پُر اسرار انداز میں چمیلی کی طرف دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔زیرِ لب مسکراتا ہے اور پھر پھول توڑنے میں مصروف ہو جاتا ہے۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

گیراج کے باہر ٹاٹ لٹک رہا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی اسے ہٹا کر اندر داخل ہونے ہی والی ہے کہ موٹر سائیکل کے انجن کی پھٹ پھٹ سنائی دیتی ہے۔ ایک لحظے کے لیئے چمیلی رکتی ہے۔ پھر اندر گیراج میں چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ کیمرہ ٹاٹ کے سامنے ٹکا رہتا ہے۔ موٹر سائیکل کی آواز قریب تر ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ دفعتاً کیمرہ ایک دم پیچھے ہٹتا ہے۔۔۔۔۔۔ عقب میں ایک موٹر سائیکل نمودار ہوتی ہے جس پر چھوٹی سرکار سوار ہیں۔ موٹر سائیکل گیراج کے اندر چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی کی چیخ کی آواز۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی سے ملحقہ باغ 

ہم کٹ کرکے مالی کا رد عمل دکھاتے ہیں۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

ہم واپس گیراج پر آتے ہیں۔۔۔۔۔۔ٹاٹ کا پردہ ہٹتا ہے ۔۔۔۔۔۔چھوٹی سرکار باہر نکلتا ہے۔ مضطرب حالت میں اِدھر اُدھر دیکھتا ہے مالی کی آواز آتی ہے۔ 

مالی: آگئے چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: (مضطرب حالت میں مالی کی طرف بڑھتا ہے) ہاں آگیا۔۔۔۔۔۔ میرا مطلب ہے، موٹر سائیکل۔۔۔۔۔۔ میرا مطلب ہے چمیلی۔۔۔۔۔۔ 

مالی: چمیلی حضور۔ 

چھوٹی سرکار: نہیں نہیں۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار کہاں ہیں۔ 

حضور، مینڈھے دیکھ رہے ہیں 

چھوٹی سرکار: (جیسے خالی الذہن ہے) مینڈھے؟(گیراج کی طرف دیکھتا ہے) 

مالی: جی ہاں! 

چھوٹی سرکار: اچھی بات ہے۔۔۔۔۔۔ 

یہ کہہ کر چھوٹی سرکار ایک طرف چلا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ مالی پُر اسرا رطریقے سے زیر لب مسکراتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(اکھاڑہ) 

تین چار مینڈھے کھڑے ہیں۔ کالو پہلوان ایک مینڈھے کے مہندی لگا رہا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار ایک مینڈھے کے سینگ دیکھ رہا ہے۔ پاس منشی کھڑا ہے۔ 

بڑی سرکار: منشی صاحب۔ 

منشی: حضور۔ 

بڑی سرکار: اس کے جوڑ کا مینڈھا پیدا ہوا ہے نہ ہوگا۔ 

منشی: جی ہاں 

کالو: حضور، آپ کے اس غلام نے جتنی محنت اس جنور پر کی ہے۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: (بات کاٹتے ہوئے) اور جو دولت ہم نے صرف کی ہے۔۔۔۔۔۔(ایک طرف دیکھ کر) آؤ بھئی آؤ۔۔۔۔۔۔کب آئے۔ 

چھوٹی سرکار نمودار ہوتا ہے۔ 

منشی: آدابِ عرض چھوٹی سرکار۔ 

کالو: آدابِ عرض حضور۔ 

بڑی سرکار: (مینڈھے کے سینگوں پر ہاتھ پھیرتے ہوئے) کب آئے؟ 

چھوٹی سرکار: (دماغ ابھی تک مضطرب ہے) جی؟۔۔۔۔۔۔(چونک کر) بس آہی رہا ہوں۔ 

بڑی سرکار: اس کا یہ مطلب ہے کہ تم پورے طور پر ابھی تک نہیں آئے(ہنستا ہے) 

چھوٹی سرکار ہنسنے کی ناکام کوشش کرتا ہے۔ 

بڑی سرکار: (کالو سے) پھول ذرا خوبصورت بناؤ۔۔۔۔۔۔ (چھوٹی سرکار) ہاں بھئی تعلیم ولیم تو ختم ہوئی۔۔۔۔۔۔اب کیا ارادہ ہے؟ 

منشی: شکار کھیلا کریں گے۔ 

بڑی سرکار: (معنی خیز لہجے میں۔۔۔۔۔۔مینڈھے کے سینگوں پر ہاتھ پھیرتے ہوئے) شکار تو کالج میں بھی کھیلتا رہا ہوگا۔(ہنستا ہے) کیوں؟ 

چھوٹی سرکار: جی! 

بڑی سرکار: (چھوٹی سرکار کے کاندھے پر تھپکی دیتے ہوئے) جاؤ، جاؤ، آرام کرو۔ 

چھوٹی سرکار جانے لگتا ہے۔ 

منشی: چھوٹی سرکار گُلاب نہیں آیا؟ 

چھوٹی سرکار: نہیں۔۔۔۔۔۔ دو تین روز کے بعد آئے گا۔۔۔۔۔۔چمیلی 

بڑی سرکار: (ایک دم) چمیلی؟ 

چھوٹی سرکار: جی نہیں۔۔۔۔۔۔ میرا اسباب۔۔۔۔۔۔ میرا سامان اِدھر اُدھر بکھرا پڑا تھا۔۔۔۔۔۔ اکٹھا کرکے ٹرک میں لائے گا۔ 

بڑی سرکار: (کالو سے) پھول ذرا خوبصورت بناؤ۔ 

چھوٹی سرکار چلا جاتا ہے۔ سر کُھجاتا ہوا۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ، بیرونی حصہ۔) 

چھوٹی سرکار اسی طرح سر کھجاتا کمرے کے اندر داخل ہو جاتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ، بیرونی حصّہ) 

چھوٹی سرکار اپنی بُش شرٹ اتار کر ایک طرف پھینک دیتا ہے۔ سیٹی بجانا شروع کردیتا ہے اور ڈریسنگ ٹیبل کی طرف بڑھتا ہے۔ کنگھی اُٹھا کربالوں میں پھیرتا ہے۔ تھوڑے وقفے کے بعد اسے آئینے میں چمیلی کا عکس نظر آتا ہے۔۔۔۔۔۔ ردّعمل۔۔۔۔۔۔ مُڑتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: چمیلی۔ 

چمیلی گُلدان میں پھول سجا رہی ہے۔ ایک دم شرما جاتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار چمیلی کی طرف بڑھتا ہے۔۔۔۔۔۔چمیلی ایک طرف سمٹ جاتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: مجھے معلوم نہیں تھا تم اتنی خوبصورت ہو۔ 

چمیلی کا ہاتھ پکڑنا چاہتا ہے۔۔۔۔۔۔چمیلی کے ہاتھ سے پھول گر جاتے ہیں۔ 

چمیلی: (شرما کر) چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: تم ڈر کیوں گئی تھیں؟(ہاتھ پکڑ لیتا ہے) 

چمیلی: (ہاتھ چھڑا کر) چھوڑ دیجئے مجھے۔ 

ایک طرف ہٹتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اس کی طرف بڑھتا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی تیزی سے کمرے سے باہر نکل جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ۔۔۔۔۔۔بیرونی حصہ) 

چمیلی باہر نکلتی ہے۔۔۔۔۔۔ اس کی مڈبھیڑ منشی سے ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ منشی کا ردِّ عمل۔۔۔۔۔۔ چمیلی ایک دم رُک جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ اندر سے چھوٹی سرکار کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ 

چمیلی، چمیلی‘‘ 

چمیلی تیز قدمی سے چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار باہر نکلتا ہے۔۔۔۔۔۔ 

چھوٹی سرکار: چمیلی(منشی کو دیکھ کر) اوہ! 

منشی: (تھوڑے توقف کے بعد) حضور آپ کو کسی چیز کی ضرورت ہو تو۔۔۔۔۔۔ 

چھوٹی سرکار: ضرورت؟۔۔۔۔۔۔نہیں 

یہ کہہ وہ اندر چلا جاتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ۔۔۔۔۔۔بیرونی حصہ) 

چھوٹی سرکار دہلیز میں کھڑا ہو کر کچھ سوچتا ہے۔ پھر بالوں میں کنگھی کرتا ہوا آگے بڑھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دم اس کی نگاہیں تپائی پر رکھے ہوئے ننگے بُت پر پڑتی ہیں۔۔۔۔۔۔ رد عمل۔۔۔۔۔۔ مسکراتا ہے اور بت کو دیکھتا ہوا آگے بڑھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کنگھی کرتا کرتا آرام کرسی پر بیٹھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کنگھی بالوں میں اڑسی رہتی ہے۔۔۔۔۔۔ تپائی کی طرف ہاتھ بڑھاتا ہے جس پر میگزین پڑے ہیں۔۔۔۔۔۔ ایک میگزین اٹھاتا ہے۔۔۔۔۔۔ سرورق پر نہانے کے لباس میں ایک عورت کی تصویر چھپی ہے۔۔۔۔۔۔ اس کو دیکھ کر مسکراتا ہے۔۔۔۔۔۔ رسالہ ہاتھ میں لیئے اُٹھتا ہے اور کھڑکی کی طرف جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ باہر گیراج نظر آتا ہے جس پر ٹاٹ کا پردہ پڑا ہے۔۔۔۔۔۔چمیلی اسے ہٹا کر اندر داخل ہورہی ہے۔ چھوٹی سرکار میگزین کے سرورق کی طرف دیکھتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

ٹاٹ کے پردے پر سرورق کی تصویر پھیل جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

ٹاٹ کے پردے پرسے میگزین کے سرورق کی نیم برہنہ تصویر آہستہ آہستہ غائب ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ پردے میں جنبش پیدا ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی باہر نکلتی ہے۔۔۔۔۔۔ چند قدم چلتی ہے اور رُک کر ایک طرف دیکھتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(ٹینس کورٹ) 

چھوٹی سرکار اور بڑی سرکار ٹینس کھیل رہے ہیں۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ایڑھیاں اونچی کرکے چمیلی کی طرف دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار گیند پھینکتا ہے۔ چھوٹی سرکار اسے ہٹ لگاتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

گیند چمیلی کے لگتی ہے۔ اس کا ردّ عمل 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(ٹینس کورٹ) 

بڑی سرکار: (چھوٹی سرکار سے) شکار شروع کردیا۔ 

چھوٹی سرکار: (بوکھلا جاتا ہے) جی نہیں۔۔۔۔۔۔ وہ تو۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: (ہنستا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی کی طرف مڑ کر) چمیلی گیند لا ادھر( چمیلی گیند اٹھا کر لاتی ہے۔) 

بڑی سرکار: چمیلی۔۔۔۔۔۔ تو نے چھوٹی سرکار کی گیند اپنی طرف کیوں کھینچی۔ 

چمیلی: (کچھ سمجھتی نہیں) جی۔ 

بڑی سرکار: (قہقہہ لگاتا ہے اور چمیلی کے ہاتھ سے گیند لے لیتا ہے) جا بھاگ جا۔ چمیلی چلی جاتی ہے۔ بڑی سرکار، چھوٹی سرکار سے مخاطب ہوتے ہیں۔ 

بڑی سرکار: نشانے کے تم کافی پکے ہونا؟ 

چھوٹی سرکار: (جھینپ کر) جی نہیں۔۔۔۔۔۔ وہ تو۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: (قہقہہ لگاتا ہے اور گیند چھوٹی سرکار کی طرف پھینکتا ہے) 

چھوٹی سرکار گیند،ریکٹ پر اُٹھا لیتا ہے اور سر جھکا کر اسے اچھالنا شروع کردیتا ہے۔ 

بڑی سرکار کی حویلی۔۔۔۔۔۔(باغ کا فوارّہ) 

ہم ڈزالو کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔چمیلی کا کلوز اپ۔۔۔۔۔۔ کیمرہ پیچھے ہٹتا ہے۔۔۔۔۔۔چمیلی بغیر اوڑھنی کے کھڑی ہے۔۔۔۔۔۔اُوڑھنی چھوٹی سرکار کے ہاتھ میں ہے۔ 

چمیلی: (دونوں ہاتھوں سے سینہ ڈھانپتے ہوئے)میرا دوپٹہ دے دیجئے چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: (شرارت کے ساتھ) ہم نہیں دیں گے۔ 

چمیلی: کوئی دیکھ لے گا۔۔۔۔۔۔ بدنام ہو جاؤں گی۔ چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: تم خواہ مخواہ ڈرتی ہو۔ 

چمیلی: اس روز۔۔۔۔۔۔ اس روز بڑی سرکار کیا کہہ رہے تھے۔۔۔۔۔۔ لائیے دوپٹہ۔ 

چھوٹی سرکار: (آگے بڑھ کر)لو۔ 

چمیلی دوپٹہ لینے کے لیئیہاتھ بڑھاتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: ٹھہرو۔۔۔۔۔۔ میں ٹھیک طرح سے اُوڑھائے دیتا ہوں۔ 

چھوٹی سرکار چمیلی کو دوپٹہ اس طرح اوڑھاتا ہے کہ اُڑے نہیں۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد وہ اسے بازو سے پکڑتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: چلو آؤ، تمہیں موٹر سائیکل کی سیر کرائیں۔ 

چمیلی: نہیں۔چھوٹی سرکار نہیں۔ 

چھوٹی سرکار اس کو بازو سے کھینچتا ہوا لے جاتا ہے۔ کچھ فاصلے پر ان کی مڈبھیڑ مالی سے ہوتی ہے۔ دونوں رُک جاتے ہیں۔ 

چھوٹی سرکار: موٹر سائیکل کی۔۔۔۔۔۔ چمیلی کو موٹر سائیکل کی سیر کرانے لے جارہا ہوں۔ 

مالی: لے جائیے حضور۔ 

چھوٹی سرکار: (چمیلی سے) آؤ چمیلی۔ 

چمیلی کھڑی رہتی ہے۔ 

مالی: جاؤ چمیلی۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کی بڑی مہربانی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: مہربانی کیسی۔۔۔۔۔۔ آؤ چمیلی۔ 

چمیلی کو ساتھ لے جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ مالی پُر اسرار طور پر زیرِلب مسکراتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیراج) 

پردہ ہٹتا ہے۔۔۔۔۔۔ اندر سے موٹر سائیکل باہر نکلتی ہے۔ چھوٹی سرکار اسے چلا رہا ہے۔۔۔۔۔۔ پیچھے سیٹ پر چمیلی بیٹھی ہے۔۔۔۔۔۔ موٹر سائیکل حویلی سے باہر نکلتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

کھیت۔ 

ہم ڈزالوکرتے ہیں۔ 

موٹر سائیکل ایک طرف پڑی ہے۔۔۔۔۔۔ ٹائر پر سر رکھ کر چھوٹی سرکار لیٹا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی ایک طرف سمٹی بیٹھی ہے۔ ہاتھ سے سائیکل کے کل پرزوں کو چھیڑ رہی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: چلو آؤ، نہر میں نہائیں۔ 

چمیلی: (ایک دم چونک کر)کیا؟ 

چھوٹی سرکار: کالج میں لڑکے لڑکیاں اکٹھے نہاتے ہیں۔ 

چمیلی: (شرما کر دوپٹے سے اپنا چہرہ ڈھانپ لیتی ہے) آپ کیسی باتیں کرتے ہیں۔ 

چھوٹی سرکار: (اُٹھ کر چمیلی کا ہاتھ پکڑتے ہوئے)تم بتاؤ کیسی باتیں کروں۔ 

چہرے پر سے دوپٹہ ہٹاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: ایک منہ نظر آتا تھا وہ بھی چُھپا لیا۔ 

چمیلی کا ہاتھ غیر ارادی طور پر ہارن کے بٹن پر پڑتا ہے جو بج اٹھتا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی اوئی کرکے اُچک کر کھڑی ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ہنسنا شروع کردیتا ہے۔ 

چمیلی: (دل پر ہاتھ رکھتی ہے) 

چھوٹی سرکار اُٹھ کر چمیلی کے پاس جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کیا ہوا دل کو؟ 

چمیلی: دھک دھک کررہا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: سُنوں؟ 

یہ کہہ کر وہ اس کی کمر میں اپنا بازو حمائل کردیتا ہے اور کان سینے پر جمانے ہی والا ہے کہ چمیلی تڑپ کر ایک طرف ہٹ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چہرے پر ایک عجیب قسم کا خوف و ہراس پیدا ہوجاتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار آگے بڑھتا ہے اور چمیلی کو پکڑنا چاہتا ہے۔ 

چمیلی: (کانپتی آواز میں) نہیں نہیں۔۔۔۔۔۔ مجھے ہاتھ مت لگائیے چھوٹی سرکار۔۔۔ 

چھوٹی سرکار: (چمیلی کی طرف بڑھتے ہوئے) چمیلی۔ 

چمیلی: نہیں۔۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔۔نہیں۔ 

تیزی سے بھاگ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار وہیں کھڑا رہ جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: عجیب لڑکی ہے۔۔۔۔۔۔(مسکراتا ہے) 

مسکراتا ہوا چھوٹی سرکار اپنی موٹر سائیکل کی طرف آتا ہے۔ اُسے اُٹھاتا ہے۔۔۔۔۔۔ ہارن بجا کر مسکراتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دم فائرنگ کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کے ہاتھ سے موٹر سائیکل گر جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ رائفل ہاتھ میں لیئیہوئے بڑی سرکار، کالو پہلوان کے ساتھ نمودار ہوتا ہے۔ 

بڑی سرکار: کیوں بھئی، کیا ہورہا ہے یہاں؟ 

چھوٹی سرکار: جی۔۔۔۔۔۔ کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔ ایسے ہی چلا آیا تھا۔ 

بڑی سرکار: شکار کھیلنے کے لیئے؟ 

چھوٹی سرکار: جی نہیں۔۔۔۔۔۔ ایسے ہی گھومنے کے لیئے۔ 

بڑی سرکار: (مُسکرا کر) گھومو۔۔۔۔۔۔(کالو سے) چلو کالو۔ 

کالو اور بڑی سرکار چلے جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اپنی موٹر سائیکل اُٹھاتا ہے۔ 

فیڈ آؤٹ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا۔ 

ہم فیڈ اِن کرتے ہیں۔ 

ایک لڑکی کی ٹانگیں نظرآتی ہیں جو کبڈی کبڈی بولتی جارہی ہے۔۔۔۔۔۔ کیمرہ پیچھے ہٹتا ہے اور دکھاتا ہے کہ جیسی لڑکیاں کبڈی کھیل رہی ہیں۔۔۔۔۔۔ یہ لڑکی جب مخالف گروپ میں پہنچتی ہے تو پکڑی جاتی ہے اور’’مارکر‘‘ ایک طرف بٹھا دی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ دفعتاً’’کٹاری کٹاری‘‘ کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ ہماری ہیروئن تھرکتی ناچتی’’کٹاری کٹاری‘‘ کی گردان کرتی مخالف گروپ میں تیر کی طرح داخل ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ یہاں سے موسیقی شروع ہوتی اور کٹاری کھیل کھیل میں رقص کرتی، گاتی تھرکتی مخالف گروپ کی لڑکیوں سے چھیڑ چھاڑ کرتی ہے۔۔۔۔۔۔ آخر میں مخالف گروپ کی ایک پست قد لڑکی’’تتلی‘‘ جرأت سے کام لے کرکٹاری سے لپٹ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری اسے گھسیٹتی ہوئی لکیر تک پہنچنے کی کوشش کرتی ہے، مگر وہ کچھ اس طرح کٹاری سے چمٹی ہوئی ہے کہ دونوں لکیر کے پاس گر پڑتی ہیں۔۔۔۔۔۔ تتلی اُٹھ کر چلاّنا شروع کردیتی ہے۔۔۔۔۔۔ 

تتلی: کٹاری مر گئی۔۔۔۔۔۔ کٹاری مر گئی۔ 

کٹاری: (جو ابھی تک کٹاری کٹاری کیئے جارہی ہے) کیا؟ 

مخالف گروپ کی لڑکیاں: (بیک زبان) کٹاری مر گئی،کٹاری مر گئی۔ 

کٹاری غضب ناک ہو کر اٹھتی ہے اور تتلی کی چٹیا پکڑ لیتی ہے۔ 

کٹاری: کیا کہتی ہے تتلی کی بچی۔۔۔۔۔۔کٹاری مر گئی؟ 

تتلی: ہاں۔۔۔۔۔۔تو مر گئی ہے۔ 

کٹاری: بکتی ہے تو۔ 

تتلی: تیرا سانس ٹوٹ گیا تھا۔ 

کٹاری: میرا سانس تو مرتے وقت بھی نہیں ٹوٹے گا۔۔۔۔۔۔ لِفتی کہیں کی۔ 

تتلی: تولِفتی۔ 

کٹاری: (تتلی کے چانٹا لگاتی ہے) 

تتلی وحشی بِلّی کی طرح کٹاری پر حملہ کرتی ہے، کٹاری اس کا جواب دیتی ہے۔ اب باقاعدہ لڑائی شروع ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری اسے دبا لیتی ہے۔ 

کٹاری: بتا اب، کیا میرا سانس ٹوٹا تھا۔ 

تتلی: (ڈرکر) نہیں۔۔۔۔۔۔ نہیں۔ 

کٹاری اسے چھوڑ دیتی ہے۔۔۔۔۔۔ تتلی اُٹھتی ہے۔ 

تتلی: تمہارا سانس ایک بار نہیں، سو بار ٹوٹا تھا۔ 

منہ میں سے جیب نکال کر کٹاری کو دکھاتی ہے اور بھاگ جاتی ہے 

کٹاری اس کا تعاقب کرتی ہے 

تعاقب کے مختلف شوٹ 

**** 

سڑک 

سڑک کے عین بیچ کٹاری، تتلی کو دبوچ لیتی ہے۔ دونوں آپس میں گتھم گتھا ہو جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔ ایک دم بریک لگنے کی چیخ سنائی دیتی ہے۔۔۔۔۔۔ ایک لاری ان کے بالکل پاس پہنچ کر رکتی ہے۔۔۔۔۔۔گُلاب ڈرائیو کررہا ہے۔ 

گُلاب: (لڑکیوں سے)اے، اے۔۔۔۔۔۔ ش ش۔۔۔۔۔۔ اے 

اس کی کوئی نہیں سُنتا۔۔۔۔۔۔ لاری سے باہر نکلتا ہے۔ 

گُلاب: اے، اے۔۔۔۔۔۔یہ کیا ہورہا ہے۔ 

کٹاری: (دھینگا مشتی بند کرکے گُلاب کی طرف دیکھتے ہوئے) اندھے ہو؟۔۔۔۔۔۔ دیکھتے نہیں لڑائی ہورہی ہے۔ 

یہ کہہ کر کٹاری پھر لڑائی میں مشغول ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ گلاب مسکراتا ہے اور ان کو چھڑانے کی کوشش کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ مگر اس کوشش میں اس کے بھی تین چار چانٹے، دس پندرہ لاتیں اور چھ سات مُکے حصّے میں آجاتے ہیں۔ بالآخر وہ دونوں کو چھڑانے میں کامیاب ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ اس دوران میں دوسری لڑکیاں آجاتی ہیں۔ 

گُلاب: میری سمجھ میں نہیں آتا۔ تم لڑ کیوں رہی ہو۔ 

کٹاری: اس نے کہا تھا کہ میرا سانس ٹوٹ گیا تھا۔ 

گُلاب: سانس؟ 

کٹاری: (گُلاب سے) تم بتاؤ کیا میرا سانس ٹوٹ سکتا ہے؟ 

گُلاب: (کچھ سمجھ میں نہیں آتا، کیا جواب دے) 

کٹاری: جلدی بتاؤ، کیا میرا سانس ٹوٹ سکتا ہے؟ 

تتلی: اس پرتمہارا رعب نہیں چلے گا کٹاری۔۔۔۔۔۔ تم سے بہت زیادہ طاقت ورہے۔ 

کٹاری: مجھ سے زیادہ کوئی بھی طاقت ور نہیں ہوسکتا۔ 

تتلی: مرد ہے۔ 

کٹاری: میں مردوں کو کیا سمجھتی ہوں۔ 

تتلی: گردن مروڑ دے گا۔ 

کٹاری: اونہہ۔۔۔۔۔۔ میری کلائی ہی مروڑ کر دکھائے۔۔۔۔۔۔(کلائی گُلاب کی طرف بڑھاتی ہے) لو پکڑو۔ 

گُلاب: (مناسب و موزوں ردّ عمل) 

کٹاری: پکڑو۔ 

سب لڑکیاں: (گُلاب سے) پکڑو۔ 

کٹاری: پکڑتے کیوں نہیں۔۔۔۔۔۔ پکڑو۔۔۔۔۔۔ اور دیکھو، ان دو انگلیوں سے کیسے تمہارا ہاتھ جھٹک کر اپنی کلائی چھڑاتی ہوں۔۔۔۔۔۔پکڑو۔ 

گُلاب: موچ آجائے گی۔ 

کٹاری: ارے واہ رے میرے رستم پہلوان۔ 

تتلی: کچھ شرط لگاؤ تو پکڑے بھی۔ 

کٹاری: (گُلاب سے) لگاؤ شرط۔ 

تتلی: کتنے کی؟ 

کٹاری: رہی ایک ایک روپے کی۔ 

تتلی: ایک روپیہ تو یہ بخشیش دے گا تمہیں۔۔۔۔۔۔ سَو سَو روپے کی مانو تو کوئی بات بھی ہو۔(گُلاب سے) کیوں بابو؟ 

سب لڑکیاں: ری۔ ری۔ 

گُلاب مسکراتا ہے۔ 

کٹاری: رہی سو سو روپے کی۔۔۔۔۔۔(کلائی بڑھا کر) لو پکڑو۔ 

گُلاب: جانے دو۔ 

کٹاری: پکڑ بابو۔۔۔۔۔۔ جلدی فیصلہ ہو۔ 

گُلاب: (مسکرا کر کلائی ہاتھ میں لیتا ہے) کیسی خوبصورت کلائی ہے۔ 

کٹاری: وہ توہے۔۔۔۔۔۔ تم یہ دیکھنا چھڑاتی ہوں کس خوبصورتی سے۔ 

گُلاب: جو خوبصورت ہے، اس کی ہر چیز خوبصورت ہوگی۔ 

کٹاری: تو دیکھ لونا؟ 

گُلاب: (مذاقاً کلائی دونوں ہاتھوں میں پکڑ لیتا ہے) 

کٹاری: (تتلی سے) تتلی بس اتنا ہی زور ہے تمہارے رستم میں۔ 

تتلی: (گُلاب سے) ذرا ایک پیچ دو۔ 

گُلاب گرفت ذرا مضبوط کردیتا ہے۔ 

کٹاری: بس؟ چھڑاؤں۔ 

گُلاب ایک دم گرفت مضبوط کرلیتا ہے۔ 

کٹاری: اوئی! 

گُلاب گرفت ڈھیلی کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری فائدہ اُٹھاتی ہے اور کھٹ سے ہاتھ مار کر اپنی کلائی چھڑا لیتی ہے۔۔۔۔۔۔ لڑکیاں شور مچا دیتی ہیں۔ 

کٹاری: وہ مارا۔ 

گُلاب: (مسکرا کر) کیا مارا؟ 

کٹاری: چھڑالی کلائی۔ 

گلاب: کب چھڑائی، کیسے چھڑائی؟ 

تتلی: بابو۔ چھڑا تو لی۔ 

باقی لڑکیاں چِلّاتی ہیں۔’’چھڑا لی، چھڑالی‘‘۔ 

گُلاب: کیا؟ 

تتلی: شرط ہاری۔۔۔۔۔۔ دو روپئے۔ 

کٹاری: اس طرح نہیں دے گا۔۔۔۔۔۔(لڑکیوں سے) ایک۔۔۔۔۔۔ دو۔۔۔۔۔۔ پکڑ لو۔ سب لڑکیاں گُلاب کو پکڑ لیتی ہیں۔ کٹاری اُچک کر گُلاب کی جیب سے سارے نوٹ نکال لیتی ہیں۔ 

کٹاری: اوہ۔۔۔۔۔۔ یہ تو کافی سارے ہیں 

گُلاب: (بھنا کر) اُچکیو، شہدیو، چھوڑو مجھے۔ 

کٹاری: چھوڑ دو( سو روپے کا ایک نوٹ نکال کر اپنے گھگھرے میں اڑس لیتی ہے) دیکھ لو، ایک کوڑی زیادہ نہیں لی۔۔۔۔۔۔ لو۔ تتلی آگے بڑھ کر ایک روپیے کا نوٹ چھین لیتی ہے۔ 

تتلی: ایک روپیہ میں لوں گی۔ 

کٹاری: واپس کروتتلی۔ 

تتلی: واہ۔۔۔۔۔۔ میں نے اتنی مار کھائی ہے۔ 

کٹاری: اچھا، رکھو اپنے پاس۔۔۔۔۔۔ بقایا نوٹگُلاب کو دیتی ہے۔ لو( ایک دم لڑکیوں سے) ایک۔۔۔۔۔۔ دو۔۔۔۔۔۔ بھاگو۔ سب بھاگ جاتی ہیں۔ گلاب نوٹ پکڑ کر بھونچکا رہ جاتا ہے۔ 

گُلاب: لُٹیرن کہیں کی۔۔۔۔۔۔ 

کٹاری کے تعاقب میں بھاگتا ہے۔ 

تعاقب کے مختلف شوٹ۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا ( ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصہ) 

کٹاری تیزی سے اندر خیمے میں داخل ہوتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا ( ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ اندرونی حصہ) 

ڈمرو چٹائی پر لیٹا ہے۔۔۔۔۔۔ چھت کا پنکھا ہل رہا ہے 

کٹاری ڈمرو کو جگاتی ہے۔ 

کٹاری: ڈمرو، ڈمرو۔ 

ڈمرو: جا،جا۔ سونے دے مجھے۔ 

باہر سے گُلاب کی آواز آتی ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔ 

کٹاری نوٹ نکال کر ڈمرو کے ہاتھ میں دیتی ہے۔ 

کٹاری: لے سنبھال اسے 

یہ کہہ وہ تیزی سے ایک طرف چلی جاتی ہے۔ 

ڈمرو: کیا ہے؟ 

گُلاب کی آواز آتی ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔ 

ڈمرو مٹھی کھول کر سو کا نوٹ دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ ردّ عمل۔۔۔۔۔۔ اور زیادہ آنکھیں کھولتاہے۔۔۔۔۔۔ ساتھ ہی باچھیں کھل جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔ نوٹ کو چومتا ہے۔ 

گُلاب: کٹاری 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا (ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصہ) 

گُلاب باہر کھڑا اِدھر اُدھر دیکھ رہا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک کھونٹے کے سامنے مینڈھا بندھا ہے۔ دوسرے کے ساتھ ریچھ۔۔۔۔۔۔ ایک کتا ہے جومنہ میں رسی لیئے کبھی ادھر کھینچتا ہے کبھی ادھر۔ یہ رسی تنبو میں چلی گئی ہے۔۔۔۔۔۔گُلاب خیمے کے اندر داخل ہوتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا (ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ اندرونی حصہ) 

ڈمرو نوٹ کو کھڑکھڑا رہا ہے 

گُلاب: کٹاری۔ 

ڈمرو: آؤ۔۔۔۔۔۔ آؤ۔ 

گُلاب: (نوٹ دیکھ کر) یہ نوٹ۔۔۔۔۔۔ یہ نوٹ میرا ہے۔ 

ڈمرو: تمہارا ہے؟۔۔۔۔۔۔ تو میرے پاس کیسے چلا آیا۔ 

گُلاب: (پاس جا کر) وہ لڑکی جو ابھی اندر گئی تھی، اس نے تمہیں دیا ہے۔ 

ڈمرو: اس نے کہاں سے لیا یہ نوٹ۔ 

گُلاب: مجھ سے چھین کر لے آئی ہے۔ 

ڈمرو: اعلانیا؟ 

گُلاب: لاؤ نوٹ دو مجھے۔ 

ڈمرو: ارے بھائی اتنی جلدی کیا کرتے ہو۔۔۔۔۔۔ آؤ بیٹھو، چائے پانی پیو۔( آواز دیتا ہے) بیگم۔۔۔۔۔۔ سگریٹ تو لانا۔ 

گُلاب: تم نوٹ لاؤ۔ 

ڈمرو: ٹھہرو، مجھے چشمہ لگا کر دیکھنے دو۔ 

ڈبیہ سے چشمہ نکالتا ہے۔۔۔۔۔۔ دھوتی کے پَلو سے صاف کرتا ہے۔ مگر اس کے شیشے ہی نہیں۔۔۔۔۔۔ گلاب دلچسپی لیتا ہے۔ 

گُلاب: کیا ہے یہ چشمہ۔ 

ڈمرو: اوّل نمبر۔ 

ایک بندریا آتی ہے اور سلگا ہوا سگریٹ ڈمرو کو دیتی ہے۔ 

ڈمرو: لو، سگریٹ پیو۔ 

گُلاب: میں نہیں پیتا۔۔۔۔۔۔ تم نوٹ حوالے کرو میرا۔ 

ڈمرو: مجھے دیکھنے دو(چشمہ لگاتا ہے)، ارے۔۔۔۔۔۔ یہ تو کھوٹا ہے۔ 

گُلاب: کھوٹا کھرا جیسا ہے، ٹھیک ہے۔۔۔۔۔۔ لاؤ۔ 

ڈمرو: لو ابھی پتہ چل جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ میں چھو کرتا ہوں۔۔۔۔۔۔ کھوٹا ہو گا تو یوں اُڑ جائے گا( مٹھی بند کرکے چُھو کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ پھر مُٹھی کھولتا ہے۔۔۔۔۔۔ نوٹ غائب ہے کیوں دوست ابھی نہیں مانو گے۔ 

گُلاب: تم سب چور ہو۔۔۔۔۔۔اٹھائی گیرے۔۔۔۔۔۔ ڈاکو۔۔۔۔۔۔ کہاں ہے وہ لڑکی۔ 

ڈمرو: ریڈیو گھر گئی ہے۔ 

گُلاب: (غصّے میں) کہاں ہے وہ تمہارے باپ کا ریڈیو گھر۔ 

ڈمرو: گالی مت دو یار۔ 

گُلاب: گالی کے بچے نوٹ لا اِدھر۔ 

پنکھا بند ہو جاتا ہے۔ 

ڈمرو: (پنکھے کی طرف دیکھ کر) چچ چچ۔۔۔۔۔۔ بجلی فیل ہوگئی۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا (ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصہ ) 

ہم کٹ کرکے دکھاتے ہیں کہ رسّی ایک طرف پڑی ہے اور اسے کھینچنے والا کتا بیٹھا ہڈی چبا رہا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا (ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ اندرونی حصّہ) 

ڈمرو: بجلی گھر کا منیجر بڑا حرامی ہے۔۔۔۔۔۔ نکال دوں گا سالے کو باہر، آؤ تمہیں ریڈیو سُنا دوں۔ 

گُلاب: میں کہتا ہوں میرا نوٹ حوالے کرو میرے۔ 

ڈمرو: وہ تو ہوگیا ہے غائب اور غائب ہونے کا جو دکھ مجھے اور تمہیں ہوا ہے، وہ ریڈیو سُننے سے ہی دُور ہوسکتا ہے۔ 

ایک طرف لکڑی کا ریڈیو نما بکس پڑا ہے۔ ڈمرو اس کی طرف ہاتھ بڑھاتا ہے۔ 

گُلاب: تمہارے ریڈیو کی ایسی تیسی۔ 

ڈمرو: ایسا نہ کہو، ناراض ہو جائے گا۔ بٹن گُھماتا ہے زور کی کھڑکھڑی ہوتی ہے دیکھا؟ 

گُلاب دیکھتا ہے کہ پنجرے میں یہ آواز طوطا پیدا کررہا ہے۔ 

گُلاب: یہاں کے جانور بھی چار سو بیس ہیں۔ 

ڈمرو: (بٹن گھماتا ہے) 

طوطا: ہم ساتویں آسمان سے بول رہے ہیں۔ 

ڈمرو: بالکل ٹھیک ہے۔۔۔۔۔۔ لو بھئی سُنو گانا۔ 

بانجو پر موسیقی کی گت شروع ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔گُلاب طوطے کی طرف دیکھتا ہے جو خاموش ہے۔۔۔۔۔۔ گانا شروع ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب اِدھر اُدھر دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ ڈمرو اشارے سے گُلاب کو بیٹھنے کے لیئے کہتا ہے مگر وہ نہیں بیٹھتا ہے۔۔۔۔۔۔ تھوڑی دیر کے بعد ڈمرو لکڑی کے ریڈیو نما بکس کے کالے توے کو ایک طرف ہٹاتا ہے۔۔۔۔۔۔ گول دائرے کے پیچھے کٹاری کا چہرہ نظر آتا ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب کا ردّ عمل۔۔۔۔۔۔ وہ آگے بڑھتا ہے کہ لکڑی کے بکس کے پیچھے کٹاری کھڑی ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب ذرا اور آگے بڑھتا ہے تو وہ ایک ادا سے گاتی ہوئی گُلاب کی بغل میں آکھڑی ہوتی ہے۔ گلاب اس کو پکڑنا چاہتا ہے مگر وہ ناچتی ہوئی باہر نکل جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا (ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصہ) 

گُلاب باہر نکلتا ہے۔۔۔۔۔۔ مرد، عورتیں، لڑکیاں سب جمع ہو جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔ کٹاری گا اور ناچ رہی ہے۔۔۔۔۔۔ ایک لحظے کے لیئے گُلاب سب کچھ بھول جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری کی ادائیں اسے مسحور کر دیتی ہیں۔ لیکن تھوڑے وقفے کے بعد اسے اپنا نوٹ یاد آتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دم وہ چِلاّتا ہے۔ 

گُلاب: بند کرو یہ بکواس۔۔۔۔۔۔ میرا نوٹ واپس دو۔ 

گانا بند ہو جاتا ہے۔ کٹاری پاؤں کے گھنگرو کھنکھناتی گُلاب کے پاس جاتی ہے۔ 

کٹاری: نام کیا ہے تمہارا بابو۔۔۔۔۔۔ 

گّلاب: (چِلّا کر) میرا نام ہے سو روپے کا نوٹ۔ 

سب زور سے ہنستے ہیں 

گّلاب: بند کرو ہنسی۔ 

کٹاری: (ایک ادا کے ساتھ) سو روپے کے نوٹ جی۔۔۔۔۔۔ میرا نام ہے دونی۔ 

سب زور سے ہنستے ہیں۔ 

گُلاب: (اور زیادہ چِلاّ کر) میں پاگل ہو جاؤں گا۔۔۔۔۔۔ میں تم سب کو قتل کردُوں گا۔ 

ڈمرو کی آواز آتی ہے۔ 

ڈمرو: کون ہے یہ ہٹلر۔ 

ڈمرو اپنے بازو کے ڈنٹر دکھاتا ہوا قریب قریبگُلاب کے اُوپر چڑھ جاتا ہے۔ 

گُلاب: تم میرا سو روپیہ کیوں واپس نہیں دیتے؟ 

ڈمرو: دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔ اِدھر آؤ( ایک طرف چلتے ہوئے) آؤ۔ 

گلاب اس کی طرف بڑھتا ہے۔۔۔۔۔۔ دونوں کچھ دُور چلتے ہیں۔ 

ڈمرو: (ایک طرف اشارہ کرکے) کھڑے ہو جاؤ یہاں۔ 

گُلاب وہاں کھڑا ہو جاتا ہے۔ 

ڈمرو: سو کا نوٹ چا ہیئے، ہزار کا۔ 

گُلاب: اپنا سو کا۔ 

ڈمرو: اپنا سو کا نوٹ ایک۔۔۔۔۔۔ اپنا سو کا نوٹ دو۔ 

ایک دم کچھ ہوتا ہے اور گلاب کیمرے پر سے اُڑتا ہوا چلا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹ کرکے ہم دکھاتے ہیں کہ مینڈھے کی گردن ہل رہی ہے اور گلاب بہت دور کیچڑ میں لت پت زمین پر اوندھے منہ پڑا ہے۔۔۔۔۔۔ دانت پیستا ہوا اُٹھتا ہے۔ چاہتا ہے کہ ڈمرو کی طرف جائے مگر رک جاتا ہے، کیوں کہ ڈمرو کے ساتھ اور کئی ہٹے کٹے مرد آستین چڑھائے کھڑے ہیں۔ 

گلاب: آج نہیں پھر کبھی سہی۔۔۔۔۔۔ ایسا مزا چکھاؤں گا کہ یاد رکھو گے۔۔۔۔۔۔ لٹیرے۔ بدمعاش۔ 

سب خانہ بدوش زور سے ہنستے ہیں۔۔۔۔۔۔ گُلاب ٹرک میں بیٹھتا ہے اور اسے اسٹارٹ کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ اس پر ہنسنے کا شور آتا رہتا ہے۔ 

فیڈ آؤٹ 

بڑی سرکار کی حویلی( بڑا کمرہ۔۔۔۔۔۔ اندرونی حصہ) 

تخت پر گاؤ تکیئے کا سہارا لیئے بڑی سرکار بیٹھا ہے اور ایک دو نالی بندوق کا معائنہ کررہا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک طرف منشی حساب کتاب کررہا ہے۔۔۔۔۔۔ دوسری طرف ایک دیہاتی کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار اس سے مخاطب ہوتا ہے۔ 

بڑی سرکار: اچھی ہے۔ 

دیہاتی: سرکار نایاب چیز ہے۔ 

بڑی سرکار: ہمارے لیئے کوئی چیز نایاب نہیں۔۔۔۔۔۔منشی جی۔ 

منشی: حضور! 

بڑی سرکار: سو کا ایک نوٹ دیجئے اسے 

دیہاتی: سرکار۔۔۔۔۔۔ یہ تو بہت کم ہیں۔۔۔۔۔۔ایسی نایاب چیز۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: نایاب چیز ہے تو نذرانے کے طور پر پیش کرو۔۔۔۔۔۔ کیوں منشی جی۔ 

منشی: بالکل درست ہے۔ 

دیہاتی: لیکن حضور۔۔۔۔۔۔ 

منشی: (سو کا نوٹ دے کر)لو۔۔۔ 

دیہاتی: میں اسے لایا ہی کیوں؟ 

بڑی سرکار: کیا کہا؟ 

منشی: کچھ نہیں حضور۔۔۔۔۔۔ شکریہ ادا کررہا ہے۔ 

دیہاتی: (طنز کے ساتھ) بہت بہت شکریہ حضور! 

یہ کہہ کر چلا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار قہقہے لگاتا ہے اور بندوق کو پسندیدہ نظروں سے دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔گُلاب داخل ہوتا ہے۔ 

گُلاب: آداب عرض بڑی سرکار۔ 

بڑی سرکار: آگئے۔ 

گُلاب: جی ہاں۔ 

بڑی سرکار: میرا مطلب یہ تھا کہ چھوٹی سرکار کا سارا سامان آگیا۔ 

گُلاب: جی ہاں، ایک ایک چیز لے آیا ہوں۔ 

یہ کہہ کرگُلاب اپنے باپ کو روپے دیتا ہے۔۔۔۔۔۔منشی روپے گنتا ہے۔ 

گُلاب: آہستہ) ابھی نہیں گنو۔ 

منشی: کیوں؟ 

گُلاب: آہستہ بولو۔۔۔۔۔۔ کم ہیں۔ 

منشی: (آہستہ) کتنے؟ 

گُلاب: (آہستہ) ایک سَو۔ 

منشی: (اونچی آواز میں) ایک سو؟ 

بڑی سرکار: کیا بات ہے منشی جی؟ 

منشی: حضور۔۔۔۔۔۔ 

گُلاب: (چپ رہنے کا اشارہ کرتا ہے) 

بڑی سرکار: منشی جی، میں نے پوچھا تھا کیا بات ہے؟ 

منشی: حضور۔۔۔۔۔۔ حساب میں ایک سو روپیہ کم ہے۔ 

بڑی سرکار: ابھی ابھی آپ نے بندوق کی قیمت جو ادا کی ہے۔ 

منشی: ہاں حضور، وہ تو ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن۔۔۔۔۔۔ 

گُلاب: (چپ رہنے کا اشارہ کرتا ہے) 

بڑی سرکار: گُلاب،تم اپنے باپ کو بار بار چپ رہنے کے لیئے کیوں اشارہ کررہے ہو۔ 

گُلاب: حضور، بات یہ ہے۔۔۔۔۔۔ 

منشی: میں عرض کرتا ہوں سرکار۔۔۔۔۔۔ گُلاب کے پاس چھوٹی سرکار کا جو حساب ہے۔ اس میں سو روپے کم ہیں۔ 

بڑی سرکار: سو روپے۔ 

تخت پرسے بندوق لے اُٹھتا ہے۔ 

گُلاب: جی ہاں۔ 

بڑی سرکار: کیسے کم ہوئے۔ 

گُلاب: حضور، میں ادھر آرہا تھا۔۔۔۔۔۔راستے میں سڑک پر مجھے ایک لڑکی ملی۔ 

بڑی سرکار: لڑکی! 

منشی: (اونچی آواز میں) لڑکی؟ 

گُلاب: لڑکی نہیں۔۔۔۔۔۔ خانہ بدوش۔۔۔۔۔۔ یعنی خانہ بدوش لڑکی۔ 

بڑی سرکار: خانہ بدوش لڑکی۔ 

گُلاب: (اٹھ کر) جی ہاں۔۔۔۔۔۔ وہاں بہت سی ہیں حضور۔ 

بڑی سرکار: ایک سو؟ 

گُلاب: میں نے گنی نہیں حضور۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: سو روپیہ کیسے گم ہوا۔ 

گُلاب: زبردستی چھین کر لے گئی حضور۔ 

منشی: جھوٹ مت بولو گُلاب۔ 

گُلاب: میں بالکل سچ کہہ رہا ہوں۔ 

بڑی سرکار: یعنی ایک لڑکی چھین کر لے گئی تم سے۔ 

گُلاب: جی ہاں۔۔۔۔۔۔ وہ خانہ بدوش لڑکی۔۔۔۔۔۔ کٹاری اس کا نام ہے۔ 

بڑی سرکار: دل میں تو نہیں کُھب گئی تمہارے۔ 

گُلاب: (خاموش ہو جاتا ہے) 

بڑی سرکار: (قہقہہ لگاتا ہے، پھر آواز دیتا ہے) کالو! 

دور سے کالو کی آواز آتی ہے’’ حاضر ہوا سرکار‘‘! 

بڑی سرکار: کہاں ہے ان خانہ بدوشوں کا ڈیرہ۔ 

گُلاب: دو ایک کوس دُور ہے۔ 

کالوآتا ہے۔ 

بڑی سرکار: کالو۔۔۔۔۔۔ یہاں سے دو ایک کوس دور ڈیرہ ہے خانہ بدوشوں کا۔ 

کالو: جانتا ہوں سرکار۔ 

بڑی سرکار: ایک لڑکی ہے کٹاری۔۔۔۔۔۔ اس کو حاضر کرو یہاں شام سے پہلے پہلے۔ 

کالو: ابھی جاتا ہوں سرکار۔ 

بڑی سرکار: ابھی نہیں۔۔۔۔۔۔ پہلے مینڈھوں کودانہ پانی دو۔ 

کالو: چلا سرکار۔ 

بڑی سرکار: اور شام سے پہلے پہلے کٹاری یہاں موجود ہو۔ 

کالو: ضرور ہوگی سرکار۔ 

کالو چلا جاتا ہے۔ 

بڑی سرکار: منشی جی اگر گُلاب کا بیان درست ہے تو ہم اس چھوکری کی کھال اُدھیڑ دیں گے۔ 

گُلاب: (ردِ عمل) 

بڑی سرکار: گولی سے اُڑا دیں گے۔ 

بڑی سرکار: (بندوق سے کھیلتے ہوئے) اس بندوق کے نشانے کا بھی پتا چل جائے گا۔ 

گُلاب: میرا خیال ہے۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار: کیا خیال ہے تمہارا ؟ 

گُلاب: میں ہی جاتا ہوں سرکار۔۔۔۔۔۔ آپ کا نام لوں گا تو وہ ڈر کے ضرور واپس کردے گی۔ میرا نوٹ۔۔۔۔۔۔ میں ابھی جاتا ہوں۔ 

یہ کہہ کر وہ بڑی تیزی سے باہر نکل جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار قہقہہ لگاتا ہے۔ 

بڑی سرکار: منشی جی۔۔۔۔۔۔ مالک کے روپے سے چھوکریوں کے ساتھ عشق لڑانا۔۔۔۔۔۔ یہ ہم ہرگز پسند نہیں کرتے۔ 

منشی: حضورمجھے یقین تو نہیں کہگُلاب نے ایسا کیا ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن حضور اگر اس نے یہ حرکت کی ہے۔۔۔۔۔۔ تو آپ مالک ہیں۔۔۔۔۔۔ میرے سامنے گردن اڑا دیجئے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی۔۔۔۔۔۔ منشی کا کوارٹر(اندرونی حصہ) 

گُلاب ٹرنک اٹھانے میں مصروف ہے۔۔۔۔۔۔ ایک ٹرنک اٹھاتا ہے۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد دوسرا پھر تیسرا۔۔۔۔۔۔ سب سے نیچے صندوق ہے۔ پلنگ کے ایک پائے کو اونچا کرتا ہے، اس کے نیچے سے چابی نکالتا ہے۔ صندوق کا تالا کھولتا ہے۔ اس کے اندر سے ایک بکس نکالتا ہے، بکس کی چابی پلنگ کے دوسرے پائے تلے سے نکالتا ہے۔ بٹوہ میں سے ایک اور بٹوہ نکلتا ہے۔ اُسے کھولتا ہے تو کپڑے میں لپٹی ہوئی ایک چیز نکلتی ہے۔۔۔۔۔۔ اسے کھولتا ہے۔۔۔۔۔۔ دو نوٹ دکھائی دیتے ہیں سَو سَو کے۔۔۔۔۔۔ ایک نوٹ نکال کر جیب میں رکھتا ہے اور جلدی جلدی سب چیزیں باری باری بند کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ ٹرنک رکھ رہا ہے کہ اس کا باپ اندر داخل ہوتا ہے۔ 

منشی: کیا کررہیگُلاب؟ 

گُلاب: ایک نوٹ نکالا ہے سو روپے کا۔ 

منشی: کیوں؟ 

گُلاب: واپس دوں گا بڑی سرکار کو۔۔۔۔۔۔ کہوں گا لے آیا ہوں کٹاری سے 

منشی: (سنگین سنجیدگی کے ساتھ) یہ کٹاری کون ہے گلاب۔ 

گُلاب: میں نہیں جانتا کون ہے۔۔۔۔۔۔ خانہ بدوش لڑکی ہے۔۔۔۔۔۔ میں نہیں چاہتا کہ بڑی سرکار اس کو سزا دیں۔ 

منشی: گلاب۔ بیٹھ یہاں۔ 

گلاب چارپائی پر بیٹھ جاتا ہے۔ 

منشی: (بڑی سنجیدگی کے ساتھ) سن۔۔۔۔۔۔ تو ایک غریب آدمی کا لڑکا ہے۔ عیاشیاں صرف امیروں کیلیئے ہیں۔۔۔۔۔۔ تو کہیں بہک تو نہیں گیا۔ 

گُلاب: میں سمجھا نہیں۔ 

منشی: تو مجھے صرف اتنا کہہ دے کہ تیرا من میلا نہیں بس! 

گُلاب: میں اتنا کہہ سکتا ہوں کہ میرا من چھوٹی سرکار کا من نہیں۔۔۔۔۔۔ 

منشی: بس بس!۔۔۔۔۔۔ جا لے جا روپے۔ 

گُلاب اُٹھتا ہے۔ 

منشی: ٹھہر(مسکراتا ہے) اتنی جلدی جارہا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار یہ نہ پوچھیں گے کہ دو کوس کا آنا جانا تو نے اتنی جلدی کیسے کیا؟ 

گُلاب: (مسکراتا ہے) یہ میں نے سوچا ہی نہیں تھا۔ 

منشی: بیٹھ جا تھوڑی دیر یہاں۔ 

دونوں چارپائی پر بیٹھ جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ منشیگُلاب کے کاندھے پر ہاتھ رکھتا ہے، بڑے پیار سے۔ 

منشی: بس میری یہ دعا ہے تو سدا نیک رہے۔ 

گُلاب مسکراتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(بڑا کمرہ) 

ہم ڈزالو کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار ہاتھ پر باز رکھے اُس سے کھیل رہا ہے۔گُلاب داخل ہوتا ہے۔ بڑی سرکار اس کی طرف متوجہ ہوتا ہے۔ 

بڑی سرکار: (ذومعنی لہجے میں) کٹاری سے مل آئے؟ 

گُلاب: جی ہاں۔ 

بڑی سرکار: اور زیادہ گھائل تو نہیں ہوئے؟ 

گُلاب: جی! 

بڑی سرکار: (قہقہہ لگاتا ہے) روپے لیئے واپس؟ 

گُلاب: جی ہاں۔ 

یہ کہہ کر وہ سو روپے کا نوٹ جیب سے نکالتا ہے۔ 

گُلاب: دیتی نہیں تھی، پر جب میں نے کہا کہ بڑی سرکار مارے کوڑوں کے کھال ادھیڑ دیں گے جھٹ سے نوٹ میرے حوالے کیا۔ 

کٹاری کی آواز آتی ہے۔ 

کٹاری: جھوٹ! 

بڑی سرکار اورگُلاب کا ردّ عمل۔۔۔۔۔۔ گُلاب بالکل بوکھلا جاتا ہے۔ 

کٹاری تھرکتی، ناچتی گُلاب کے پاس آتی ہے۔ 

کالو: حضور،کٹاری حاضر ہے۔ 

بڑی سرکار: (کٹاری کی طرف غور سے دیکھتا ہے) کافی تیز ہے( گُلاب سے) گُلاب روپے کیسے واپس کیئے اس نے؟ 

کٹاری: (کس نے واپس کیئے؟(گُلاب سے) جھوٹے۔ 

بڑی سرکار: پاپ کیا ہے گلاب؟ 

گُلاب: (سر جُھکا کر) حضور، آپ نے کہا تھا کہ آپ کھال ادھیڑدیں گے اس کی۔۔۔ 

کٹاری: میری کھال ادھیڑ دیں گے؟ 

گُلاب: یہ نوٹ میرا اپنا ہے۔ 

بڑی سرکار: تو اس کا یہ مطلب ہے کہ کٹاری چل گئی ہے تمہارے دل پر(ہنستا ہے) 

گُلاب: (خاموش رہتا ہے) 

کٹاری: (بڑی سرکار سے) جناب آپ مجھ سے بات کیجئے۔۔۔۔۔۔(کالو کی طرف اشارہ کرکے) اس کالے آدمی کو بھیج کر مجھے کیوں بلایا گیا ہے یہاں۔ 

کالو: حضور اس کی زبان بند کیجئے۔ 

کٹاری: اپنی جیب نکال کر کالو کو دکھاتی ہے۔ 

بڑی سرکار: گُلاب، چھوٹی سرکار کو بلاؤ۔ 

کٹاری: تم چھوٹی موٹی جتنی چاہے سرکاریں بلا لو۔۔۔۔۔۔ میں سو روپیہ واپس نہیں دینے کی۔ 

گُلاب چلا جاتا ہے۔ 

بڑی سرکار: (باز سے کھیلتے ہوئے) کیوں۔ 

کٹاری: اجی واہ۔۔۔۔۔۔ شرط جیتی ہے جناب۔ 

بڑی سرکار: کیسی شرط؟ 

کٹاری: میری کلائی پکڑ لی، میں نے چُھڑا لی۔۔۔۔۔۔ اور سو روپیہ جیت لیا۔۔۔۔۔۔ اب آپ ہی بتائیے جناب!، یہ روپیہ کیسے واپس ہوسکتا ہے۔ 

بڑی سرکار: تم ایک جگہ کھڑی کیوں نہیں رہتیں؟ 

کٹاری: (مسکرا کر) چلت پھرت ہم خانہ بدوشوں کی زندگی ہے۔ 

چھوٹی سرکار داخل ہوتا ہے۔ کٹاری کی طرف نہیں دیکھتا۔ 

چھوٹی سرکار: آپ نے مجھے بلایا ہے۔ 

بڑی سرکار: (کٹاری کی طرف اشارہ کرکے)یہ چیز دیکھنے کے لیئے۔ 

چھوٹی سرکار کٹاری کی طرف دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری مسکراتی ہے اور اس کی طرف بڑھتی ہے۔ 

کٹاری: آپ کیا شے ہیں جناب؟ 

بڑی سرکار ہنستا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کون ہے یہ لڑکی؟ 

بڑی سرکار: کٹاری!۔۔۔۔۔۔ کلائی پکڑو اس کی۔ 

کٹاری: نہ نہ نہ نہ۔۔۔۔۔۔ کٹ جائیں گے ہاتھ۔ 

بڑی سرکار: کیوں کٹاری، پکڑے چھوٹی سرکار تمہاری کلائی؟ 

کٹاری: شرط ہوگی سو روپے کے ساتھ۔ 

بڑی سرکار: منظور۔ 

کٹاری: لاؤ ہاتھ۔ 

کٹاری بڑی سرکار کے ہاتھ پر ہاتھ مارتی اور آستین چڑھا کر اپنی کلائی چھوٹی سرکار کی طرف بڑھاتی ہے۔ 

کٹاری: لو۔ 

بڑی سرکار: چلو بھئی پکڑو۔۔۔۔۔۔ 

چھوٹی سرکار: میں کچھ سمجھا نہیں۔ 

کٹاری: تم پکڑو کلائی، میں سمجھاتی ہوں۔ 

چھوٹی سرکار کلائی پکڑتا ہے۔ 

کٹاری: مضبوط پکڑو۔۔۔۔۔۔ لو میں لگی ہوں چھڑانے۔ 

چھوٹی سرکار ایک دم گرفت مضبوط کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری زور سے’’ اوئی‘‘ کرتی ہے اور چھوٹی سرکار کے ہاتھ کو جھٹکا دیتی ہے۔ مگر وہ گرفت کو اور زیادہ مضبوط کردیتا ہے۔ اب کٹاری زور لگانا شروع کردیتی ہے۔ مگر چھوٹی سرکار کلائی نہیں چھوڑتا۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار قہقہے لگاتا ہے۔ 

بڑی سرکار: (چھوٹی سرکار سے) چھوڑ دو کلائی۔ 

چھوٹی سرکار کلائی چھوڑ دیتا ہے۔ 

بڑی سرکار: کٹاری تم ہار گئیں ہمارے بیٹے سے۔ 

کٹاری: ہار کیسے گئی۔۔۔۔۔۔(کلائی پر ہاتھ پھیرتے ہوئے) جب میں نے اوئی کیا تھا تو اس نے ہاتھ ڈھیلے کیوں نہ کیئے۔۔۔۔۔۔ یہ بھی کوئی بات ہے ( چھوٹی سرکار سے) سنگدل کہیں کا۔ 

چھوٹی سرکار مسکراتا ہے۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار قہقہہ لگاتا ہے اور چھوٹی سرکار سے مخاطب ہوتا ہے۔ 

بڑی سرکار: ہم جاتے ہیں تم شرط کے روپے وصول کرلو اس سے۔۔۔۔۔۔ چلو کالو۔ یہ کہہ کر بڑی سرکار باز کو پیار کرتا ہوا کالو کو ساتھ لے کر چلا جاتا ہے۔کٹاری اپنے پیروں کے جھانجھ بجاتی ہے۔ 

کٹاری: کیوں جناب۔۔۔۔۔۔ روپے وصول کرو گے مجھ سے؟ 

چھوٹی سرکار: (کٹاری کا ہاتھ پکڑنا چاہتا ہے مگر وہ تڑپ کر ایک طرف ہٹ جاتی ہے)۔ 

کٹاری: نہ نہ نہ نہ۔۔۔۔۔۔ ہاتھ مت لگانا مجھے۔ 

چھوٹی سرکار: کٹاری سنو۔۔۔۔۔۔ کہاں رہتی ہو تم؟ 

کٹاری: زمین کے اوپر۔۔۔۔۔۔ آسمان کے نیچے۔ 

چھوٹی سرکار: تمہارا گھر کہاں ہے؟ 

کٹاری: کندھوں پر۔ 

چھوٹی سرکار: اوہ۔۔۔۔۔۔ اوہ۔۔۔۔۔۔ میں سمجھا۔۔۔۔۔۔(پاس جا کر آہستہ سے) کل آؤ گی؟ 

کٹاری: کیا دو گے مجھے؟ 

چھوٹی سرکار: جو تم مانگو گی۔ 

کٹاری: واہ میرے راجہ۔۔۔۔۔۔ پیروں کے لیئے گرگابی۔۔۔۔۔۔ کانوں کے لیئے بُندے۔۔۔۔۔۔ لس لس کرتے ریشمی لہنگے۔۔۔ 

چھوٹی سرکار: سلمے ستارے کے دوپٹے۔ 

کٹاری: نہیں جی نہیں۔۔۔۔۔۔ دوپٹے نہیں چاہئیں مجھے۔۔۔۔۔۔ ریشمی رومال۔ 

چھوٹی سرکار کٹاری کی طرف بڑھتا ہے اور اسے پکڑنا چاہتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: (آہستہ) تم کل آنا۔۔۔۔۔۔ میں سب کچھ لادوں گا۔ 

کٹاری: لا دو گے۔۔۔۔۔۔ پر تم چوروں کی طرح کیوں باتیں کرتے ہو۔ 

چھوٹی سرکار اسے پکڑنا چاہتا ہے مگر وہ تڑپ کر ایک طرف ہو جاتی ہے۔ 

کٹاری: نہ نہ نہ نہ۔۔۔۔۔۔ ہاتھ مت لگانا مجھے۔(ہنستی ہے) اچھا تو میں چلی۔ 

(چھوٹی سرکار کے کان میں) کل آؤں گی۔ 

یہ کہہ کر کٹاری تھرکتی ہوئی کمرے سے باہر نکل جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی( باغ) 

چمیلی گُلاب کے پھول توڑ رہی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری تھرکتی ہوئی آتی ہے اور پھول چمیلی سے چھین کر اپنے بالوں میں لگا لیتی ہے۔ چمیلی اس پر جھپٹتی ہے۔ 

چمیلی: کون ہے تو؟۔۔۔۔۔۔ پھول لا ادھر۔ 

کٹاری: مسکراتی ہے اور دو تین پھول چمیلی کے ہاتھ سے چھین لیتی ہے۔ 

دونوں ایک دوسری سے الجھ جاتی ہیں۔ اتنے میں چھوٹی سرکار آجاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: چمیلی۔ 

چمیلی ایک طرف ہٹ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری مسکراتی ہے اور سارے پھول جو کہ چمیلی کے ہاتھ سے گر گئے تھے اُٹھا لیتی ہے۔ 

چمیلی: کون ہے یہ چھوٹی سرکار۔ 

کٹاری: اس باغ کی مالک۔۔۔۔۔۔(چھوٹی سرکار سے)کیوں؟ 

مسکراتی ہے اور پتے نوچ کر چمیلی کے منہ پر پھینک کر تھرکتی ہوئی چلی جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیٹ کے باہر) 

کٹاری تھرکتی ہوئی باہر نکلتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب ایک طرف کھڑا ہے، اسے دیکھ کر رُک جاتی ہے۔ پھر مسکرا کر اس کے پاس جاتی ہے۔ 

کٹاری: تم یہاں کھڑے ہو۔ 

گُلاب: ہاں۔ 

کٹاری: آدمی اچھے ہو تم۔۔۔۔۔۔مجھے بچانے کے لیئے جھوٹ بولنا پڑا تمہیں۔ 

گُلاب: بڑی سرکار نے تم سے کیا کہا۔ 

کٹاری: کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔ کہا جاؤ عیش کرو تم۔۔۔۔۔۔(ایک دم) میں نے کہا تمہارا نام کیا ہے۔۔۔۔۔۔ میں بھول گئی ہوں۔ 

گُلاب: میرا نامگُلاب ہے۔ 

کٹاری: (گلاب کا ایک پھول گھما کر سونگھتے ہوئے) ایسی خوشبو ہے تم میں؟ 

گُلاب: (خاموش رہتا ہے) 

کٹاری گلاب کے کُرتے کے بٹن ہول میں گُلاب کا پھول لگا دیتی ہے۔ 

کٹاری: کبھی آنا ہمارے ڈیرے۔ 

یہ کہہ وہ چند قدم چلتی ہے، مڑتی ہے اور ایک ادا کے ساتھ ایک پھول گُلاب کی طرف پھینکتی ہے۔ گُلاب اسے دبوچ لیتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کی آواز آتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: یہ بات ہے! 

گلاب کا ردِ عمل۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار آتا ہے۔ گُلاب اپنے بٹن ہول سے پھول نکال لیتا ہے اور ایک طرف چلا جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: (مُسکراتا ہے) پھولوں کے ساتھ کانٹے بھی ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔ یہ مت بھولنا گُلاب(ہنستا ہے) 

فیڈ آؤٹ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرہ(رات کا وقت) 

ایک چبوترے پر پھل، مٹھائیاں اور کھانے کا سامان پڑا ہے۔۔۔۔۔۔ اس کے اردگرد گھیرا باندھے خانہ بدوش لڑکیاں، عورتیں، مرد، بچے، بوڑھے کھڑے ہیں۔۔۔۔۔۔ ڈمرو آتا ہے اور چاروں طرف دیکھتاہے۔ 

ڈمرو: سب اکٹھے ہوگئے(بلند آواز میں۔۔۔۔۔۔بولو سو روپے کا نوٹ۔ 

سب: زندہ باد۔ 

ڈمرو: سو روپے کا نوٹ۔ 

سب: زندہ باد۔ 

ڈمرو: ایک۔۔۔۔۔۔ دو۔۔۔۔۔۔ 

سب چبوترے پر پل پڑتے ہیں۔۔۔۔۔۔ ایک شور برپا ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک سیکنڈ کے عرصہ میں سب چیزیں صاف ہو جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔ خاموشی چھا جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ ڈمرو ایک طرف بیٹھ کر بڑے اطمینان سے اپنے تہمد کا ڈب کھولتا ہے اور ایک گھڑی نکالتا ہے، اس کی سوئیاں ہی نہیں، وقت دیکھتا ہے۔ 

ڈمرو: وقت ہوگیا ہے میرے گانے کا۔ 

یہ کہہ کر وہ گھڑی ڈب میں رکھتا ہے اور پاس پڑا ہوا بکس کھولتا ہے۔ اس میں سے وہ بانجو نکالتا ہے، جس کے تار ہی نہیں۔ کستا ہے تار جو نہیں ہیں انہیں بجاتا ہے۔۔۔۔۔۔ آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ مطمئن ہو کر آسن جما کر بیٹھتا ہے اور باقاعدہ بجانا شروع کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ کیمرہ پیچھے ہٹتا ہے، ہم دیکھتے ہیں کہ کٹاری بانجو بجا رہی ہے۔۔۔۔۔۔ ڈمرو گانا شروع کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ الفاظ بالکل بے معنی ہیں لیکن وہ انہیں اس طرح ادا کرتا ہے جیسے وہ ان کے معنی جانتا ہے۔ اس دوران میں گُلاب داخل ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری گلاب کو دیکھتی ہے تو مسکراتی ہے۔۔۔۔۔۔بے معنی گانا کورس میں تبدیل ہو جاتا ہے۔ دفعتاً کٹاری بانجو لیئے اُٹھتی ہے اور رقص شروع کردیتی ہے۔ کورس بند ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری سولو گانا شروع کرتی ہے۔ ساتھ ہی ساتھ رقص کرتی ہے۔ توجہ کا مرکز گُلاب ہے جو بے چینی محسوس کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری یہ دیکھتی ہے تو گانا بند کردیتی ہے اور گُلاب کو کھینچ کر ایک طرف لے جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرا( جھرنا) 

گُلاب کا ہاتھ پکڑے کٹاری آتی ہے اور جھرنے اور اس کے آس پاس کی فضاکو پیار کی نظر سے دیکھتی ہے۔ 

کٹاری: کتنی خوبصورت جگہ ہے۔۔۔۔۔۔ میں رات کو یہاں نہایا کرتی ہوں۔ 

یہ کہہ وہ اپنا لہنگا اونچا کرتی ہے اور پانی میں جاتی ہے۔ 

کٹاری: بہت ٹھنڈا ہے پانی۔۔۔۔۔۔ 

یہ کہہ کر وہ بڑے پتھر پر بیٹھ جاتی ہے۔ 

کٹاری: آؤ گُلاب بیٹھو۔ 

گُلاب اس کے پاس بیٹھ جاتا ہے، کسی قدر جھینپتے ہو۔ 

کٹاری: تم اتنے شرمیلے کیوں ہو؟ 

گُلاب: تم آزاد ہو اور میں نے اپنی ساری زندگی غلامی میں گزاری ہے۔ 

کٹاری: کس کی غلامی میں۔ 

گُلاب: جن کے پاس نوکر ہوں۔ 

کٹاری: چھوڑ دو نوکری۔ 

گُلاب: کھاؤں گا کہاں سے؟ 

کٹاری: کھاؤ گے کہاں سے؟(بے تحاشا ہنسنا شروع کردیتی ہے۔۔۔۔۔۔ پھر ایک دم سنجیدہ ہوکر) میری عُمر کیا ہوگی؟ 

گُلاب: یہی کوئی۔۔۔۔۔۔ 

کٹاری: اٹھارہ سال کی ہوں۔۔۔۔۔۔ تم قسم لے لو مجھ سے جو میں نے ایک دن بھی سوچا ہو کہ کھاؤں گی کہاں سے۔۔۔۔۔۔ میں تو صرف اتنا جانتی ہوں کہ کھانا جانتی ہوں۔(ایک دم لہنگے کی جیب میں ہاتھ ڈال کر ایک ناشپاتی نکالتی ہے) لو کھاؤ۔ 

گلاب کے ہاتھ پر ناشپاتی رکھتی ہے تو اس میں پھول دکھائی دیتے ہیں۔ 

کٹاری: یہ کیا؟ 

گُلاب: تمہارے دیئے ہوئے پھول۔ 

کٹاری: پھینکو ان کو میں تمہیں اور دُوں گی۔ 

پھول پانی میں پھینک دیتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب اٹھا لیتا ہے اور بڑی سنجیدگی سے کٹاری سے گفتگو شروع کردیتا ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔ 

کٹاری: کیا؟ 

گُلاب: یہ پھول تم نے مجھے کیوں دیے تھے۔ 

کٹاری: کیوں دیے تھے(پانی میں کود جاتی ہے) ہائے بڑا ٹھنڈا پانی ہے۔ 

گُلاب کٹاری کا ہاتھ پکڑ لیتا ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔ 

کٹاری: (ادا کے ساتھ) کیا ہے؟ 

گُلاب: یہ پھول تم نے مجھے کیوں دیے تھے۔ 

کٹاری: پانی بہت ٹھنڈا ہے۔ 

گُلاب چڑکرپانی میں پھول دے مارتا ہے۔ 

کٹاری: (ہنستی ہے اور پھول اٹھاتی ہے) پانی اتنا ٹھنڈا ہے کہ۔۔۔۔۔۔ دیکھو پھول بھی ٹھنڈے ہوگئے۔ 

گُلاب چل پڑتا ہے۔ 

کٹاری: بس اتنی بات پر ناراض ہوگئے۔۔۔۔۔۔ سو روپے کے نوٹ جی، میں نے پھول اس لیئے دیئے تھے۔ 

گُلاب جواب کا متوقع ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری چپ ہو جاتی ہے اسے کوفت ہوتی ہے۔ 

کٹاری: (ہنستی ہے) میں نے پھول اس لیئے دیئے تھے کہ تم اس قابل تھے کہ تمہیں پھول د یئے جائیں۔ 

گُلاب کٹاری کا ہاتھ پکڑ کر پیار سے دباتا ہے۔ 

کٹاری: تم خود بھی تو ایک پھول ہو۔ 

(ایک دم سنجیدگی کے ساتھ) کٹاری۔ 

کٹاری: (آنکھیں مٹکا کر) کیا؟ 

گلاب: مجھے معلوم نہیں تم نے جھوٹ کہا ہے یا سچ لیکن میں۔۔۔۔۔۔ لیکن میں تم سے محبت کرتا ہوں۔ 

کٹاری: (شرارت سے) پانی بہت ٹھنڈا ہے۔ 

گُلاب ہنس پڑتا ہے۔ کٹاری بھی ہنسنا شروع کردیتی ہے۔گُلاب اسے پکڑ لیتا ہے۔۔۔۔۔۔ قریب یہ کہگُلاب اسے اپنے سینے کے ساتھ لگالے کہ ’’چخ چخ‘‘ کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب کا ردِّ عمل۔۔۔۔۔۔ بیگم بندریا ہاتھ میں سگریٹ اور ماچس لیئے داخل ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری اس سے سگریٹ اور ماچس لے لیتی ہے۔ 

کٹاری: میں رات کو نہانے کے بعد ایک سگریٹ پیا کرتی ہوں۔ 

بندریا کو اُٹھا کر اپنے کندھے پر بٹھا لیتی ہے۔ 

کٹاری: گُلاب تم اب جاؤ۔۔۔۔۔۔مجھے نہانا ہے۔۔۔۔۔۔ کل آؤں گی تم سے ملنے۔ 

گُلاب: لیکن! 

کٹاری: (شرارت کے ساتھ) پانی بہت ٹھنڈا ہے۔ 

دونوں ہنستے ہیں۔ 

فیڈ آؤٹ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ) 

ہم فیڈ اِن کرتے ہیں۔ 

چمیلی ریڈیو صاف کررہی ہے۔ صاف کرنے کے بعد وہ اِسے اَون کرتی ہے اور ایک اسٹیشن لگاتی ہے۔۔۔۔۔۔ 

سازوں پر کوئی گت بج رہی ہے۔ اس کی تال پر چمیلی ناچنا شروع کردیتی ہے۔ ناچتی ناچتی وہ سنگار میز کے پاس جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ آئینے میں اپنے بال سنوارتی ہے۔۔۔۔۔۔ پھر ناچتی ہوئی تپائی کے پاس جاتی ہے۔ جہاں رسالے پڑے ہیں۔۔۔۔۔۔ ایک رسالہ اُٹھاتی ہے، اس کے سرورق پر نیم برہنہ تصویر ہے۔ ایک دم اسے اُلٹا کرکے تپائی پر رکھتی ہے۔۔۔۔۔۔ پھر مسکرا کراسے اٹھاتی ہے اور تصویر کو غور سے دیکھتی ہے۔۔۔۔۔۔ تصویر دیکھتی دیکھتی کھڑکی کی طرف بڑھتی ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دم موٹر سائیکل کی پھٹ پھٹ سُنائی دیتی ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی چھپ کرکھڑکی میں سے باہر جھانکتی ہے۔۔۔۔۔۔ گیراج کے ٹاٹ کا پردہ ہل رہا ہے۔۔۔۔۔۔تھوڑے توقف کے بعد چھوٹی سرکار بغل میں کچھ چیزیں دبائے باہر نکلتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(باغ) 

ہم کٹ کرکے باغ میں آتے ہیں 

مالی کیاریاں ٹھیک کررہا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اُس کے پاس آتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: مالی۔ 

مالی: حضور! 

چھوٹی سرکار: گُلاب کہاں ہے؟ 

مالی: (اُٹھ کر) دیکھتا ہوں حضور۔ 

چھوٹی سرکار: (بوٹ کا کھلا ہوا ڈبہ دِ کھا کر) گر گابی کا ایک پَیر راستے میں گرگیا ہے۔۔۔۔۔۔ اس سے کہو جلدی تلاش کرکے لائے(گرگابی کا دوسرا پَیر دکھا کر) اس کے ساتھ کا۔ 

مالی: (گرگابی کے پَیر کو معنی خیز نظروں سے دیکھ کر) بہت اچھا حضور۔ 

چھوٹی سرکار: ایک دم جلدی۔۔۔۔۔۔ کہنا سائیکل لے جائے میری۔ 

یہ کہہ کر وہ سامنے دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔پلٹتا ہے تو مالی مسکرا رہا ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن وہ فوراً ہی مسکرانا بند کردیتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ) 

چمیلی کھڑکی سے ہٹ کرجلدی جلدی ریڈیو بند کردیتی ہے۔۔۔۔۔۔ ایسا کرتے ہوئے وہ رسالہ اپنی بغل میں دبا لیتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار داخل ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی کا ردِ عمل۔۔۔۔۔۔ اس کی بغل میں سے رسالہ گر پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔ دوہرا ردّ عمل۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اس کے پاس آتا ہے۔۔۔۔۔۔رسالہ زمین پر دیکھتا ہے اور مسکراتا ہے۔ چمیلی جھینپ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار رسالہ اٹھانے کے لیئے جھکتا ہے تو اس کی بغل میں سے بنڈل کھل کر گر پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دو لہنگے ہیں، کچھ ریشمی رومال اور اسی قسم کی کچھ اور چیزیں۔ 

چھوٹی سرکار: اُٹھاؤ انہیں۔ 

چمیلی یہ چیزیں اُٹھاتی ہے اور ہر ایک کو غور سے دیکھتی ہے۔ 

چمیلی: کس کے لیئے لائے ہیں چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: (رسالے کی تصویریں دیکھتے ہوئے)بوجھو۔ 

چمیلی: میں کیا جانوں۔ 

چھوٹی سرکار: رکھو پلنگ پربتاتا ہوں۔ 

چمیلی اُٹھ کر چیزیں پلنگ پر رکھتی ہے۔۔۔۔۔۔چھوٹی سرکار آگے بڑھ کر چمیلی کو پکڑتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: بیٹھو اِدھر۔ 

چھوٹی سرکار چمیلی کو اپنے ساتھ پلنگ پر بٹھاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: تم اس روز بھاگ کیوں گئی تھیں؟ 

چمیلی: (شرما کر) معلوم نہیں۔ 

چھوٹی سرکار: معلوم نہیں؟۔۔۔۔۔۔ تمہیں سب کچھ معلوم ہے۔۔۔۔۔۔ یہ معلوم نہیں تمہیں کہ ہم تم سے پیار کرتے ہیں۔ 

چمیلی کا ہاتھ پکڑتا ہے۔ 

چمیلی: (پلنگ پر چیزیں دیکھ کر) یہ کس کے لیئے لائے ہیں آپ؟ 

چھوٹی سرکار: تمہارے لیئے۔ 

چمیلی: میرے لیئے۔ 

یہ کہہ کرچمیلی ریشمی لہنگے پر ہاتھ پھیرتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار چمیلی کے منہ پر ہولے سے طمانچہ مار کر اُٹھتاہے۔ اور دروازے کی طرف بڑھتا ہے۔ دروازہ بند کرنا چاہتا ہے کہ چمیلی دیوانہ وار آتی ہے۔ 

چمیلی: نہیں۔۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔۔چھوٹی سرکار نہیں۔ 

چھوٹی سرکار: (چمیلی کو پکڑ) تم کیسی ہو۔۔۔۔۔۔ نہ اِدھر نہ اُدھر۔ 

چمیلی: (توقف کے بعد سنبھل کر) معلوم نہیں مجھے کیا ہو جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: پگلی 

یہ کہہ کر دروازہ بند کرنے لگتا ہے کہ باہر سے زور کی چیخ سنائی دیتی ہے۔۔۔ چھوٹی سرکار تیزی سے کھڑکی کی طرف بڑھتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیٹ) 

گیٹ کی پرلی طرف کٹاری کھڑی ہے، اُدھر مالی ہے۔ 

کٹاری: دیکھو، میں اور زیادہ زور سے چیخوں گی۔۔۔۔۔۔ کھول دو دروازہ۔ 

مالی: میں کہہ چکا ہوں چھوٹی سرکار باہر ہیں۔ 

کٹاری: (زور سے چیختی ہے) 

ہم کٹ کرکے دکھاتے ہیں کہ باغ میں گُلاب یہ چیخ سنتا ہے اور دُوڑتا ہے۔ 

کٹاری: لو وہ گُلاب آگیا۔۔۔۔۔۔گُلاب! 

گُلاب آتا ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔۔۔۔۔۔آؤ آؤ۔ 

گُلاب دروازہ کھولتا ہے۔ کٹاری اندر آتی ہے اور مالی کو جیب نکال کر دکھاتی ہے۔ 

کٹاری: یہ مالی کا بچہ مجھے اندر نہیں آنے دیتا تھا۔ 

گُلاب: (مسکراتا ہے) آؤ۔ 

دونوں بڑھنے لگتے ہیں کہ مالی گُلاب سے مخاطب ہوتا ہے۔ 

مالی: گُلاب! 

گُلاب: کیا؟ 

مالی: چھوٹی سرکار راستے میں زنانہ گرگابی کا پَیر گرا آئے ہیں۔ 

گُلاب: زنانہ گرگابی کا پَیر۔ 

مالی: کہا ہے کہ تم فوراً موٹر سائیکل لے کر جاؤ اور تلاش کرو۔ 

گُلاب: میں کہاں ڈھونڈتا پھروں گا۔ 

مالی: جو حکم ہے میں نے تمہیں سنا دیا ہے۔ 

گُلاب: حکم۔۔۔۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔۔جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔(کٹاری سے) میں ابھی آتا ہوں۔ 

گُلاب چلا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری ٹہلتے ٹہلتے اپنے سامنے دیکھتی ہے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ) 

ہم کٹ کرکے کھڑکی پر آتے ہیں 

چھوٹی سرکار کھڑکی سمیٹتا ہے اور چمیلی سے جو اس کے پاس کھڑی ہے مخاطب ہے۔ 

چھوٹی سرکار: چمیلی، اب تم جاؤ۔ 

چمیلی: (کھڑکی سے باہر دیکھتی ہے) جاؤں! 

چھوٹی سرکار: ہاں،پھر آنا۔ 

چمیلی: یہ کون لڑکی ہے؟ 

چھوٹی سرکار: کون؟ 

چمیلی: یہی۔۔۔۔۔۔ جس نے مجھ سے پھول چھینے تھے۔ 

چھوٹی سرکار: ہاں ہاں وہ۔۔۔۔۔۔ اب تم جاؤ۔ 

چمیلی: میں نہیں جاؤں گی۔ 

موٹر سائیکل کی پھٹ پھٹ سُنائی دیتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: گُلاب گیا۔۔۔۔۔۔(تھوڑے توقف کے بعد) جاؤ چمیلی۔ کوئی آجائے گا۔ 

کٹاری کی آواز آتی ہے۔ 

کٹاری: میرے سوا کوئی نہیں آسکتا۔ 

چمیلی اور چھوٹی سرکار کا رد عمل۔۔۔۔۔۔ کٹاری ادائیں بکھیرتی چھوٹی سرکار کے پاس آتی ہے۔ 

کٹاری: آداب عرض کرتی ہوں، چھوٹی سرکار(چمیلی کی طرف دیکھ کر جیب نکالتی ہے) 

چھوٹی سرکار: چمیلی جاؤ۔ 

چمیلی ایک لحظے کے لیئے کھڑی رہتی ہے۔ اس کے بعد جلی بھنی باہر جاتی ہے۔۔۔۔۔۔چھوٹی سرکار دروازہ بند کرکے اندر سے چٹخنی چڑھاتا ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری کا ردِ عمل۔ 

کٹاری: دروازہ کیوں بند کرتے ہو؟ 

چھوٹی سرکار: (مسکرا کر) کوئی آنہ جائے۔ 

کٹاری: اور جو کوئی چِلّائے۔ 

چھوٹی سرکار: کیا؟ 

کٹاری: کچھ نہیں(ہنستی ہے )اور تھرکتی ہوئی پلنگ کی طرف جاتی ہے۔۔۔۔۔۔(چیزیں دیکھ کر) ارے واہ تم وعدے کے پکے نکلے۔(چیزیں اُٹھا اُٹھا کر دیکھتی ہے) 

چھوٹی سرکار اس کے پاس آتا ہے۔ 

کٹاری: (ایک دم چھوٹی سرکار سے) تم اندھے تو نہیں؟ 

چھوٹی سرکار: (حیرت سے) کیوں؟ 

کٹاری: (اپنے پاؤں دکھا کر) میرے دو پاؤں ہیں(گرگابی اٹھا کر) اور یہ ایک ہے۔ 

چھوٹی سرکار: (ہنستا ہے) ایک پیر گر گیا راستے میں۔ 

کٹاری: اوہ! 

چھوٹی سرکار: (پیار سے) آؤ بیٹھو۔ 

کٹاری: نہیں جناب۔۔۔۔۔۔ مجھ سے نہیں بیٹھا جاتا۔(پلنگ پر سے چیزیں اُٹھاتی ہے) 

چھوٹی سرکار: (کٹاری کا بازو پکڑ کر) بیٹھ بھی جاؤ۔ 

کٹاری: نہ نہ نہ۔۔۔۔۔۔ ہاتھ مت لگاؤ مجھے۔۔۔۔۔۔ کٹ جائے گا۔ 

تڑپ کر ایک طرف ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اٹھتا ہے اور اسے پکڑنا چاہتا ہے۔ کٹاری ملحقہ کمرے میں دوڑ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار مطمئن ہو کر کمرے کی طرف بڑھتا ہے۔۔۔۔۔۔ کھٹ سے دروازے کے پٹ بند ہو جاتے ہیں۔ چھوٹی سرکار دستک دیتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کٹاری۔۔۔۔۔۔کٹاری۔ 

کٹاری: (اندر سے آواز آتی ہے) ٹھہرو۔۔۔۔۔۔ میں کپڑے بدل رہی ہوں۔ 

چھوٹی سرکار اضطراب میں ٹہلنا شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھلتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری جھانکتی ہے۔ 

کٹاری: بابو۔ 

چھوٹی سرکار متوجہ ہوتا ہے۔ 

کٹاری: ازار بند ڈالنا ہے، کوئی چیز دو۔ 

چھوٹی سرکار میز سے’’پرونی‘‘ اٹھا کر کٹاری کے ہاتھ میں دیتا ہے اور ساتھ ہی ہاتھ پکڑ لیتا ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری دانتوں سے کاٹتی ہے اور دروازہ بند کردیتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ہاتھ سہلاتا رہ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ بھنایا ہوا ٹہلنا شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔ ریڈیو کے پاس جاتا ہے اور اَون کرکے کوئی اسٹیشن لگاتا ہے۔ ڈانس کی دُھن شروع ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار پرچہ اٹھاتا ہے جس کے سرورق پر نیم برہنہ تصویر چھپی ہے اور کمرے کی طرف دیکھتا ہے۔ دروازہ کھلتا ہے۔ کٹاری نئے کپڑوں میں، ایک پاؤں میں گرگابی پہنے ریڈیائی موسیقی کی تال پر ناچتی کمرے میں آتی ہے۔۔۔۔۔۔ پرانے کپڑے ایک طرف پھینک دیتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کی طرف بڑھتی ہے۔ رسالے پر ایک نظر ڈالتی ہے اور چھین کر پھینک دیتی ہے۔ 

کٹاری: چھی۔۔۔۔۔۔چھی۔۔۔۔۔۔چھی۔ 

چھوٹی سرکار: آؤ بیٹھو۔ 

کٹاری: نہیں جناب۔۔۔۔۔۔ مجھ سے بیٹھا نہیں جاتا۔۔۔۔۔۔ تم مجھے یہ بتاؤ روپیہ پیسہ کہاں رکھتے ہو؟ 

چھوٹی سرکار: اوہ۔۔۔۔۔۔ادھر آؤ؟ 

چھوٹی سرکار میز کا دروازہ کھولتا ہے۔۔۔۔۔۔ اس میں بہت سے نوٹ دکھائی دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔ کٹاری جیب سے پانسے نکالتی ہے اور انہیں ہاتھ میں ہلاتی ہے۔ 

کٹاری: کہو، چھ تین نو پھینکوں۔ 

چھوٹی سرکار: چھ تین تم پھینک چکیں۔ 

کٹاری: لگاؤ شرط۔ 

چھوٹی سرکار: لگاؤ۔ 

کٹاری: سو سو روپے۔ 

چھوٹی سرکار: رہے۔ 

کٹاری: لو۔۔۔۔۔۔(پانسے پھینکتی ہے)یہ لو چھ تین نو۔ 

چھ تین نو آجاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ کٹاری جھٹ سے دراز میں سے سو روپے کا نوٹ اُٹھاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار پانسے اُٹھا کر دیکھتا ہے۔ ایک پر تین ہی تین ہیں اور دوسرے پر چھ ہی چھ۔ 

چھوٹی سرکار: ٹھہرو۔(پکڑنا چاہتا ہے) 

کٹاری بھاگتی ہے، دروازہ کھول کر باہر نکلتی ہے۔ چھوٹی سرکار تعاقب کرتا ہے مگر کٹاری دروازہ بند کردیتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار بھنا جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کٹاری۔۔۔۔۔۔ کٹاری۔ 

کٹاری دروازہ نہیں کھولتی۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار مختلف چیزوں کو ٹھوکریں مارتا ریڈیو کے پاس آتا ہے۔۔۔۔۔۔ بٹن گھماتا ہے تو موسیقی بہت اونچی ہو جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ایک دم ریڈیو بند کردیتا ہے اور کرسی پربیٹھ جاتا ہے۔ لیکن فوراً ہی اُٹھتا ہے اور دروازے کے پاس جا کر دستک دیتا ہے۔۔۔۔۔۔ دروزہ کھلتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کٹاری۔ 

دروازہ پورا کھلتا ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب دکھائی دیتا ہے۔ اس کے ہاتھ میں گرگابی کا ایک پَیر ہے۔۔۔۔۔۔کٹاری کا نام سُن کر اس کا ردِّ عمل۔ 

گُلاب: دروازہ کس نے بند کیا تھا باہر سے۔ 

چھوٹی سرکار: کٹاری نے۔ 

گُلاب: کٹاری نے؟ 

چھوٹی سرکار: ہاں۔۔۔۔۔۔ گرگابی کا پیر مل گیا۔ 

گُلاب: جی ہاں۔ 

چھوٹی سرکار: آؤ اندر۔۔۔۔۔۔ 

گلاب اندر آتا ہے اور کٹاری کے پرانے کپڑے دیکھ کر ٹھٹھکتا ہے۔ 

گُلاب: یہ کپڑے؟ 

چھوٹی سرکار: کٹاری کے ہیں(کرسی پر بیٹھ جاتا ہے) دیکھو گلاب اس کا کچھ انتظام کرنا پڑے گا۔ 

گُلاب: کس کا؟ 

چھوٹی سرکار: (پانسوں سے کھیلتا ہوا اُٹھتا ہے) کٹاری کا۔۔۔۔۔۔ آج غچہ دے گئی ہے مجھے۔۔۔۔۔۔ سب چیزیں لے گئی۔۔۔۔۔۔ سب کیا، سو روپے کا نوٹ بھی صاف کرکے چلتی بنی۔۔۔۔۔۔ اور ہاتھ تک نہ لگانے دیا مجھے۔ 

گلاب کا موزوں و مناسب ردّ عمل۔ 

چھوٹی سرکار: ایک دن راہ پر تو آ ہی جائے گی لیکن میں زیادہ دیر انتظار نہیں کرسکتا۔۔۔۔۔۔ معاملہ یوں نبٹنا چاہیئے۔۔۔۔۔۔ یوں(چٹکی بجاتا ہے) تم ایسا کرو۔۔۔۔۔۔ یہ گرگابی کا پیر لے جاؤ اس کے ڈیرے اور اس سے کہو کہ کل مجھ سے ملنے آئے۔۔۔۔۔۔ اور چیزیں ملیں گی۔۔۔۔۔۔ سمجھے۔ 

گُلاب: جی ؟۔۔۔۔۔۔جی! 

چھوٹی سرکار: میں سب انتظام کر رکھوں گا۔۔۔۔۔۔ بس کھالیا ایک غچہ۔ 

گُلاب گرگابی کا پَیر میز پررکھتا ہے اور سوچ میں غرق چلتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: کہاں چلے گلاب؟ 

گُلاب: جی۔۔۔۔۔۔ کٹاری کے ڈیرے۔ 

چھوٹی سرکار: تو گرگابی کا یہ پَیر تو لیتے جاؤ۔ 

گُلاب: جی؟۔۔۔۔۔۔ جی ہاں۔۔۔۔۔۔ 

گرگابی کا پَیر اٹھاتا ہے اور چلا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار پانسے ہلا کر پھینکتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: لو، چھ تین نو۔ 

چھ تین نو بن جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ہنستا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرہ( ڈمرو کا خیمہ) رات کا وقت۔ 

ڈمرو چٹائی پر بیٹھا ہے اور پانسے بنا رہا ہے۔ 

ڈمرو: لو بھئی۔۔۔۔۔۔ یہ لو کچے بارہ۔ 

کچے بارہ پھینکتا ہے۔ 

ڈمرو: صدقے جائیے راجہ نل کے۔۔۔۔۔۔ کچے بارہ ہی آئے( پانسے اٹھا کر ہاتھ میں ہلاتے ہوئے) لو دوست اب چھ تین نو پھینکنا(پانسے پھینکتا ہے) لو، دھرے پڑے ہیں،چھ تین نو۔ 

چھ تین نو بن جاتے ہیں۔ ڈمرو اپنے کندھے پر تھپکی دیتا ہے۔ 

ڈمرو: ڈمرو استاد میری پیٹھ پر جوگنی ہے جوگنی۔ لاؤ دوست ڈھیلے کرو دس روپے۔ ڈمرو دس روپے پکڑتا ہے۔۔۔۔۔۔ کیمرہ پیچھے ہٹتا ہے تو ہم دیکھتے ہیں کہ وہ اپنے دوسرے ہاتھ سے دس کا نوٹ لے رہا ہے۔۔۔۔۔۔ نوٹ جیب میں رکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ ڈب کھول کر بغیر سوئیوں کی گھڑی نکالتا ہے۔ جمائی لیتا ہے۔ 

ڈمرو: وقت ہوگیا میرے سونے کا۔ 

چٹائی پرلیٹ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔کُتّا بھونکتا ہے۔’’عف عف‘‘! 

ڈمرو: ایک دو۔۔۔۔۔۔ مطلب ہے اپنا ہی آدمی آیا ہے۔ 

کُتّا بھونکتا ہے’’عف عف‘‘۔ 

ڈمرو: تین چار۔۔۔۔۔۔ نہیں باہر کا آدمی ہے۔ 

اُٹھتا ہے اور خیمے سے باہر نکلتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرہ(ڈمرو کا خیمہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصہ) رات کا وقت۔ 

ڈمرو باہر نکلتا ہے تو اسے گلاب دکھائی دیتا ہے۔ 

ڈمرو: کیوں بابو؟ 

گُلاب: کٹاری کہاں ہے؟ 

ڈمرو: کیوں؟ 

گُلاب: اس کے لیئے ایک چیز لایا ہوں۔ 

ڈمرو: میرا خیال ہے اس وقت نہا کے سگریٹ پی رہی ہوگی۔۔۔۔۔۔ جانتے ہو کہاں۔ 

گُلاب: جانتا ہوں۔ 

ڈمرو: میں بھی سب کچھ جانتا ہوں۔ 

گُلاب: کیا؟ 

ڈمرو: کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔ جاؤ۔ 

گُلاب چلتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرہ( جھرنا۔۔۔۔۔۔ رات کا وقت) 

کٹاری پتھروں پر ٹانگ پہ ٹانگ رکھے لیٹی ہے۔۔۔۔۔۔ ایک ہاتھ میں سگرٹ ہے۔۔۔۔۔۔ آہستہ آہستہ آنکھیں بند کرتی ہے۔۔۔۔۔۔ ہاتھ جس میں سگریٹ ہے، ڈھیلا ہو کر لٹک جاتا ہے۔ سگریٹ پانی کی سطح کے ساتھ چھو جاتا ہے اور ایک بجھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری چونکتی ہے۔۔۔۔۔۔ مسکراتی ہے اور سگریٹ پھینک کر پھر آنکھیں بند کرلیتی ہے۔۔۔۔۔۔تھوڑے توقف کے بعد گُلاب کی آواز آتی ہے۔ 

گُلاب: کٹاری۔ 

کٹاری: (آنکھیں کھول کر) کون۔۔۔۔۔۔ اوہ گُلاب۔۔۔۔۔۔(اُٹھ کر بیٹھ جاتی ہے) 

آؤ۔۔۔۔۔۔آؤ! 

گُلاب آتا ہے۔۔۔۔۔۔ کاغذ کھول کر گرگابی کا پَیر نکالتا ہے۔ 

کٹاری: (خوش ہو کر) مل گیا تھا تمہیں۔ 

گُلاب: ہاں 

اور یہ کہہ کروہ زورسے گرگابی کا پیر پانی پر دے مارتا ہے۔۔۔ کٹاری گُلاب کی اس حرکت پر سخت متحیر ہوتی ہے۔۔۔ گُلاب واپس چلنے کے لیئے مڑتا ہے۔ 

کٹاری: گُلاب۔ 

گُلاب: نام نہ لاؤ میرا اپنی زبان پر۔ 

کٹاری: کیا ہوا تمہیں؟۔۔۔۔۔۔منہ کیوں سوجا ہوا ہے تمہارا؟ 

گُلاب: تم نے چانٹا جو مارا ہے۔ 

کٹاری: چانٹا؟۔۔۔۔۔۔میں نے؟ 

گُلاب: ہاں! تم نے(ایک دم مڑ کر) کیوں گئی تھیں تم چھوٹی سرکار کے پاس؟ 

کٹاری: اوہ(ہنستی ہے اور لہنگے کی جیب سے سو روپے کا نوٹ نکالتی ہے) 

یہ لینے۔۔۔۔۔۔ تمہارے واپس جو دینے تھے۔ 

گُلاب: مجھے نہیں چاہیئے۔ 

کٹاری: لے لو گلاب۔۔۔۔۔۔ اب تو ہماری تمہاری دوستی ہے۔۔۔۔۔۔ پہلے اور بات تھی۔۔۔۔۔۔ لو۔ 

گُلاب: (نوٹ لے کر پرزے پرزے کردتیا ہے) یہ لو۔ 

کٹاری۔ (سخت متحیر ہو کر) کیا ہوا ہے تمہیں۔ 

گُلاب: میرے بس میں ہوتا تو تمہارے ان کپڑوں کو بھی چندی چندی کردیتا۔ جو تم اس بدمعاش سے لائی ہو۔۔۔۔۔۔ تمہیں شرم نہیں آتی۔ 

کٹاری: کس بات کی؟ 

گُلاب: بھولی مت بنو کٹاری۔۔۔۔۔۔ مُفت میں کوئی اتنی چیزیں اور روپے نہیں دیا کرتا۔۔۔۔۔۔ کیوں لیئے تم نے اس سے یہ کپڑے؟ 

کٹاری: مجھے ان کا شوق ہے۔ 

گُلاب: اُسے بھی کچھ شوق ہے۔۔۔ 

کٹاری: کیا؟ 

گُلاب: پتا چل جائے گا تمہیں۔ 

کٹاری: اونہہ۔۔۔۔۔۔ ایسے میں نے کئی دیکھے ہیں۔۔۔ میں اس انگلی پر نچا سکتی ہوں اسے۔ 

گُلاب: میں تم سے صرف یہ کہنے آیا ہوں کہ اب مت جانا وہاں۔ 

کٹاری: کیوں نہ جاؤں۔۔۔ اس کے پاس دولت ہے۔۔۔۔۔۔ اور مجھے اپنے ہار سنگھار کے لیئے اتنی چیزیں چاہئیں۔ 

گُلاب: میں کہتا ہوں تم نہیں جاؤ گی۔ 

کٹاری: میں جاؤں گی اور ضرور جاؤں گی۔۔۔۔۔۔ اتنی دیر کے بعد کام کا آدمی ملا ہے۔ 

گُلاب: (زہر خند کے ساتھ) اور اس کام کے آدمی کے پاس اپنا آپ چند ریشمی کپڑوں کے بدلے بیچو گی۔ 

کٹاری: (ایک دم گُلاب کے منہ پر چانٹا مارتی ہے) بکو نہیں۔ 

گلاب خاموش کھڑا رہتا ہے۔ 

کٹاری: (چلا کر) جاؤ۔۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔۔۔ چلے جاؤ یہاں سے(گلاب کو دھکا دیتی ہے۔) 

گلاب چلا جاتا ہے تو کٹاری پتھر اٹھا اٹھا کر پھینکتی ہے۔۔۔۔۔۔ گلاب خاموش چلتا رہتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری رونا شروع کردیتی ہے۔ 

کٹاری: یہ کہہ کر وہ زمین پرپتھروں اور کنکروں کو ٹھوکریں مارتی چلتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

خانہ بدوشوں کا ڈیرہ( ڈمرو کا خیمہ) رات کا وقت۔ 

ڈمرو چٹائی پر سو رہا ہے۔۔۔۔۔۔ زور سے ایک پتھر لڑھکتا ہوا اندر آتا ہے اور ڈمرو کے لگتا ہے۔ ڈمروگھبرا کر اٹھتا ہے اور پتھر دیکھتا ہے۔ کٹاری کی آواز آتی ہے۔ 

کٹاری: میں جاؤں گی اور ضرور جاؤں گی۔ 

سخت غصے اور چڑچڑے پن کے عالم میں کٹاری اندر داخل ہوتی ہے اور دو تین چیزیں اٹھا کر زمین پر دے مارتی ہے۔ 

کٹاری: مجھے اپنے ہار سنگھارکے لیئے اتنی چیزیں چاہئیں۔۔۔۔۔۔ اس کنگلے کے پاس کیا ہے۔۔۔۔۔۔(دو ایک چیزیں اورا ٹھا کر دے مارتی ہے) 

ڈمرو: کٹاری۔ 

کٹاری: محبت کرتا ہے مجھ سے۔۔۔۔۔۔ محبت نہ ہوئی پنجرہ ہوگیا۔۔۔۔۔۔ تم نہیں جاؤ گی۔۔۔۔۔۔ واہ۔۔۔۔۔۔ میں جاؤں گی اور ضرور جاؤں گی۔ 

ڈمرو: کٹاری۔ 

کٹاری: بک نہیں۔۔۔۔۔۔ مجھے ریشمی کپڑے چاہئیں۔۔۔۔۔۔ مجھے بہت سے ریشمی کپڑے چاہئیں۔۔۔۔۔۔ مجھے ڈھیروں ریشمی کپڑے چاہئیں۔۔۔۔۔۔ میں جاؤں گی اور ضرور جاؤں گی۔۔۔۔۔۔ اس کو چِڑانے کے لیئے جاؤں گی۔۔۔۔۔۔ لیکن۔۔۔۔۔۔ لیکن میں نے اُسے کیوں مارا( رونا شروع کردیتی ہے) میں نے اُسے کیوں مارا۔۔۔۔۔۔( ایک دم موڈ بدل کر) مارا ہے ٹھیک مارا ہے۔۔۔۔۔۔ اس نے کیوں کہا کہ میں بیچ دوں گی اپنے کو۔۔۔۔۔۔ میری کچھ سمجھ میں نہیں آتا۔۔۔۔۔۔ روتی روتی باہر نکل جاتی ہے۔ 

ڈمرو: (بڑے فلسفیانہ انداز میں) کچھ سمجھ میں نہیں آرہا تو اس کا یہ مطلب ہے۔۔۔۔۔۔ عشق ہوگیا ہے لونڈیا کو۔۔۔۔۔۔ اور یہ کاروبار کے لیئے کوئی مفید چیز نہیں۔۔۔۔۔۔ 

ڈمرو چٹائی پر لیٹ کر آنکھیں بند کرلیتا ہے۔ 

ڈمرو: لیکن اس کا علاج کردیا جائے گا۔ 

فیڈ آؤٹ 

بڑی سرکار کی حویلی(باغ۔۔۔۔۔۔ فوارّہ) 

گُلاب فوارّے کی منڈیر پر بیٹھا ہے۔۔۔۔۔۔فوارّہ چل رہاہے۔ گُلاب پانی کی بوندوں کے ساتھ کھیل رہاہے۔۔۔۔۔۔ تھوڑے وقفے کے بعد ایک گُلاب کا پھول گُلاب کے چہرے کے ساتھ ٹکرا کر پانی میں گر جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب کا ردِّ عمل۔۔۔۔۔۔ اِدھر اُدھر دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ کوئی نظر نہیں آتا۔۔۔۔۔۔ اُٹھتا ہے کہ ایک گُلاب کا پھول اس کے سر پر لگتا ہے۔۔۔۔۔۔ آواز آتی ہے۔ 

چمیلی: گُلاب! 

گُلاب: کون ہے؟ 

گُلاب اِدھر اُدھر دیکھتا ہے۔ دس پندرہ قدم چل کرجھاڑی کے پاس پہنچتا ہے۔ آواز آتی ہے۔ 

چمیلی: گلاب۔ 

چمیلی جھاڑی کے عقب سے نکلتی ہے اور ہنستی ہے۔ 

گُلاب: اوہ!۔۔۔۔۔۔ چمیلی! 

چمیلی گُلاب کے پھول کی پتیاں نوچتی ہوئی گُلاب کے پاس آتی ہے۔ 

چمیلی: تم ہم سے بات ہی نہیں کرتے! 

گُلاب: (بے اعتنائی سے) میرے منہ میں وہ زبان نہیں جو چھوٹی سرکار کے منہ میں ہے۔چمیلی بُرا سا منہ بناتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب ایک طرف ہٹ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی اس کی طرف بڑھتی ہے۔ 

چمیلی: یہ کٹاری کون ہے؟ 

گُلاب: مجھے معلوم نہیں۔ 

چمیلی: چھوٹی سرکار کو تو بہت پسند ہے۔۔۔۔۔۔ کل اتنی چیزیں لا کے دیں اسے۔ 

گُلاب: دی ہوں گی۔۔۔۔۔۔ 

چمیلی: تم نے آج تک مجھے کچھ نہیں دیا۔ 

گُلاب: غریب آدمیوں کے پاس دینے کے لیئے چیزیں نہیں ہوتیں۔۔۔۔۔۔ ایک دل ہوتا ہے۔ 

چمیلی: (ایک دم) اور وہ۔۔۔۔۔۔؟ 

گُلاب: میں دے چکا ہوں! 

چمیلی: کسے؟ 

گُلاب: جو لے گیا! 

چمیلی: بتاؤنا، کون ہے وہ؟ 

باتیں کرتے کرتے دونوں گیٹ کے پاس پہنچ جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ ایک دم کٹاری داخل ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ اس وقت چمیلی اپنا مکالمہ ادا کرتے ہوئے پھول کی پتیاں گُلاب کے منہ پر پھینکتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب، چمیلی اور کٹاری کا ردّعمل۔۔۔۔۔۔ کٹاری ایک لحظے کے لیئے رُکتی ہے، بہت ہی بے رخی سے گُلاب کی طرف دیکھتی ہے۔ 

کٹاری: چھوٹی سرکار ہیں اندر؟ 

گُلاب جواب نہیں دیتا، کٹاری چلتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب دیکھتا رہ جاتا ہے۔ 

چمیلی: (غصے میں، کٹاری سے) اے۔۔۔۔۔۔ کدھر جاتی ہے تو؟ 

کٹاری کو روکنے کے لیئے بڑھتی ہے۔ گلاب اُسے پکڑ لیتا ہے۔ 

گُلاب: جانے دے جِدھر جاتی ہے۔ 

کٹاری مسکراتی ہوئی چلی جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ) 

دہلیز میں کالو کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اس سے مخاطب ہوتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: ’’سمجھ گئے نا سب کچھ‘‘ 

کالو: جی ہاں سرکار۔ 

کٹاری کے آنے کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کالو کو آنکھ مارتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری نمودار ہوتی ہے۔ مسکراتی ہوئی۔ 

کٹاری: آنکھ تو تم خوب مارتے ہو۔ 

آنکھ مار کر مسکراتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: آؤ۔۔۔۔۔۔ اندر آؤ۔ 

کٹاری تھرکتی ہوئی اندر داخل ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار دروازہ بند کرکے چٹخنی بڑھاتا ہے۔ کٹاری کا خفیف سا ردّعمل۔ 

کٹاری: (شرارت کے ساتھ) کو ئی آ نہ جائے۔۔۔۔۔۔ کیوں؟ 

چھوٹی سرکار مسکرا کر اثبات میں سر ہلاتا ہے۔ 

باہر سے چٹخنی لگانے کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری تیر کی طرح دروازے کی جانب بڑھتی ہے۔۔۔۔۔۔ اندر کی چٹخنی چشم زدن میں کھولتی ہے لیکن دروازہ باہرسے بند ہو چکا ہے۔۔۔۔۔۔ بلّی کی طرح تیز تیز نگاہوں سے چھوٹی سرکار کو گھورتی ہے اور پھر لپک کر دوسرے دروازے کی طرف بڑھتی ہے۔۔۔۔۔۔ جوں ہی اس کے پاس پہنچتی ہے، باہر سے کنڈی چڑھانے کی آواز آتی ہے۔۔۔۔۔۔ تیسرے دروازے کی طرف لپکتی ہے مگر وہ بھی باہر سے بند ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری اپنے اعضا ڈھیلے چھوڑ کر تھرکتی ہوئی چھوٹی سرکار کے پاس جاتی ہے اور ایک ادا کے ساتھ کہتی ہے۔ 

کٹاری: یہ بات ہے؟ 

چھوٹی سرکار مسکراتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری پینترہ بدل کر کھڑکی کی طرف لپکنا چاہتی ہے مگر چھوٹی سرکار دوڑ کر اس کے سامنے کھڑا ہو جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: آج میں کوئی پیش نہیں چلنے دُوں گا۔ 

کٹاری: (بجلی کی سی تیزی کے ساتھ اپنی کٹار نکال کر)یہ پیش قبض بھی نہیں؟ 

چھوٹی سرکار: کٹاری! 

کٹاری اپنی پیش قبض کو زور سے پھینکتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کھڑکی کے آگے سے ہٹ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ پیش قبض باہر نکل جاتی ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(باغ) 

گُلاب خاموش کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔ پیش قبض اس کے پاس گرتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب اسے اُٹھاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری کی آواز آتی ہے۔’’ گُلاب۔۔۔۔۔۔ گُلاب‘‘ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(چھوٹی سرکار کا کمرہ) 

چھوٹی سرکار کا ہاتھ کٹاری کے منہ پر ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری گرفت سے نکلنا چاہتی ہے۔۔۔۔۔۔ دونوں ایک دوسرے سے گُتھ جاتے ہیں چھوٹی سرکار اس کے ہاتھ اس کی پیٹھ پیچھے باندھ دیتا ہے اور منہ میں رومال ٹھونس دیتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری پلنگ پر پڑی صرف ٹانگیں چلاتی ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار اس کی بے بسی پر خوش ہوتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: (ہانپتے ہوئے) اب کہاں جائے گی تو؟ 

دراز دستی کرنے لگتا ہے۔۔۔۔۔۔ کٹاری ٹانگیں چِلّاتی ہے۔۔۔۔۔۔ اس کے منہ سے رومال نکل جاتا ہے۔ 

کٹاری: گُلاب! 

چھوٹی سرکاراس کے منہ پر ہاتھ رکھ دیتا ہے۔۔۔۔۔۔ ایک دم دروازہ بہت ہی زور سے کھلتا ہے۔۔۔۔۔۔ گلاب تیزی سے داخل ہوتا ہے اور پلنگ سے کچھ دُوررُک جاتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: (حیرت سے) تم؟ 

گُلاب: ہاں چھوٹی سرکار۔ 

چھوٹی سرکار: چلے جاؤ یہاں سے۔ 

گُلاب: (کٹاری سے) کٹاری، چلی جاؤ یہاں سے۔ 

چھوٹی سرکار: (غصّے میں) میں تم سے کہہ رہا ہوں۔ 

گُلاب: (کٹاری سے) میں تم سے کہہ رہا ہوں کٹاری۔ 

یہ کہہ کر گُلاب کٹاری کو اُٹھاتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار آگ بگولا ہو جاتا ہے اور بڑھ کر گُلاب کے چانٹا مارتا ہے۔ 

چھوٹی سرکار: بدتمیز۔۔۔۔۔۔ چل دور ہو یہاں سے۔ 

یہ کہہ کرچھوٹی سرکار کٹاری کو پکڑنا چاہتا ہے مگر گُلاب چھوٹی سرکار کی ٹھوڑی کے نیچے اس زور سے گھونسا جماتا ہے کہ وہ لڑکھڑاتا ہوا پلنگ پر جا گرتا ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب کٹاری کو گھسیٹتا ہوا کمرے سے باہر لے جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ پلنگ پر چھوٹی سرکار اپنی ٹھوڑی سہلاتا ہوا اُٹھتا ہے اور کھڑکی کی طرف بڑھتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(گیٹ) 

کٹاری اور گُلاب کھڑے ہیں۔ 

گُلاب: جاؤ کٹاری۔ 

کٹاری: سُنو تو۔ 

گُلاب: میں کچھ سننا نہیں چاہتا۔ چلی جاؤ یہاں سے۔ 

کٹاری کو دھکیلتا ہے۔ 

کٹاری: (ناراضگی کے ساتھ) ہائے۔۔۔۔۔۔ دھکے تو نہ مارو۔ 

گُلاب: تم اسی قابل ہو۔ 

کٹاری: ہونہہ۔۔۔۔۔۔ مجھے بچا لیا ہے کیا ہے۔ سر پرہی چڑھ بیٹھے ہو۔ 

گُلاب گیٹ بند کردیتا ہے۔ 

کٹاری: (چند قدم چلتی ہے اور پلٹتی ہے) گُلاب! 

گُلاب: کیا ہے؟ 

میں کیسی بھی ہوں، پر تمہارے دل میں یہ خیال نہ رہے کہ کسی کا احسان نہیں مانتی ہے۔۔۔۔۔۔ تم نے مجھے بچایا ہے۔۔۔۔۔۔ شکریہ! 

یہ کہہ کر کٹاری تھرکتی ہوئی چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ گُلاب پلٹتا ہے۔۔۔۔۔۔ چند قدم چلتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار کی آواز آتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: گُلاب! 

گُلاب: (پہلے سر اٹھاتا ہے پھر جھکا لیتا ہے) آیا حضور! 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(بڑا کمرہ) 

ہم ڈزالو کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔ گلاب سر جھکائے کھڑا ہے۔ 

گُلاب: جی حضور! 

بڑی سرکار کی گرج دار آواز آتی ہے۔ 

بڑی سرکار: تم اگر ہمارے وفادارمنشی کے لڑکے نہ ہوتے تو اس گستاخی کی سزا جو تم نے چھوٹی سرکار کے ساتھ کی ہے یہ ہوتی کہ ہم کھڑے کھڑے تمہاری کھال ادھیڑ دیتے۔ کیمرہ اب بڑی سرکار اور منشی پر بھی ہے۔۔۔۔۔۔ منشی ہاتھ باندھے کھڑا ہے اور بڑی سرکار تخت پر بیٹھے ہیں۔ 

بڑی سرکار: (گاؤ تکیئے کے ساتھ ٹیک لگا کر) بہت زیادہ نرمی برت کر ہم تمہیں یہ سزا دیتے ہیں کہ فوراً یہاں سے نکل جاؤ۔۔۔ 

منشی کا ردِ عمل 

بڑی سرکار: اور کبھی ادھر کا رخ نہ کرو۔۔۔۔۔۔ منشی صاحب کیا ہم مہربان نہیں۔ 

منشی: (ہاتھ جوڑ کر) سرکار آپ مہربان نہ ہوتے تو یہ غلام اس نالائق کو پال پوس کر اتنا بڑا کیسے کرسکتا تھا۔۔۔۔۔۔ مجھے افسوس ہے کہ اس سے ایسی حرکت سرزد ہوئی۔ 

بڑی سرکار: ہم نے جو سزا اس کے لیئے منظور کی ہے آپ کو منظور ہے؟ 

منشی: سرکار میری کیا مجال ہے کہ۔۔۔۔۔۔ 

گُلاب: لیکن حضور جو واقعات ہیں، کیا آپ کو ان کا علم ہے؟ 

بڑی سرکار: (ایک دم گاؤ تکیئے کی ٹیک سے الگ ہو کر) لڑکے۔۔۔۔۔۔ نوکر کی زبان اس کی گدی ہی میں رہنی چاہیئے۔۔۔۔۔۔ اس کا تمہیں علم ہے؟ 

منشی: گُلاب! بہت گستاخ ہوگئے ہو۔۔۔۔۔۔ معافی مانگو بڑی سرکار سے۔ 

گُلاب باپ کی طرف دیکھتا ہے پھر ایک نظر بڑی سرکار کی طرف اور خاموش چلا جاتاہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(بڑا کمرہ۔۔۔۔۔۔ بیرونی حصّہ ) 

گُلاب باہر نکلتا ہے۔۔۔۔۔۔ چھوٹی سرکار ایک طرف کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔ وہ مسکراتا ہے۔۔۔۔۔۔ گلاب اس مسکراہٹ کا جواب دیئے بغیر چلا جاتا ہے۔ 

فیڈ آؤٹ 

بڑی سرکار کی حویلی(باغ) 

مالی کیاریاں درست کرنے میں مصروف ہے۔۔۔۔۔۔ چمیلی بھی اس کا ہاتھ بٹا رہی ہے۔ 

چمیلی: (تھک کر) مجھ سے یہ کام نہیں ہوتا۔ 

مالی: (معنی خیز لہجے میں) نہیں ہوتا تو نہ کیا کر۔۔۔۔۔۔ تجھے کون مجبورکرتا ہے۔ 

چمیلی: ٹھیک ہے، پر اکیلے میں کیا کیا کروں۔ 

مالی: جو بھی تجھے سُوجھے! 

اتنے میں منشی نمودار ہوتا ہے۔ 

مالی: آئیے منشی صاحب، آئیے۔ 

منشی آتا ہے۔ افسردہ ہے۔ 

مالی: کہیئے گُلاب کا کچھ پتہ لگایا؟ 

منشی: نہیں۔ 

مالی: آپ کی اولاد ہے۔۔۔۔۔۔ دل پر اس طرح پتھر نہیں رکھ لینا چاہیئے۔ 

منشی: کیا کروں۔۔۔۔۔۔ بھائی مجبور ہوں۔۔۔۔۔۔(پاس بیٹھ جاتا ہے) مجھ میں اتنی ہمت نہیں۔ 

مالی: اچھے باپ ہیں آپ منشی صاحب۔ 

منشی: میرے زخموں پر نمک نہ چھڑکو مالی۔۔۔۔۔۔ جب سے وہ گیا ہے میرے دل کی بہت بُری حالت ہے۔۔۔۔۔۔ تم سمجھتے ہو کہ مجھے اس کا درد نہیں۔۔۔۔۔۔ تم سمجھتے ہو کہ میں اُسے قصوروار سمجھتا ہوں۔۔۔۔۔۔ نہیں، نہیں، نہیں۔ 

مالی: میں پتالُوں گُلاب کا؟ 

منشی: (آہستہ)نہیں! 

چھوٹی سرکار کی آواز آتی ہے۔ 

چھوٹی سرکار: مالی۔ 

مالی: (ایک دم کھڑے ہوکر) حضور! 

چھوٹی سرکار: ہمارے کمرے کے گلدانوں میں کل کے ہی باسی پھول پڑے جھک ماررہے ہیں۔۔۔۔۔۔وجہ؟ 

مالی: (چمیلی کی طرف دیکھ کر) حضور، یہ چمیلی کا قصور ہے۔ 

چھوٹی سرکار: تو بھیجو اسے جلدی کہ نئے پھول سجائے۔ 

چھوٹی سرکار چمیلی کی طرف کنکھیوں سے دیکھتا ہوا چلا جاتا ہے۔ 

مالی معنی خیز نظروں سے چمیلی کی طرف دیکھتا ہے۔ 

مالی: جاؤ چمیلی۔۔۔۔۔۔ تازہ پھول فوارے کے پاس پڑے ہیں۔ 

چمیلی آہستہ آہستہ چلی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ مالی پھر اپنے کام میں مشغول ہو جاتا ہے۔ 

مالی: (بڑبڑاتے ہوئے) آپ نے کیوں گلاب کو جانے دیا۔۔۔۔۔۔ کیا آپ کو ساری بات معلوم نہیں تھی۔ 

منشی: تم نے چمیلی کو کیوں جانے دیا۔ 

مالی چونکتا ہے۔ 

منشی: کیا تمہیں ساری بات معلوم نہیں ہے؟ 

مالی: (ایک دم اُٹھ کر) کیا؟ 

منشی: مجھ سے کیا پوچھتے ہو، اپنے دل سے پوچھو۔ 

مالی: بتائیے، بتائیے منشی صاحب۔۔۔۔۔۔ آپ کو کیا معلوم ہے۔ 

منشی: میں کہہ چکا ہوں اپنے دل سے پوچھو۔ 

مالی: اپنے دل سے۔۔۔۔۔۔(آہستہ) میرا دل ہے کہاں۔ 

منشی: تم مجھ سے کہہ رہے تھے، اچھے باپ ہیں آپ منشی صاحب۔۔۔۔۔۔ میں کہتا ہوں۔۔۔۔۔۔ کیا تم باپ نہیں۔۔۔۔۔۔ تم نے کہا تھا گُلاب آپ کی اولاد ہے، دل پر اس طرح پتھر نہیں رکھ لینا چاہیئے۔۔۔۔۔۔ میں کہتا ہوں، چمیلی تمہاری اولاد ہے۔۔۔۔۔۔ تم نے کیوں اپنی آنکھوں پر پٹی باندھ رکھی ہے۔ 

مالی: (ایک دم خاموش اور سنجیدہ ہو جاتا ہے) 

منشی: جو کھیل تمہاری آنکھوں کے سامنے ہورہاہے، انسان کی آنکھوں پر پٹی بندھی ہو تو بھی دیکھ سکتا ہے۔۔۔۔۔۔ لیکن تم اتنے بے غیرت ہو۔۔۔۔۔۔ 

مالی: بس! 

منشی: میں غلام ہوں۔۔۔۔۔۔ میرا باپ دادا غلام تھا۔۔۔۔۔۔ صدیوں کی غلامی میرے خون میں رچی ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔ بے قصور گلاب کو یہاں سے نکالا گیا، میں اُف تک نہ کرسکا۔۔۔۔۔۔ اس لیئے کہ مجھ میں جرأت نہیں تھی، پر میں خوش ہوں کہ میرا بیٹا اس گندگی سے نکل گیا جو کچھ دنوں سے یہاں پھیل رہی ہے۔ 

تم تو ایک لڑکی کے باپ ہو مالی۔۔۔۔۔۔ چمیلی میری بیٹی ہوتی ۔۔۔۔۔۔ 

مالی: ایسی بات منہ سے نہ نکالو۔ 

منی: کیوں؟ 

مالی: چمیلی تمہاری بیٹی کیوں ہو۔ 

منشی: (حیرت سے) کیا مطلب؟ 

مالی: ادھر آؤ۔ 

منشی حیرت زدہ اس کے ساتھ چلتا ہے۔۔۔۔۔۔کوارٹر تک دونوں خاموش چلتے رہے ہیں۔ 

مالی: آجاؤ اندر۔ 

منشی کوارٹر میں داخل ہوجاتا ہے۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

بڑی سرکار کی حویلی(مالی کا کوارٹر) 

منشی اور مالی دونوں اندر آتے ہیں۔ 

مالی: (کھاٹ کی طرف اشارہ کرکے، منشی سے) بیٹھ جاؤ! 

منشی خاموش کھاٹ پر بیٹھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ مالی کچھ دیر اِدھر اُدھر ٹہلتا ہے، پھر ایک دم رُک کر منشی سے کہتا ہے۔ 

مالی: چمیلی میری لڑکی نہیں ہے منشی صاحب۔ 

منشی اٹھ کھڑا ہوتا ہے۔ 

منشی: چمیلی تمہاری لڑکی نہیں ہے؟ 

مالی: نہیں۔ 

اور بے تحاشا ہنسنا شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔ پھر ایک کونے میں رکھے ہوئے پلنگ کی طرف دیکھتا ہے اور ایک دم خاموش ہو جاتا ہے۔ 

مالی: وہ۔۔۔۔۔۔ یہاں لیٹی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔ 

منشی: کون؟ 

مالی: میری بیوی( اس کی آنکھوں میں آنسو آجاتے ہیں) آخری سانس تھے۔۔۔۔۔۔ بچی کی پیدائش کی جتنی خوشی ہوئی تھی، سب دُکھ بن گئی تھی۔۔۔۔۔۔ اس کی آنکھوں سے آنسو بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔ ایکا ایکی بچی دودھ کے لیئے بلکنے لگی۔ میں نے کہا دو آخری گھونٹ تو میری بیٹی کو دیتی جاؤ۔۔۔۔۔۔ یہ سُن کر اس نے مندی مندی آنکھوں سے اپنی بچی کی طرف دیکھا۔ پھر میری طرف آنکھیں اٹھائیں اور یہ خوفناک بات کہی’’یہ تمہاری بیٹی نہیں ہے مالی‘‘۔۔۔۔۔۔ یہ سارا کوارٹر میری آنکھوں تلے گھوم گیا۔۔۔۔۔۔’’ کس کی ہے؟‘‘ میں نے پوچھا۔۔۔۔۔۔ اس نے جواب’’بڑی سرکار کی۔۔۔۔۔۔ گلا گھونٹ دو اس کا۔۔۔۔۔۔ یہ سُن کر مجھے کوئی ہوش نہ رہا۔۔۔۔۔۔ مجھے معلوم نہیں۔اس گناہگار کی کب جان نکلی۔۔۔۔۔۔ 

یہ کہہ کر مالی خاموش ہوجاتا ہے۔۔۔۔۔۔ منشی حیرت زدہ،گم سم کھٹ پر بیٹھ جاتا ہے۔ تھوڑے توقف کے بعد وہ گردن اٹھا کر مالی سے مخاطب ہوتا ہے۔ 

منشی: تم نے گلا کیوں نہ گھونٹا اس شیطان کی بچی کا۔ 

مالی: میں گلا گھونٹنے والا تھا۔۔۔۔۔۔ لیکن میرے مَن کے اندر ایک شیطان پیدا ہوا۔۔۔۔۔۔ اس نے مجھ سے کہا نہیں مالی۔۔۔۔۔۔ اسے زندہ رہنے دو۔۔۔۔۔۔ اس کو پال پوس کربڑا کرو۔۔۔۔۔۔ بڑی سرکار کا ایک لڑکا ہے۔۔۔۔۔۔ جو ان ہوکر وہ بھی باپ کی طرح کھل کھیلے گا۔۔۔۔۔۔ کیا پتا ہے کہ یہ حرام کی بچی اور وہ۔۔۔۔۔۔ 

منشی: (ایک دم چیخ اٹھتا ہے) بس، بس۔۔۔۔۔۔ بس۔ 

مالی: (ابھی بس کہاں۔۔۔۔۔۔ میں اپنے دل کے پھوڑے کو چودہ برس تک پکاتا رہا ہوں۔۔۔۔۔۔ اب تو اس کے پھوٹنے کا وقت اور بہہ جانے کا وقت ہے۔ 

مأخذ : کتاب : کٹاری

مصنف:سعادت حسن منٹو

مزید ڈرامے پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here