کمرہ نمبر9

0
155
Urdu Drama Stories
- Advertisement -

افراد 

شیریں : (ایک شوخ و شنگ لڑکی۔۔۔۔۔۔تیز گفتار) 

زمان : (بے پروا سا آدمی۔۔۔۔۔۔شیریں کا بھائی) 

فضلو : (گھر کا خادم) 

رانی : (بھنگن) 

- Advertisement -

ناصر : (شیریں کا ایک چاہنے والا) 

**** 

(دروازے پر ایک ہاتھ پڑنے کی آواز) 

زمان: دیکھو شیریں۔ دستک نہ دو۔۔۔۔۔۔ پڑھو یہ کیا لکھا ہے۔ 

شیریں: (بے پروائی سے)۔۔۔۔۔۔کیا لکھا ہے؟ 

زمان: تم اتنی جلد بازی کیوں کرتی ہو۔۔۔۔۔۔یہ دیکھو تمہارے سامنے کیا ہے۔۔۔۔۔۔لکھا ہے’’ازراہ کرم دستک نہ دیجئے۔‘‘ 

شیریں: دستک نہ دیں تو کیا کریں؟ 

زمان: وہ کرو جو لکھا ہے۔ 

شیریں: کیا لکھا ہے! 

زمان: یہ تمہاری ضد بھی عجیب قسم کی ہے۔۔۔۔۔۔یعنی سب کچھ پڑھ چکی ہو اور مجھ سے پوچھے جارہی ہو کہ کیا لکھا ہے۔۔۔۔۔۔بخدا وہ لوگ بیوقوف ہیں جو تمہیں عقلمند سمجھتے ہیں۔ 

شیریں: میں اس وقت بحث کرنے کے موڈ میں نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔ تمہیں بتانا ہوگا کہ کیا لکھا ہے۔ 

زمان: لکھا ہے’’دستک نہ دیجئے۔۔۔۔۔۔صاحب خانہ کو آواز دیجئے۔‘‘ 

شیریں: یہ تمہارا صاحب خانہ جو کوئی بھی ہے، دیوانہ ہے۔ 

زمان: خدا کا واسطہ آہستہ بولو۔۔۔۔۔۔سن لے تو۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: تو کیا ہوگا۔۔۔۔۔۔(زور سے دستک دیتی ہے) 

زمان: (دوڑ کر)بھئی میں چلا۔ 

(اندر سے ایک کڑک سنائی دیتی ہے)’’کون ہے‘‘ 

شیریں: (ڈر کر)زمان ٹھہرو۔ میں بھی آئی(بھاگنے کی آواز)ٹھہرو۔۔۔۔۔۔میں کہتی ہوں کمرہ نمبر9 میں ضرور کوئی دیوانہ رہنے کیلیئے آیا ہے۔۔۔۔۔۔ چلو بھاگو۔۔۔۔۔۔اللہ قسم آواز میں دیوانگی تھی۔۔۔۔۔۔ تم نے نہیں سُنی؟ 

زمان: میں نے سب کچھ سُن لیا ہے۔ تم اب گھر چلو۔ 

(وقفہ۔۔۔۔۔۔دروازے پر دستک کی آواز) 

شیریں: دستک کیوں دیتے ہو؟۔۔۔۔۔۔ چلو اندر۔ دروازہ کُھلا ہے۔ 

زمان: (چونک کر)۔۔۔۔۔۔اوہ؟۔۔۔۔۔۔(ہنستا ہے)بھئی حد ہوگئی ہے۔۔۔۔۔۔میں کسی اور کا مکان سمجھے ہوئے تھا۔ 

(دروازہ کھولنے کی آواز) 

شیریں: (آواز دیتی ہے)فضلو۔۔۔۔۔۔فضلو 

فضلو: (آواز دُور سے آتی ہے) آیا بی بی جی۔ 

شیریں: زمان۔ تم فضلو کو نیچے چوکیدار کے پاس بھیجو۔ وہ اس سے پوچھ کے آئے کہ نو نمبر میں کون صاحب آئے ہیں۔ 

فضلو: جی بی بی جی۔ 

زمان: دیکھو فضلو! نیچے چوکیدار کے پاس جاؤ اور اس سے باتوں باتوں میں پوچھو کہ نونمبر میں کون صاحب آئے ہیں۔ 

شیریں: کیا نام ہے۔ کہاں سے آئے ہیں۔۔۔۔۔۔کیا کام کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔شادی شدہ ہیں یا۔۔۔۔۔۔ 

زمان: اتنی باتیں پوچھنے کی کیا ضرورت ہے۔۔۔۔۔۔صرف نام ہی کافی ہے۔ 

شیریں: نہیں۔ نہیں فضلو تم یہ سب کچھ دریافت کرو۔ 

فضلو: بہت اچھا بی بی جی۔ 

(وقفہ) 

شیریں: زمان یہ آدمی مجھے بڑا عجیب و غریب معلوم ہوتا ہے۔ 

زمان: تم نے کیسے جانا۔ 

شیریں: انسان کے اندر ایک چھٹی حسّ ہوتی ہے۔ یہی حسّ مجھ سے کہتی ہے۔۔۔۔۔۔ ٹھہرو میں مالک مکان کو ٹیلی فون کرتی ہوں۔۔۔۔۔۔ اس کو اس آدمی کے بارے میں بہت سی باتیں معلوم ہوں گی۔ 

زمان: (ہنستا ہے)۔۔۔۔۔۔میری چھٹی حس کہتی ہے کہ یہ آدمی تمہیں دیوانہ بنا دے گا۔ 

(نمبر ملانے کی آواز) 

شیریں: ہیلو۔۔۔۔۔۔ہیلو۔۔۔۔۔۔سیٹھ صاحب ہیں؟۔۔۔۔۔۔نہیں ہیں۔۔۔۔۔۔آپ کون ہیں؟۔۔۔۔۔۔منیجر۔۔۔۔۔۔ذرا صاف بولیئے۔۔۔۔۔۔آپ نے ہکلانا کیوں شروع کردیا ہے۔۔۔۔۔۔میں کرشن بلڈنگ کے فلیٹ نمبر چھ سے بول رہی ہوں۔۔۔۔۔۔ جی ہاں۔۔۔۔۔۔دیکھئے۔۔۔۔۔۔نو نمبر میں کون صاحب آئے ہیں۔۔۔۔۔۔ آپ کو معلوم نہیں۔۔۔۔۔۔دیکھیئے میں نے آپ سے یہ پوچھا تھا کہ نو نمبر میں کون صاحب آئے ہیں؟۔۔۔۔۔۔یعنی نو نمبر کا فلیٹ کس نے کرائے پر لیا ہے۔۔۔۔۔۔(وقفہ)۔۔۔۔۔۔ جی۔۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔۔تو آپ کو ان کے بارے میں کچھ علم نہیں۔۔۔۔۔۔لیکن میں پوچھتی ہوں آپ نے اصلی کرایہ دار کا نام پتہ کیوں دریافت نہیں کیا۔۔۔۔۔۔(ارادہ تبدیل کرلیتی ہے)۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔شکریہ(ٹیلی فون کا چونگا رکھ دیتی ہے) 

زمان: کیا کہتا ہے؟ 

شیریں: عجب بیوقوف ہیں یہ لوگ۔۔۔۔۔۔ایک تو عورت کی آواز سن کر یوں بوکھلا جاتے ہیں جیسے۔۔۔۔۔۔اب میں کیا کہوں۔۔۔۔۔۔ اور یہ بھلا کیا دستور ہے کہ نام پتہ کسی اور کا لکھ لیا جائے اور مکان میں رہنے کے لیئے کوئی دوسرا آئے۔۔۔۔۔۔ کہتا ہے ایک صاحب جن کا اسم شریف خواجہ غلام حسن ہے آئے۔ کرایہ ادا کیا اور کہا کرائے نامے پر ان کا نام لکھا جائے کیونکہ ان کے دوست جو کہ نمبر نو کے اصلی کرایہ دار ہیں اپنے نام سے کبھی مکان کرائے پر نہیں لیا کرتے۔ 

زمان: تمہاری چھٹی حسّ کے درست ہونے کا یہ پہلا ثبوت ہے۔ 

فضلو: سرکار چوکیدار کواس بات کا کچھ پتا نہیں کہ نمبر9 میں کون رہتا ہے۔ 

شیریں: تم نے اس سے کچھ پوچھا بھی تھا یا ایسے ہی بیڑی پی کر لوٹ آئے ہو۔ 

فضلو: جی نہیں بی بی جی۔ میں نے اس سے ساری باتیں کرید کرید کر پوچھیں مگر اس کو کچھ معلوم بھی ہو۔۔۔۔۔۔ وہ تو کہتا ہے کہ مجھے اس کرایہ دارکی بابت صرف اس بات کے سوا اور کچھ معلوم نہیں کہ وہ زمین پر سوتا ہے۔ 

شیریں: یہ بات چوکیدار کو کیسے معلوم ہوئی؟ 

فضلو: بھنگن نے اس کو بتایا تھا کہ ایک روز اس نے صاحب کو سیمنٹ کے فرش پر بستر تکیئے بغیر لیٹے دیکھا۔ 

شیریں: کچھ اور۔۔۔۔۔۔ 

فضلو: جی اور تو کوئی بات نہیں۔ 

شیریں: (جلدی جلدی)فضلو۔۔۔۔۔۔ٹھہرو۔۔۔۔۔۔ بھنگن ابھی تک بلڈنگ ہی میں ہوگی۔۔۔۔۔۔جاؤ اس کو دیکھو، اگر مل جائے تو فوراً میرے پاس بھیجو۔ کہنا ایک ضروری کام ہے۔ 

فضلو: بہت اچھا بی بی جی 

زمان: (ہنستا ہے۔۔۔۔۔۔پیٹ بھر کر ہنستا ہے)۔۔۔ 

شیریں: (خفگی آمیز حیرت کے ساتھ)۔۔۔یا وحشت۔ 

زمان: (ہنستے ہوئے) شیریں۔ میری سمجھ میں نہیں آتا تم اس آدمی میں اتنی دلچسپی کیوں لے رہی ہو۔۔۔۔۔۔تمہیں تو مردوں سے نفرت ہے۔ 

شیریں: مجھے اس سے خاک بھی دلچسپی نہیں۔۔۔۔۔۔ میں تو صرف۔۔۔۔۔۔ 

زمان: یہ بھی اچھی رہی۔۔۔۔۔۔ دلچسپی نہیں تو یہ بال کی کھال کیوں نکالی جارہی ہے۔۔۔۔۔۔بھئی شیریں مجھے تو ہنسی اس بات پر آتی ہے کہ جتنا تم اس آدمی کے متعلق دریافت کرتی ہو اتنا ہی وہ بھول بھلیاں بنتا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔میں کہتا ہوں اس آدمی کو جاننے کی ضرورت ہی کیا ہے۔ 

شیریں: تو چلو ہٹاؤ اس قصیّ کو۔ 

(ٹیلی فون کی گھنٹی بجتی ہے) 

زمان: (ٹیلی فون کا چونگا اٹھاتا ہے)ہیلو۔۔۔۔۔۔یس۔۔۔۔۔۔یس۔۔۔۔۔۔(دبی آواز میں۔۔۔۔۔۔شیریں سے)۔۔۔۔۔۔شیریں۔ بٹ صاحب تم سے بات کرنا چاہتے ہیں۔ 

شیریں: (بے پروائی سے) پوچھو کیا کہنا چاہتا ہے؟ 

زمان: میں تمہارا سیکرٹری نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔ جو کہنا ہے آپ کہو۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: میرے اچھے بھائی جو ہوئے۔۔۔۔۔۔اسے کسی نہ کسی حیلے سے ٹال دو۔ 

زمان: ہیلو۔۔۔۔۔۔موجود ہیں۔۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔۔(شیریں سے)۔۔۔۔۔۔ بٹ صاحب یہاں آنے کی اجازت چاہتے ہیں۔ 

شیریں: آنا چاہتا ہے تو آجائے مگر کہو ایسا لباس پہن کر نہ آئے جس میں وہ درزیوں کا چھپا ہوا اشتہار معلوم ہو۔۔۔۔۔۔ وہ جب بھی نیا سوٹ پہن کر آتا ہے۔ مجھے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اس نے سوٹ نہیں پہنا بلکہ سوٹ نے اس کو پہن رکھا ہے۔ 

زمان: (ہنسی دبا کر)۔۔۔۔۔۔ہیلو۔۔۔۔۔۔ بٹ صاحب آپ پھر کبھی تشریف لائیے آج اسے کہیں باہر جانا ہے۔۔۔۔۔۔آداب عرض۔۔۔۔۔۔(دبی ہوئی ہنسی اُبھر آتی ہے۔۔۔۔۔۔ خوب ہنستا ہے)۔۔۔۔۔۔ بھئی کیا فقرہ کسا ہے۔ 

شیریں: میں سچ کہتی ہوں۔ کالر میں اس کی گردن اور پتلون میں اس کی ٹانگیں ہمیشہ سوچتی رہتی ہیں کہ ہم کس مصیبت میں پھنس گئی ہیں۔ 

زمان: سچ تو یہ ہے کہ تمہیں مردوں سے خدا واسطے کا بیر ہے۔۔۔۔۔۔ یعنی تمہیں کوئی بھاتا ہی نہیں۔۔۔۔۔۔اچھا بھلا یہ تو بتاؤ اس بیچارے نثار میں کیا نقص ہے۔ بے حد شریف آدمی ہے۔۔۔۔۔۔ ملنسار ہے۔۔۔۔۔۔با اخلاص ہے۔ 

شیریں: اس کا منہ مجھے پسند نہیں۔۔۔۔۔۔ جب وہ بات کرتا ہے تو اس کا منہ اکنی ڈال کر پلیٹ فارم سے ٹکٹ نکالنے والی مشین کی جھری سا بن جاتا ہے۔۔۔۔۔۔ایسا نہ ہو میں کسی روز اس کے کھلے ہوئے منہ میں اکنی ڈال دوں۔ 

زمان: (ہنستا ہے) تمہاری اکنی وہ ڈکار لیئے بغیر ہضم کرجائے گا۔۔۔۔۔۔پلیٹ فارم ٹکٹ اس میں سے نہیں نکلے گا۔۔۔۔۔۔ اچھا تو شو کت کے متعلق تمہارا کیا خیال ہے۔ 

شیریں: خُدا کے لیئے اس کی بات نہ کرو۔۔۔۔۔۔ وہ جب بھی آتا ہے اور کچھ دیر یہاں بیٹھتا ہے تو مجھے اس سے دودھ کی بو آتی رہتی ہے۔ 

زمان: (ہنستا ہے) یہ بھی اچھی رہی۔ 

شیریں: اور کیا۔۔۔۔۔۔یعنی جب نہ تب وہ دودھ ہی کی بات کرئے گا۔ جیسے دنیا میں گائے بھینسوں اور بکریوں کے سوا اور کچھ ہے ہی نہیں۔۔۔۔۔۔ مجھے دُودھ سے سخت چڑ ہے اول تو دودھ کی رنگت ایسی ہے کوئی شریف آدمی اسے پسند نہیں کرسکتا، دوسرے اس کا ذائقہ بہت واہیات ہے، پیو تو گھنٹوں طبیعت متلاتی رہتی ہے، 

زمان: مگر شوکت کے سامنے تم نے کبھی اپنے ان خیالات کا اظہار نہیں کیا۔ 

شیریں: اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ اس کی وٹامنز گنوانا شروع کردیتا ہے اور وٹامنز کو سمجھنا میری سمجھ سے بالاتر ہے۔۔۔۔۔۔میں بے قافیہ شاعروں کے لکھے ہوئے سونیٹ سمجھ سکتی ہوں مگر کسی غذا کی وٹامنز نہیں سمجھ سکتی۔ 

زمان: (ہنستا ہے)۔۔۔۔۔۔ اب ایک ناصر باقی رہ گیا ہے۔۔۔۔۔۔ اس کے متعلق بھی کچھ ہو جائے۔ 

شیریں: ناصر یوں تو بہت اچھا آدمی ہے۔۔۔۔۔۔ مگر اس میں تحریکی قوت کی کمی ہے وہ بہت اچھا پکا ہوا سالن ہے مگر جس میں نمک کم ہو۔۔۔۔۔۔ وہ ایک ایسا ڈرامہ ہے جس میں کلائمکس پھسپھسا ہو کر رہ جائے۔۔۔۔۔۔ میں نے خوب غور سے اس کے کردار کا مطالعہ کیا ہے۔ میں سمجھتی ہوں کسی نہ کسی جگہ اس میں کوئی خامی ضرور رہ گئی ہے۔۔۔۔۔۔ یہ میں نہیں کہہ سکتی کہاں۔۔۔۔۔۔ اس میں اور جنیلیٹی بھی نہیں۔ شکل و صورت سے وہ ایک اور یجنل، ذہین اور طبعاً نوجوان دکھائی دیتا ہے مگر جب اس کے اندر جھانک کر دیکھا جائے تو وہ ایک معمولی انسان نظر آتا ہے بحیثیت انسان کے وہ بہت اچھا ہے۔۔۔۔۔۔بہت اچھا ہے مگر صرف انسانیت ہی سے کام نہیں چلتا۔ انسان میں انسانیت کے علاوہ تھوڑی سی حیوانیت بھی ہونی چاہیئے۔۔۔۔۔۔یعنی کوئی ایسی چیز ہو جو انسان میں ایک قسم کا انوکھا پن پیدا کردے۔۔۔۔۔۔ تم میرا مطلب نہیں سمجھو گے۔ 

زمان: (ہنستا ہے) میں سمجھ گیا ہوں۔۔۔۔۔۔ تمہارا مطلب یہ ہے کہ انسان میں ایک خاص قسم کی وٹا من ہونی چاہیئے(ہنستا ہے۔۔۔۔۔۔ خوب ہنستا ہے) 

شیریں: نہ معلوم ایسی سنجیدہ باتوں میں تمہیں ظرافت کا پہلو کہاں سے نظر آجاتا ہے۔۔۔۔۔۔ لو اب خاموش بھی ہو جاؤ۔۔۔۔۔۔ توبہ ہنسی ہے یا ۔۔۔۔۔۔ 

(دستک کی آواز) 

شیریں: دیکھو کون آیا ہے۔ 

زمان: (ہنسنا بند کرتا ہے) جو بھی ہوگا خود بخود آجائے گا۔۔۔۔۔۔ ارے یہ تو خود ناصر ہے۔ 

(وقفہ) 

ناصر: آداب عرض! 

شیریں: (جل کر) یہ دلی ہے۔۔۔۔۔۔ ابھی ابھی آپ بھجن لال سے ایک گیت سُن رہے تھے۔۔۔۔۔۔ ابھی آپ انہیں سے ایک اور گیت سنیں گے جس کے اگلے بول یہ ہیں۔۔۔۔۔۔ تمہیں شرم نہیں آتی سجنی۔۔۔۔۔۔ ناصرخُدا کے لیئے اندر داخل ہوتے ہی ہمیں یوں آداب عرض نہ کرو۔۔۔۔۔۔ ایسا معلوم ہوتا ہے ریڈیو بول رہا ہے۔۔۔۔۔۔ اب بیٹھ جاؤ۔۔۔۔۔۔ کہو کیسے آئے؟ 

ناصر: میں اس لیئے حاضر ہوا تھا کہ۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: یہاں صوفے پر بیٹھ جاؤ اور اطمینان سے اپنی حاضری کا سبب بتاؤ۔ 

ناصر: میں آج پکچر دیکھنے جارہا ہوں۔۔۔۔۔۔ کیا آپ بھی ساتھ چل سکتی ہیں۔۔۔۔۔۔ یعنی اگر آپ کو فرصت ہو تو۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: بس یہی پوچھنے آئے تھے؟ 

ناصر: جی ہاں۔ فقط یہی پوچھنے آیا تھا۔پکچر اچھی ہے اور مجھے یقین ہے کہ آپ کا وقت ضائع نہ ہوگا۔ 

زمان: یہ تم نے کیسے کہا کہ اس کا وقت ضائع نہ ہوگا۔اس کا وقت تو اچھی سے اچھی چیز دیکھنے پر بھی ضائع ہو جایا کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ خود پوچھ لو۔ 

فضلو: بی بی جی۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: کیا بات ہے فضلو۔۔۔۔۔۔ ہاں میں سمجھ گئی۔۔۔۔۔۔بھنگن مل گئی تجھے۔ 

فضلو: جی ہاں۔۔۔۔۔۔باہر کھڑی ہے۔ 

شیریں: میں ابھی آئی(اٹھنے کی آواز۔۔۔۔۔۔پھر چند لمحات تک اونچی ایڑی کے شو کی ٹپ ٹپ سنائی دے)۔۔۔ رانی میں نے تجھے ایک خاص کام سے بلایا تھا۔ یہ نو نمبر کے فلیٹ میں کون رہتا ہے! 

رانی: جی ایک آدمی رہتا ہے۔ 

شیریں: (ہنستی ہے) ہاں ہاں۔۔۔۔۔۔ فلیٹوں میں آدمی ہی رہتے ہیں۔ میں یہ پوچھتی ہوں یہ آدمی کون ہے۔ کیسا ہے۔ کیا کرتا ہے! 

رانی: بی بی جی اس بات کی تو مجھے کھبر نہیں پر اتنا جانتی ہوں کہ ایک گورے چٹے بابو جی ہیں جو اکیلے پڑے رہتے ہیں۔ 

شیریں: میں نے سنا ہے کہ تم نے ایک روز چوکیدار کو بتایا تھا کہ یہ آدمی جونو نمبر میں رہتا ہے۔ بستر تکیئے کے بغیر ننگے فرش پر لیٹتا ہے۔ کیا یہ بات صحیح ہے! 

رانی: جی ہاں۔ یہ بات تو بالکل ٹھیک ہے۔۔۔۔۔۔ گھر میں ان کے کوئی میج کرسی چارپائی،پلنگ نہیں ہے۔ 

شیریں: تو رہتے کیسے ہیں؟ 

رانی: بی بی جی یہ مجھے پتا نہیں کیسے رہتے ہیں پھر ایک روج میں نے ان سے پوچھا تھا۔’’بابو جی۔۔۔۔۔۔ آپ کا پھرنیچر کب آئے گا؟‘‘ 

شیریں: تو انہوں نے کیا جواب دیا تھا؟ 

رانی: کہا تھا: پھرنیچر ورنیچر میں پسند نہیں کرتا۔ یہ جو آجکل کی کرسیاں میجیں ہیں۔ ان کی لمبی لمبی ٹانگیں مجھے اچھی نہیں لگتیں۔۔۔۔۔۔ ایسا معلوم ہوتا ہے سوکھی سوکھی ٹانگوں والے آدمی اٹھک بیٹھک کررہے ہیں۔۔۔۔۔۔ وہ تو بی بی جی کچھ عجیب سے آدمی ہیں۔ 

شیریں: (ہنستی ہے) ہاں۔ تو اور کیا کہتے تھے؟ 

رانی: اب میں آپ سے کیا کہوں کہتے تھے اگر میں نے کرسیاں اور میجیں منگوائیں تو ان کی ٹانگوں کو ڈھکنے کے لیئے پتلونیں بھی بنواؤں گا۔(ہنستی ہے) 

شیریں: (ہنستی ہے) کوئی اور بات تمہیں ان کے متعلق معلوم ہو؟ 

رانی: اور تو کوئی بات نہیں ہے۔ پر میں اتنا جرور کہوں گی کہ وہ سپھائی بہت پسند کرتے ہیں۔ ہر روج مجھ سے سارے کمروں کے پھرش دھلواتے ہیں۔ 

شیریں: کھانا کہاں سے کھاتے ہیں۔ 

رانی: ایک ہوٹل سے ان کا ہر روج کھانا آتا ہے۔ 

شیریں: بس مجھے یہی پوچھنا تھا۔۔۔۔۔۔ اب تم جاسکتی ہو۔ 

رانی: سلام بی بی جی۔ 

شیریں: سلام۔۔۔۔۔۔لیکن ٹھہرو۔۔۔۔۔۔ان کا نام جانتی ہو؟ 

رانی: جی نہیں۔۔۔۔۔۔ مجھے ان کا نام مالوم نہیں ہے۔ 

شیریں: اچھا تو جاؤ۔ 

رانی: سلام بی بی جی۔ 

شیریں: سلام۔ 

(چند سیکنڈ کا وقفہ۔۔۔۔۔۔پھر شیریں کے چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔ایک دم ٹھہرنے کی آواز۔ ساتھ ہی بھاری قدموں کی چاپ) 

شیریں: بس جارہے ہو۔۔۔۔۔۔کچھ دیر بیٹھو گے نہیں؟ 

ناصر: اب پھر کبھی آؤں گا۔۔۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔۔ آپ نے تو پکچر دیکھنے سے انکار کردیا ہے۔ 

شیریں: یہ جو تم مجھے ہر وقت آپ آپ کہتے رہتے ہو اسی لیئے میں تمہارے ساتھ کہیں جانے کو تیار نہیں ہوتی۔۔۔۔۔۔ یعنی جب تم آتے ہوئے کھل کر بات ہی نہیں کرتے آخر تمہیں ہو کیا گیا ہے۔۔۔۔۔۔ یہاں جتنے لوگ آتے ہیں۔ ان میں سے صرف ایک تم ہو جس کو میں پسند کرتی ہوں۔ جس سے باتیں کرنے کو میرا جی چاہتا ہے مگر تم کچھ ایسے آپ آپ کی الجھنوں میں پڑتے ہو کہ عدالتی زبان میں لکھی ہوئی عرضی بن کے رہ جاتے ہو۔۔۔۔۔۔ اس روز تم مجھے سینما لے گئے۔ خدا کی قسم میں تمہاری خاموشی سے اس قدر پریشان ہوگئی تھی کہ جی چاہتا تھا اُٹھ کر دوڑتی ہوئی جاؤں اور سامنے چلتے ہوئے فلم میں گھس جاؤں۔۔۔۔۔۔ 

ناصر: مجھے افسوس ہے کہ میری وجہ سے آپ کو اس روز اتنی پریشانی اٹھانا پڑی۔ 

شیریں: اُف اوہ۔۔۔۔۔۔ بھئی کیسے یخ بستہ اور منجمد انسان سے واسطہ پڑا ہے اور کچھ نہیں تو اس وقت یہی کہہ کر میرا دل خوش کردیا ہوتا کہ تم بیوقوف ہو۔ جو خاموشی سے گھبراتی ہو۔ 

ناصر: میں یہ کیسے کہہ سکتا ہوں۔مجھے خود خاموشی اچھی نہیں لگتی۔ 

شیریں: تو اپنی عادت کو دُور کیوں نہیں کرتے؟ 

ناصر: یہ عادت دُور ہوسکتی ہے کہ اگر میں کسی ایسی عورت سے شادی کرلوں جو خوش گفتار ہو۔ 

شیریں: اس سے تمہارا مطلب؟ 

ناصر: میں خوش گفتار عورتوں کو پسند کرتا ہوں۔ اگر میری شادی کسی ایسی عورت سے ہو جائے۔ تو میں سمجھتا ہوں کہ میری خاموش پسند طبیعت میں انقلاب آسکتا ہے۔ 

شیریں: صاف صاف کیوں نہیں کہتے کہ تم مجھ سے شادی کرنا چاہتے ہو۔ 

ناصر: اس سے پہلے ایک بار میں اشارتاً آپ سے درخواست کر چکا ہوں۔ 

شیریں: (جل کر) اور ناچیز نے اشارتاً جناب کواس کا جواب دے دیا تھا۔ 

ناصر: میں آپ کے اس اشارے کو سمجھ نہ سکا۔ 

شیریں: تو لیجئے اب کی بار جناب کُھلے لفظوں میں مجھ سے سن لیں کہ آپ کی میری شادی صرف اس لیئے نہیں ہوسکتی کہ آپ ضرورت سے زیادہ شریف آدمی ہیں۔۔۔۔۔۔ آپ میں اور سب خوبیاں موجود ہیں مگر آپ میں اور جنیلیٹی بالکل نہیں ہے۔ 

ناصر: اور جنیلیٹی سے آپ کی کیا مراد ہے؟ 

شیریں: وہ شے جو آپ میں نہیں ہے۔۔۔۔۔۔ مگر آپ کو دیر ہو جائے گی۔۔۔۔۔۔ سینما کا وقت ہورہا ہے۔ 

ناصر: جی ہاں۔۔۔۔۔۔اچھا تو آداب۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: (بات کاٹ کر) آداب عرض 

ناصر: (تھوڑا ہنستا ہے) 

شیریں: یہ آپ ہنسے تھے؟ 

ناصر: (ایک دم سنجیدہ ہو کر) جی ہا ں۔ 

شیریں: کیوں؟ 

ناصر: ایسے ہی۔۔۔۔۔۔اچھا آداب۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: (فوراً) آداب عرض۔۔۔۔۔۔ 

(ناصر کے چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھلتا ہے پھر بند ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔اس کے بعد شیریں زور زور سے ہنسنا شروع کرتی ہے۔۔۔۔۔۔ہنستے ہنستے وہ دوسرے کمرے میں پہنچتی ہے) 

زمان: یاوحشت۔۔۔۔۔۔اتنی ہنسی آخر کس بات پر آرہی ہے؟ 

شیریں: (ہنسی بمشکل روک کر) تم آہستہ آہستہ ناصر کی طرح آداب عرض کہو میں تمہیں بتاتی ہوں۔کہو۔آداب عرض۔ 

زمان: آداب۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: آداب عرض(ہنسنا شروع کردیتی ہے) 

(زمان اور شیریں دونوں ہنستے ہیں) 

زمان: تم نے غریب ناصر کوضرور چھیڑا ہوگا۔۔۔۔۔۔ میں کہتا ہوں اس بیچارے کو زیادہ تنگ نہ کیا کرو۔ بڑا شریف آدمی ہے۔ 

شیریں: اس کی ضرورت سے زیادہ شرافت ہی پر تو مجھے اعتراض ہے۔۔۔۔۔۔ خیر چھوڑو اس قصے کو۔۔۔۔۔۔ اس فرنیچر کے متعلق تمہارا کیا خیال ہے۔ 

زمان: کس فرنیچر کے متعلق؟ 

شیریں: یہی جو اس کمرے میں پڑا ہے۔۔۔۔۔۔ تمہارا کیا خیال ہے۔۔۔۔۔۔ کیا ان کرسیوں میزوں اور تپائیوں کی ٹانگیں تمہیں ننگی ننگی نظر نہیں آتیں؟ 

زمان: میں تمہارا مطلب نہیں سمجھا! 

شیریں: میرا مطلب یہ ہے کہ ان کی ٹانگوں کی طرف دیکھ کر تمہارے دماغ میں کیا یہ خیال نہیں آتا کہ۔۔۔۔۔۔ میں یہ کہنا چاہتی ہو کہ یہ ٹانگیں کیا تمہیں ننگی ننگی دکھائی نہیں دیتیں؟ 

زمان: یہ کیا اوٹ پٹانگ باتیں کررہی ہو۔۔۔۔۔۔ کیا ان میزوں کرسیوں اور تپائیوں کی ٹانگوں کے لیئے تم کوئی لباس تیار کرنا چاہتی ہوں۔۔۔۔۔۔(ہنستا ہے) ترقی پسندی نہ جانے اس دور میں کتنی ترقی کرگئی ہے۔ 

شیریں: نوج تم سے کوئی بات کرئے۔۔۔۔۔۔لو بابا میری توبہ۔۔۔۔۔۔ بھول ہوئی مجھ سے جو میں نے یہ بات شروع کی۔۔۔(اٹھ کھڑی ہوتی ہے)۔۔۔۔۔۔(فرش پر چند لمحات چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔پھر ساز چھیڑنے کی آواز۔ اس کو آہستہ آہستہ فیڈ کردیا جائے۔مرغ کی اذان۔۔۔۔۔۔(وقفہ) 

رانی: فضلو۔۔۔۔۔۔اے فضلو 

فضلو: کیا ہے رانی؟ 

رانی: جرا ادھر تو آ۔۔۔۔۔۔ تجھ سے ایک بات کہنی ہے۔ 

(وقفہ) 

فضلو: کیا ہے؟ 

رانی: کل بی بی جی نے مجھ سے نو نمبر کے صاحب کی بابت کچھ پوچھا تھا۔ آج مجھے ایک نئی بات کی کھبر لگی ہے۔ 

فضلو: کیا؟ 

رانی: میں ابھی ابھی ادھر گئی تو دیکھا کہ صاحب رو رہے ہیں۔ 

شیریں: رو رہے تھے۔۔۔۔۔۔کون رو رہے تھے؟ 

رانی: بی بی جی ۔سلام 

شیریں: سلام۔۔۔۔۔۔ مگر یہ تو کس کی بات کررہی تھی؟ 

رانی: نو نمبر کے صاحب کی۔ 

شیریں: نو نمبر کے صاحب کی۔۔۔۔۔۔تو کیا وہ سچ مچ رو رہے تھے؟ 

رانی: جی ہاں۔۔۔۔۔۔ میں ابھی ابھی اُ دھر ہی سے آرہی ہوں۔۔۔۔۔۔ ان کی آنکھوں سے یہ موٹے موٹے آنسو ٹپک رہے تھے۔۔۔۔۔۔جانے کیوں اتنا رو رہے تھے۔۔۔۔۔۔ میں نے جب ان کی طرف دیکھا تو انہوں نے مجھ سے کہا۔’’رانی کبھی تو بھی روئی ہے؟‘‘ میں نے۔۔۔۔۔۔ میں نے کہا۔’’ہاں صاحب۔کئی بار روئی ہوں‘‘۔ اس پر انہوں نے کہا۔’’نہیں رانی۔ تو کبھی نہیں روئی۔۔۔۔۔۔ رونا وہ ہوتا ہے جو آواج نہ دے‘‘۔۔۔۔۔۔ اب معلوم نہیں بی بی جی اس سے ان کا کیا مطبل تھا۔ 

شیریں: رونا وہ ہوتا ہے جو آواز نہ دے(چونک کر)کیا کہا؟ 

رانی: جی کچھ بھی نہیں۔ 

شیریں: کوئی اور بات؟ 

رانی: اور تو کوئی بات نہیں ہے۔۔۔۔۔۔ میں نے جلدی کمرے ساپھ کیئے اِدھر چلی آئی۔ 

شیریں: خیر۔۔۔۔۔۔ فضلو۔ جا ایک کام کر۔اسپرین لے آ۔رات مجھے نیند نہیں آئی۔درد کے مارے سر پھٹا جارہا ہے۔ بھاگ کے جا۔ 

فضلو: بہت اچھا بی بی جی۔ 

(شیریں کے چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔چند لمحات تک یہ آواز آتی رہے جس سے یہ ظاہر ہو کہ وہ دوسرے کمرے میں جارہی ہے) 

شیریں: زمان۔۔۔۔۔۔زمان۔۔۔۔۔۔ابھی تک سو رہے ہو؟ 

زمان: نہیں تو۔۔۔۔۔۔ایسے ہی لیٹا ہوا۔۔۔ 

شیریں: کچھ سُنا تم نے۔۔۔۔۔۔رانی بھنگن نے ابھی ابھی مجھے بتایا کہ نو نمبر کا وہ پُراسرار آدمی رو رہا تھا۔ 

زمان: تو کیا ہوا۔۔۔۔۔۔ہنسنا رونا سبھی کے ساتھ ہے۔ 

شیریں: میرا مطلب ہے ۔کوئی بہت بڑا صدمہ ہوگا جو وہ رویا۔ 

زمان: ایسا ہوسکتا ہے۔ 

شیریں: میرا خیال ہے کہ تم جاؤ اور اس سے ملو۔۔۔۔۔۔ بہت ممکن ہے ہم اس کا غم ہلکا کرسکیں۔ 

زمان: لیکن میں تو اسے جانتا ہی نہیں۔اس کی شکل بھی تو میں نے ابھی نہیں دیکھی۔ 

شیریں: اسی بہانے ملاقات بھی ہو جائے گی۔ 

فضلو: بی بی جی اسپرین لے آیا ہوں۔ 

شیریں: لاؤ مجھے دو۔۔۔۔۔۔ زمان تم اُٹھو اور وہاں جاؤ۔ 

فضلو: بی بی جی۔نو نمبر میں سے کسی کے گانے کی آواز آرہی ہے۔ 

شیریں: گانے کی آواز؟۔۔۔۔۔۔ کون گا رہا ہے؟ 

فضلو: یہ مجھے معلوم نہیں۔ 

شیریں: آواز عورت کی ہے یا مرد کی؟ 

فضلو: آواز تو مرد کی ہے بی بی جی۔۔۔۔۔۔ پر بڑی سُریلی ہے۔ 

شیریں: میں خود جا کے سُنتی ہوں۔۔۔۔۔۔فضلو۔دروازہ بند ہے یا کُھلا؟ 

فضلو: بند ہے بی بی جی۔ 

زمان: تم خواہ مخواہ کیوں اس آدمی سے دلچسپی لے رہی ہو۔سر میں تمہارے درد ہے بیٹھو اسپرین کھاؤ اور آرام کرو۔ 

شیریں: میں ابھی آئی۔۔۔۔۔۔(چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔دروازہ کھلتا ہے۔۔۔۔۔۔پھر چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔مندرجہ ذیل غزل کے ابتدائی سُر قریب آتے جاتے ہیں) 

میرے قابو میں نہ پہروں دلِ ناشاد آیا 

وہ مرا بُھولنے والا جو مجھے یاد آیا 

لیجئے سنیئے وہ افسانۂ فرقت مجھ سے 

آپ نے یاد دلایا تو مجھے یاد آیا 

آپ کی بزم میں سب کچھ ہے مگر داغؔ نہیں 

ہم کو وہ خانہ خراب آج بہت یاد آیا 

**** 

(آہستہ آہستہ یہ غزل فیڈ ہوتی جارہی ہے۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھولنے کی آواز آتی ہے۔شیریں کمرے تک چلتی ہے۔اس کی آواز) 

زمان: سُن آئی ہو گانا؟ 

شیریں: کوئی اس فلیٹ میں داغ کی ایک پھڑکتی ہوئی غزل گا رہا تھا۔۔۔۔۔۔اچھا گلا پایا ہے۔آواز میں درد ہے اور اس درد میں خلوص ہے۔۔۔۔۔۔ اچھا شعر ہے۔(اسی اندازمیں گاتی ہے) لیجئے سنئے اب افسانۂ فرقت مجھ سے۔۔۔۔۔۔ آپ نے یاد دلایا تو مجھے یاد آیا۔ 

زمان: بہت اچھا شعر ہے۔ 

شیریں: (کچھ اور سوچتے ہوئے) ہاں خوب ہے۔۔۔۔۔۔ (وقفہ) مگر وہ تو اس سے کچھ دیر پہلے رو رہا تھا۔۔۔۔۔۔ کیا بات ہے۔ میری سمجھ میں تو کچھ بھی نہیں آتا۔۔۔۔۔۔ یہ آدمی عجب معّما بنتا چلا جارہا ہے۔ 

زمان: (دور سے) کیا کہا؟ 

شیریں: کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔یہ شعر بھی اچھا ہے۔۔۔۔۔۔(گاتی ہے)۔۔۔۔۔۔میرے قابو میں نہ پہروں دلِ ناشاد آیا۔۔۔۔۔۔وہ مرا بھولنے والا جو مجھے یاد آیا۔۔۔۔۔۔بھئی کچھ بھی ہو غزل ہندوستانی شاعری کی جان ہے۔ 

(دُور سے آواز آتی ہے ناصر۔۔۔۔۔۔ناصر فضلو سے پوچھتا ہے: کیا زمان صاحب اندر ہیں؟‘‘۔۔۔۔۔۔فضلوجواب دیتا ہے۔’’جی ہاں‘‘) 

شیریں: زمان۔ناصر آئے ہیں۔ 

زمان: (بلند آواز میں)ناصر صاحب اندر تشریف لے آئیے۔ 

(وقفہ) 

شیریں: آداب عرض ناصر صاحب۔ 

ناصر: تسلیمات۔۔۔۔۔۔ کہیئے کیسی طبیعت ہے؟ 

شیریں: اللہ کا شکر ہے۔۔۔۔۔۔ فرمائیے آپ کے مزاج تو بخیر ہیں۔ 

ناصر: جی ہاں۔بالکل تندرست ہوں۔۔۔۔۔۔زمان آپ ادھر کھڑے کیا کررہے ہیں؟ 

زمان: میں داغ کا دیوان دیکھ رہا ہوں۔۔۔۔۔۔ایک غزل نکالنی ہے۔ 

شیریں: نو نمبر میں ایک صاحب آئے ہیں۔۔۔۔۔۔ ان کے منہ سے داغ کی ایک غزل سُنی۔۔۔۔۔۔ خوب گاتے ہیں۔ 

ناصر: آپ سے ان کی ملاقات ہوئی؟ 

شیریں: ملاقات تو نہیں ہوئی۔۔۔۔۔۔میں باہر کوری ڈور میں کھڑی تھی کہ اندر سے گانے کی آواز آئی۔ چنانچہ کچھ دیر وہاں کھڑی یہ غزل سنتی رہی۔۔۔۔۔۔ معلوم نہیں کون ہیں۔ 

ناصر: تو آپ ان کو بالکل نہیں جانتے؟ 

شیریں: کیسے جان سکتے ہیں جبکہ وہ گھر کے باہر یہ بڑا نوٹس لگائے رکھتے ہیں۔’’ ازراہ کرم دستک نہ دیجئے۔۔۔۔۔۔صاحب خانہ کو آواز دیجئے۔‘‘ 

ناصر: ظاہر ہے۔ 

شیریں: میں سنتی ہوں یہ آدمی کچھ عجیب و غریب عادات رکھتا ہے۔۔۔۔۔۔ گھر میں اس کے کوئی میز کرسی،چارپائی وغیرہ نہیں ہے۔۔۔۔۔۔کبھی روتا ہے کبھی ہنستا ہے۔ 

ناصر: آپ کو کیسے معلوم ہوا؟ 

شیریں: اس کی تفصیل میں جانے کی کیا ضرورت ہے۔۔۔۔۔۔ بس کسی نہ کسی طریقے سے معلوم کرلیا۔ 

ناصر: یہ میں نے آپ سے اس لیئے پوچھا تھا کہ میں اس آدمی کو اچھی طرح جانتا ہوں۔ 

شیریں: کس کو؟ 

ناصر: وہی جو نو نمبر میں رہنے کے لیئے آیا ہے۔ 

شیریں: کیا نام ہے اس کا۔ 

ناصر: نام۔۔۔۔۔۔کچھ ایسا ہی نام ہے۔۔۔۔۔۔کیا احمد؟۔۔۔۔۔۔ میں اسے بہت اچھی طرح جانتا ہوں۔ 

شیریں: تو آپ ان سے ہمارا انٹروڈکشن کراسکتے ہیں؟ 

ناصر: ابھی چلیئے۔ 

شیریں: چلیئے۔۔۔۔۔۔مگر وہ کہیں برا نہ مانیں۔۔۔۔۔۔ یعنی ممکن ہے وہ بہت چڑچڑی طبیعت کے مالک ہوں۔ 

ناصر: جی نہیں۔وہ تو بے حد شریف آدمی ہے۔۔۔۔۔۔ چلیئے زمان صاحب آپ بھی چلیئے۔ 

زمان: نہیں بھائی تم لوگ جاؤ۔۔۔۔۔۔ مجھے کپڑے تبدیل کرنے پڑیں گے اور۔۔۔۔۔۔ 

شیریں: ہم دونوں چلتے ہیں۔ 

(دونوں کے چلنے کی آواز۔۔۔۔۔۔دروازہ کُھلتا ہے۔۔۔۔۔۔ پھر دونوں کے قدموں کی چاپ) 

شیریں: آپ دستک دیں گے یا آواز۔ 

ناصر: ان دونوں کی ضرورت نہیں۔۔۔۔۔۔چلیئے۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھلا ہے(دروازہ کھلنے کی آواز)۔۔۔۔۔۔آجائیے۔۔۔۔۔۔(آواز دیتا ہے) ارے بھئی کوئی ہے۔۔۔۔۔۔(لمبا وقفہ) 

شیریں: ابھی تک آئے نہیں۔ 

ناصر: وہ آگئے ہیں۔ 

شیریں: (دبی آواز میں)کہاں ہیں؟ 

ناصر: یہ آپ کے سامنے کون کھڑا ہے؟ 

شیریں: (دبے لہجے میں)کہاں؟ 

ناصر: شیریں تم میں ضرورت سے زیادہ بھولا پن ہے۔۔۔۔۔۔ یہ مجھے بالکل پسند نہیں۔۔۔۔۔۔بظاہر تم بہت شوخ اور چنچل ہو مگر اصل میں حد درجہ بھولی بھالی ہو۔۔۔۔۔۔ اتنے دن ہوگئے ہیں تمہیں مجھ سے ملتے ہوئے مگر تم نے قطعی طور پر مجھے نہیں سمجھا۔۔۔۔۔۔ نو نمبر کا ساکن میرے سوا اور کون ہوسکتا ہے۔ 

شیریں: یہ۔۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔۔یہ کیا کہہ رہے ہو تم؟ 

ناصر: اب خاموش رہو۔۔۔۔۔۔ایسا نہ ہو کہ میں بگڑ جاؤں۔۔۔۔۔۔ بیٹھو۔۔۔۔۔۔چاء پئیں۔۔۔۔۔۔(لہجہ بدل کر)۔۔۔۔۔۔یہ فرنیچر میں نے خاص طور پر بنوایا ہے۔۔۔۔۔۔ کہو کیسا ہے۔ 

شیریں: مگر۔۔۔مگر۔۔۔ یہ کیسے ہوسکتا ہے؟ 

ناصر: لیجئے سنیئے اب افسانہ فرقت مجھ سے 

آپ نے یاد دلایا تو مجھے یاد آیا 

فیڈ آؤٹ 

مأخذ : کتاب : منٹو کے ڈرامے اشاعت : 1942

مصنف:سعادت حسن منٹو

مزید ڈرامے پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here