غم چھپاؤں کہ آشکار کروں

0
242
Urdu Stories Ghazli
- Advertisement -

غم چھپاؤں کہ آشکار کروں

کون سی وضع اختیار کروں

حادثوں سے نگاہ چار کروں

غم کے لمحوں کو شاہکار کروں

اور کیا ہے جو نذر یار کروں

- Advertisement -

جی میں آتا ہے جاں نثار کروں

زندگی کو ہی جب ثبات نہیں

اور پھر کس کا اعتبار کروں

تم بھی محبوب زندگی بھی عزیز

تم کو چاہوں کہ خود سے پیار کروں

اور بھی مشغلے ہیں وحشت کے

کیوں گریباں ہی تار تار کروں

کیا قیامت سے کم ہے شام فراق

اور کس دن کا انتظار کروں

ہر سہارا ہے جب ترا محتاج

کیوں سہاروں پہ انحصار کروں

ضبطؔ جب ضبط غم کی ہے تاکید

کیوں نہ یہ جبر اختیار کروں

مأخذ : گل زر بکف

شاعر:ضبط انصاری

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here