جُرم اور سزا

0
123
Urdu Drama Stories
- Advertisement -

افراد

شنکر : (اخبار نویس)

کملا : (سیٹھ مگن لال کی نوکرانی)

کندن : (سیٹھ مگن لال کا لڑکا)

سیٹھ مگن لال : (بگڑا ہُوارئیس)

- Advertisement -

انسپکٹرعبدالحمید : (خفیہ پولیس کا آدمی)

اور چندا خبار بیچنے والے چھوکرے

(سسکیوں کی آواز۔۔۔۔۔۔ پھربھاری قدموں کی آواز۔۔۔۔۔۔ ایسا معلوم ہو کہ کوئی اضطراب کی حالت میں ٹہل رہاہے)

شنکر: تمہارا بیان ہے کہ اس نے تمہیں اپنے کمرے میں بلایا یہ کہہ کر کہ وہ تمہاری مدد کریگا۔۔۔۔۔۔ تمہارا بخار دُورکرنے کے لیئے وہ تمہیں دوا دے گا۔۔۔۔۔۔ اور ۔۔۔۔۔۔ اور اس نے تمہارا بخار دُور کرنے کے بجائے تمہیں ہمیشہ کے لیئے روگی بنا دیا۔۔۔۔۔۔ کیوں۔۔۔۔۔۔اس لیئے کہ قانون کا تالا صرف سونے چاندی کی چابی سے کھلتا ہے جو تمہارے پاس نہیں۔۔۔۔۔۔اس لیئے کہ وہ شہرکے سب سے بڑے رئیس کا لڑکاہے اورتم غریب بھکاران ہو تمہارا کوئی مددگار نہیں۔

(سسکیوں کی آواز عورت کی۔۔۔۔۔۔ پھر بھاری قدموں کی آواز)

شنکر: تمہارا بیان ہے کہ سیٹھ مگن لال جوہری کے لڑکے کندن نے تمہیں دان دینے کے لیئے تمہاری زندگی کا سب سے بڑا دان تمہاری جھولی سے چھین لیا۔ تمہارے جیون ساتھی کا سب سے قیمتی گہنا اُتار کروہ رکھے گا کہاں؟ اپنے باپ کے جواہرات کی تجوری میں؟۔۔۔۔۔۔ اپنی ماں کے سنگار دان میں؟ اپنے بٹوے میں۔۔۔۔۔۔کہاں؟۔۔۔۔۔۔کہاں؟۔۔۔۔۔۔ وہ اس چوری کوکیسے چھپائے گا۔۔۔۔۔۔ وہ اس ڈاکے پر کیسے پردہ ڈالے گا۔۔۔۔۔۔تمہاری آتش زدہ عصمت کا دُھواں،تمہارے زخمی دل کی جلن۔۔۔۔۔۔تمہاری بے بسی اوربیچارگی کی فلک شگاف چیخیں کیا اسے بھسم نہ کردیں گی؟

کملا: (سسکیوں کے ساتھ)۔۔۔۔۔۔ کتنی بے کس اور بے بس عورتوں کی چیخوں اور آہوں نے ایسے ظالم آدمیوں کو بھسم کیا ہے۔۔۔۔۔۔ آکاش میں کتنی بجلیاں ایسی ہیں جو ان پاپیوں پر گری ہیں۔۔۔۔۔۔

شنکر: تم ٹھیک کہتی ہو۔۔۔۔۔۔اس کو سزا دینا ہمارا کام ہے۔۔۔۔۔۔ تم مطمئن ہو جاؤ کملا! تمہاری زندگی خراب کرنے والا اپنی زندگی کبھی نہیں سنوار سکے گا۔۔۔۔۔۔ اس کو سزا بھگتنا ہوگی بہت کڑی سزا بھگتنا ہوگی۔۔۔۔۔۔ اس نے کوئی معمولی جرم نہیں کیا اس نے تمہاری اجلی زندگی پر کاجل کا لیپ کردیا ہے۔۔۔۔۔۔اس نے تمہاری کنواری دنیا کے تمام سہانے سپنے تم سے چھین لیئے ہیں۔ اس نے تمہاری غربت سے ناجائز فائدہ اٹھایا ہے۔۔۔۔۔۔ کیا کہتا تھا وہ پانچ روپے کا نوٹ لے جاؤ۔۔۔۔۔۔ پتا جی سے کہوں گا کہ وہ تمہاری تنخواہ بھی بڑھا دیں۔۔۔۔۔۔ یہ سن کرتم اس کے منہ پر اس لیئے نہ تھوک سکیں کہ وہ تم سے بہت اونچا تھا، یہ سن کر تم بددعا بھی نہ دے سکیں اس خوف سے کہ وہ پتھر مکان کے شاندار سازو سامان میں اُلجھ کر رہ جائے گی اورتمہارے پرماتما تک نہ پہنچ سکے گی۔۔۔۔۔۔ لیکن میں نے تمہاری دکھ بھری داستان سنی ہے یقین رکھو دنیا میں ہمدرد انسان موجود ہیں۔۔۔۔۔۔ اس کو جواب دینا ہوگا۔۔۔۔۔۔ اس کو بہت سی باتوں کا جواب دینا ہوگا۔

کملا: (سسکیاں لیتے ہوئے)۔۔۔۔۔۔لیکن بات وہی رہے گی جو ہو چکی ہے۔

شنکر: مجھے بہت صدمہ ہوا کملا۔۔۔۔۔۔ مجھے بہت صدمہ ہوا ہے تمہاری دکھ بھری داستان سن کر۔۔۔۔۔۔ کاش میں نے تمہیں اپنے ہی پاس رکھا ہوتا مگر۔۔۔۔۔۔ اب میں کیا کہوں۔۔۔۔۔۔ یہ مفلسی بہت بری بلا ہے۔

(قدموں کی بھاری آواز۔۔۔۔۔۔آہستہ آہستہ یہ آواز گم ہو جائے)

(دروازہ کھولنے کی چرچراہٹ۔۔۔۔۔۔ خاموشی۔۔۔۔۔۔ گھڑی کی ٹک ٹک۔۔۔۔۔۔خراٹوں کی آواز)

شنکر: کندن۔۔۔۔۔۔کندن( ذرا بلند آواز میں کندن)۔

کندن: (ایکا ایکی جاگ کر) کیا ہے۔۔۔۔۔۔کون ہے۔۔۔۔۔۔ت۔۔۔۔۔۔ت۔۔۔۔۔۔تم کون ہو تم میرے کمرے میں کیسے داخل ہوئے؟

شنکر: (ہنستا ہے) میں شنکر ہوں۔۔۔۔۔۔ اس شہر کا ایک معمولی اخبار نویس۔۔۔۔۔۔ میں اس کمرے میں کیسے داخل ہوا تم اس پرتعجب کا اظہارکیوں کرتے ہو۔۔۔۔۔۔ امیر آدمیوں کے گھر بھی ان کے چال چلن کی طرح سورا خ دا ر ہوتے ہیں کوئی نہ کوئی جگہ اندرگھسنے کے لیئے مل ہی جاتی ہے۔

کندن: تم چاہتے کیا ہو؟

شنکر: یہ پوچھو کہ میں کیا نہیں چاہتا؟

کندن: تم۔۔۔۔۔۔چور ہو!

شنکر: یہ تم نے کیسے پہچانا؟

کندن: میں۔۔۔۔۔۔(ایک دم رُک کر)۔۔۔۔۔۔دروازے کو تالا تم نے لگایا ہے۔۔۔۔۔۔کیوں۔کیوں!تم کون ہو۔۔۔۔۔۔ مجھ سے کیا چاہتے ہو۔۔۔۔۔۔تمہاری آنکھیں۔۔۔۔۔۔تمہاری آنکھیں۔

شنکر: (زہریلی ہنسی)ہاں ہاں کہو۔۔۔۔۔۔ میری ان آنکھوں میں تمہیں کیا نظر آیا۔۔۔۔۔۔کملا کے آنسو۔۔۔۔۔۔اپنے باپ کی جھلکیاں۔۔۔۔۔۔ میرے ارادے۔۔۔۔۔۔بولو کیا نظر آتاہے تمہیں ان آنکھوں میں۔۔۔۔۔۔ کیا تمہیں محسوس نہیں ہوتا کہ تم کسی عدالت کے کٹہرے میں کھڑے ہو اورتمہارے سامنے کرسی پر تمہاری قسمت کا فیصلہ سنانے و الا جج بیٹھا ہے۔

کندن: میری قسمت۔۔۔۔۔۔کملا ہماری نوکرہے۔۔۔۔۔۔کملا۔۔۔

شنکر: (زہریلی ہنسی)۔۔۔ میں بھی تمہارا نوکر ہوں۔۔۔۔۔۔ میں اس وقت تمہاری خدمت کے لیئے آیا ہوں۔۔۔۔۔۔دیکھو بسترپرسے اُٹھنے کی کوشش نہ کرو اور جو کچھ مجھے کہنا ہے غور سے سنو(سنجیدگی کے ساتھ) عدالت میں تمہارا مقدمہ پیش ہے اور اس مقدمے کا فیصلہ کرنے کا اختیار میں نے اپنے ہاتھوں میں لیاہے۔۔۔۔۔۔ تم نے کملا کوجو بقول تمہاری نوکر ہے اس کمرے میں بلایا اور اس کی مرضی کے خلاف۔۔۔۔۔۔ اس کی ناداری اور غربت کا ناجائز فائدہ اُٹھاتے ہوئے تم نے اس کی زندگی خراب کی( کڑے لہجے میں)۔۔۔ کیا یہ جھوٹ ہے؟۔۔۔۔۔۔ تمہیں اس بارے میں کچھ کہنا ہو تو کہو۔

کندن : میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ میں آپ کامطلب نہیں سمجھا۔۔۔۔۔۔ کیا کملا نے آپ سے کچھ کہا!

شنکر: میں پوچھتا ہوں کیا تمہیں اس بارے میں کچھ کہنا ہے!

کندن: مجھے۔۔۔۔۔۔مجھے معلوم نہ تھا کہ آپ۔۔۔۔۔۔ یعنی کملا کا کوئی رشتہ دارہے۔۔۔۔۔۔ وہ تو کہتی تھی کہ۔۔۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔۔۔کہ میرا کوئی بھی نہیں۔۔۔۔۔۔ روپیہ۔۔۔۔۔۔ کیا روپے سے یہ معاملہ رفع دفع ہوسکتاہے؟

شنکر: تم نے جرم کا اقبال کیا ہے۔ اب مجھے اپنا فیصلہ سُنا دینا چاہیئے۔

کندن: ف۔۔۔۔۔۔ف۔۔۔۔۔۔فیصلہ۔۔۔۔۔۔فیصلہ!

شنکر: خاموش رہو۔۔۔۔۔۔ تم نے یعنی کندن لال نے جس کا باپ سیٹھ مگن لال جوہری ہے وہ دسمبر کی رات کو اپنی نوکرانی کملا جس کا اس دنیا میں کوئی والی وارث نہیں ہے اپنے کمرے میں بلایا اور اس کو اپنی نفسانی خواہشات کا تختہ مشق بنایا۔۔۔۔۔۔زبردستی تم نے ایک معصوم عورت کی زندگی داغ دار بنائی۔۔۔۔۔۔ اس نے تمہارا کچھ نہیں بگاڑا تھا لیکن تم نے اس کے جیون کو ہمیشہ کے لیئے اجاڑ دیا۔۔۔۔۔۔ تم نے ایسا جر م کیا ہے جس کی سزا میرے خیال کے مطابق موت ہے۔۔۔۔۔۔ تم خونیوں اور قاتلوں سے کہیں زیادہ گنہگار ہو۔اگر میں قانون ہوتا تو تمہاری گردن میں مسلسل موت بن کر لٹک جاتا۔ تمہارے گلے میں موت کی ایک نہ ختم ہونے والی ہچکی بن کر اٹک جاتا۔۔۔۔۔۔ تمہارے چہرے پرتمہارے گناہ کا غیرفانی اشتہار بن کرچپک جاتا( زیادہ سنجیدگی کے ساتھ)۔۔۔ چونکہ یہاں کی قانونی عدالتوں کی آنکھوں میں تمہارے باپ کے جواہرات چکا چوند پیداکرسکتے ہیں اس لیئے تمہارے جرم کو انسانیت کی کسوٹی پر میں نے خود پرکھا ہے۔ تمہیں سب سے بڑا مجرم یقین کرتے ہوئے تمہیں موت کی سزا دیتا ہوں۔( چند لمحات قبر کی خاموشی طاری رہتی ہے)۔

کندن: یہ۔۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔۔یہ کیا بیہودگی ہے۔۔۔۔۔۔ تم کون ہوتے ہو مجھے سزا دینے والے؟

شنکر: انسان۔۔۔۔۔۔ ایک ایسا انسان جو تمہارے مقابلے میں ہر لحاظ سے افضل و برتر ہے۔

کندن: ہوا کرئے۔۔۔۔۔۔ ایسے ہزاروں انسان دردر کی ٹھوکریں کھاتے پھرتے ہیں۔

شنکر: مگر ایسی ٹھوکر نہیں کھاتے جو تم نے کھائی ہے اور جو تم کو موت کی گہرائیوں میں اترنے پر مجبور کرے گی۔

کندن: تم مجھ پر زبردستی موت عائد نہیں کرسکتے۔

شنکر: لیکن تم اس بھولی بھالی عورت پر ایک نہیں کئی موتیں زبردستی عائد کرسکتے ہو۔۔۔۔۔۔کیوں!۔۔۔۔۔۔ میں کیوں تم پر موت عائد نہیں کرسکتا۔ کیا تم اس کے حق دار نہیں ہو۔۔۔۔۔۔خبردار کندن اپنی جگہ سے ہلنے کی کوشش نہ کرو۔۔۔۔۔۔ اس چاقو نے کئی حیوانوں کی گردنیں کاٹی ہیں۔

کندن: (ڈرے ہوئے لہجے میں) چاقو۔۔۔۔۔۔چاقو۔۔۔۔۔۔

شنکر: ہاں چاقو کاپھل نفسانی خواہشات سے بہت زیادہ تیز ہے اور اس بوتل میں گھلا ہوا زہر ہے۔۔۔۔۔۔بولو تمہیں لوہا پسند ہے یا زہر۔۔۔۔۔۔ چاقو سے مرنا پسند ہے یا اس زہر سے۔۔۔۔۔۔یہ زہر اتنا زُود اثرہے کہ مرنے میں تمہیں کوئی تکلیف نہ ہوگی۔

کندن: میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ میں مرنا نہیں چاہتا۔

شنکر: مرنا کوئی بھی نہیں چاہتا۔ لیکن موت جب ایک دفعہ آجائے تو اسے کوئی ٹال بھی نہیں سکتا۔۔۔۔۔۔ اچھے لڑکے بنو اور جوکچھ میں کہتا ہوں اس پر عمل کرو۔۔۔۔۔۔لو اس کاغذ پرلکھو

(کاغذ کی کھڑکھڑاہٹ) یہ رہا قلم۔۔۔۔۔۔لکھو۔۔۔۔۔۔جو کچھ میں لکھواؤں گا لکھتے جاؤ۔۔۔۔۔۔انکار کی صورت میں مجھے اپنی طاقت سے کام لینا پڑے گا۔ جانتے ہو میں تم جیسے چار آدمیوں کا لہو نچوڑ سکتا ہوں۔

کندن: کیا۔۔۔۔۔۔کیا لکھوں۔۔۔۔۔۔(کاغذ کی کھڑکھڑاہٹ)

شنکر: لکھو۔۔۔میں نے اپنی زندگی میں ایک بہت بڑا گناہ کیا ہے۔۔۔۔۔۔ لکھ رہے ہو؟

کندن: (لرزاں آواز میں)میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔

شنکر: (رعب دار آواز میں)لکھو۔۔۔۔۔۔میں نے اپنی زندگی میں ایک بہت بڑا گناہ کیا ہے جس کا بوجھ میں نہیں اُٹھا سکتا۔۔۔۔۔۔اس گناہ کو تمام عمر اپنے کاندھوں پر اُٹھائے رہوںیہ مجھ سے نہیں ہوسکتا۔ اس لیئے میں خود کشی کررہا ہوں۔

کندن: خود کشی۔۔۔۔۔۔!

شنکر: ہاں خود کشی۔۔۔۔۔۔ لکھو ورنہ مجھے تمہارے خون سے ہاتھ رنگنا پڑیں گے۔

کندن: ۔۔۔م۔۔۔م۔۔۔مجھے معاف کردیجئے۔

شنکر: پرماتما تمہیں معاف کریں۔۔۔۔۔۔لکھ لیا!

کندن: جی ہاں۔

شنکر: نیچے اپنے دستخط کرو۔

(کاغذ کی کھڑکھڑاہٹ)

شنکر: لاؤ یہ کاغذ میرے حوالے کرو۔ شاباش۔(ہاتھا پا ئی کی آواز۔ کندن زورسے چیختاہے مگر شنکر اس کے منہ پر ہاتھ رکھ دیتا ہے) بس۔۔۔۔۔۔بس۔۔۔۔۔۔بس۔۔۔۔۔۔یہ ایک قطرہ ہی کافی ہے۔۔۔۔۔۔اب جاؤ جہنم میں(کندن کچھ بولتا ہے مگر اس کی آواز نہیں نکلتی اس لیئیکہ شنکر اس کے منہ پر ہاتھ رکھے ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیرکے لیئے خاموشی طاری رہتی ہے)

شنکر: (اطمینان کا سانس لے کر)۔۔۔چلو ایک گناہگار دنیا سے کم ہوا(تھوڑا وقفہ۔۔۔۔۔۔گھڑی کی ٹک ٹک۔۔۔۔۔۔وقفہ۔۔۔۔۔۔ پھر دروازہ کھولنے کی آواز۔۔۔۔۔۔پھر وقفہ)

کملا: (حیرت بھرے لہجے میں)۔۔۔ش۔۔۔۔۔۔شنکر صاحب آپ۔۔۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔۔

شنکر: کون کملا!

کملا: آپ کیسے آئے۔۔۔۔۔۔ میں تو سب دروازے بند کرکے سوئی تھی۔۔۔۔۔۔اس وقت۔۔۔۔۔۔آپ۔۔۔۔۔۔آپ۔

شنکر: میں کندن سے ملنے آیا تھا۔۔۔۔۔۔ لو اب دروازہ بند کرلو اور جاکے سو جاؤ۔

(قدموں کی چاپ۔۔۔۔۔۔دروازہ بند کرنے کی آواز)

کملا: (سرگوشی میں)۔۔۔کندن سے ملنے آئے تھے۔۔۔

(اخبار بیچنے والے چھوکروں کی آوازیں)

۔۔۔۔۔۔سیٹھ مگن لال جوہری کے لڑکے نے خود کشی کرلی

رات کو زہرکھا لیا

۔۔۔۔۔۔سیٹھ مگن لال جوہری کے لڑکے کی پُراسرار موت

زہر بڑا مہلک تھا

۔۔۔۔۔۔ایک جوہری کا لڑکا رات کو اپنے کمرے میں مردہ پایا گیا

وہ اپنے گناہ کا بوجھ برداشت نہ کرسکا۔

(وقفہ)

(شنکر خوفناک قہقہہ بلند کرتا ہے)۔

شنکر: کیوں انسپکٹرصاحب آپ نے یہ کیسے معلوم کرلیا کہ سیٹھ مگن لال کے بدنصیب لڑکے کندن لال نے اپنے ہی ہاتھوں اپنے آپ کو مارا ہے۔

انسپکٹر: بھئی معاملہ بالکل صاف ہے۔ تم نے خواہ مخواہ ایک لمبا چوڑا مضمون لکھ مارا ہے۔۔۔۔۔۔تمہارا خیال غلط ہے۔ اس نے ایک ایسی تحریر چھوڑی ہے جس میں وہ صاف صاف لکھتا ہے کہ میں اس لیئے خود کشی کررہا ہوں کہ میں اپنے گناہ کوبرداشت نہیں کرسکتا۔۔۔۔۔۔ اس نے کوئی ایسا گناہ کیا ہوگا جو اس کے ضمیر پر ایک مستقل بوجھ بن کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔ بھئی گناہ کرنے اور پھر اس کو ہضم کرنے کے لیئے بھی تو کافی طاقت ہونی چاہیئے۔

شنکر: ما ن لیا۔۔۔۔۔۔ لیکن اس سے یہ ثابت تو نہیں ہوتا کہ اس نے خود کشی کی ہے۔

انسپکٹر: تو اور کیا ثابت ہوتا ہے!

شنکر: ثابت کچھ بھی نہیں ہوتا۔۔۔۔۔۔ تم سطحی چیزوں سے ایک رائے قائم کرلیتے ہو اور اسی کو ثبوت کے طور پر پیش کردیتے ہو۔ تمہارا قانون اندھا ہے جو صرف ٹٹول کر دیکھتا ہے۔ واقعات کا اصل رنگ اس کو نظر نہیں�آتا(سنجیدگی کے ساتھ) کیا پتہ ہے سیٹھ مگن لال کے لڑکے کو کسی نے قتل کردیا ہو۔۔۔۔۔۔ کیا ایسا نہیں ہوسکتا؟

انسپکٹر: ایسا نہیں ہوسکتا۔۔۔۔۔۔ کیا اس کی لکھی ہوئی تحریر ہمارے پاس موجود نہیں ہے۔۔۔۔۔۔

شنکر: (بڑی درشتی کے ساتھ) خاموش رہو انسپکٹر عبدالحمید۔۔۔۔۔۔ زیادہ باتونی نہ بنو کیا خیال ہے تمہارا اس چھرے کے متعلق۔۔۔۔۔۔

انسپکٹر: چھرا!

شنکر: ہاں یہ چھرا جس کی دھار تمہارے قانون سے بہت زیادہ تیز ہے۔۔۔۔۔۔ کیا خیال ہے تمہارا اس کے متعلق۔۔۔

انسپکٹر: خیال!

شنکر: ہاں خیال۔۔۔۔۔۔ اور کیارائے ہے تمہاری اس کمرے کے متعلق جس کی ساری کھڑکیاں بند ہیں۔

انسپکٹر: رائے؟

شنکر: تم کانپتے کیوں ہو۔۔۔۔۔۔ قلم پکڑو اور لکھو جو کچھ میں لکھاتا ہوں۔

انسپکٹر: شنکر!

شنکر: انسپکٹر عبدالحمید۔۔۔۔۔۔ لکھتے ہو یا نہیں۔

انسپکٹر: (گھبرا کر) ارے بھئی کیا؟

شنکر: (زورسے قہقہہ لگاتا ہے)۔۔۔۔۔۔چھرا میز پر پھینکنے کی آواز) بہت ممکن ہے سیٹھ مگن لال جوہری کے لڑکے کے ساتھ بھی یہی ہوا ہو۔۔۔۔۔۔ کیا چھرے میں اتنی طاقت نہیں ہوتی کہ وہ چند سطریں لکھوا سکے۔۔۔۔۔۔ ویسی ہی چند سطریں جو تم نے کندن کے تکیئے کے نیچے کاغذ کے ایک پرزے پر لکھی ہوئی پائیں اور جسے تم ثبوت کے طور پر شہر کے ہر چوک میں اسٹول پر کھڑے ہو کر دہرانے کو تیارہو۔۔۔۔۔۔کہو اب کیا خیال ہے؟

(ہنستا ہے)

انسپکٹر: خیال۔۔۔۔۔۔(اپنے ہوش و حواس دُرست کرتے ہوئے)کیا کہہ رہے تھے تم؟

شنکر: (ہنستا ہے) ڈرو نہیں۔ میں تم سے ایسی تحریر نہیں لکھواؤں گا۔۔۔۔۔۔ یہ تو صرف ایک مذاق تھا۔ لیکن اب تمہیں ماننا پڑے گا کہ انسان سے خود کشی کرائی بھی جاسکتی ہے قتل کرنے کا ایک یہ بھی طریقہ ہوسکتا ہے(ہنستا ہے)۔۔۔۔۔۔بھئی معاف کرنا میں نے تمہیں ڈرادیا۔

انسپکٹر: نہیں نہیں تم نے بہت اچھا کیا(معنی خیز لہجے میں)بہت اچھا کیا۔

(وقفہ)

انسپکٹر: سیٹھ مگن لال جی کیا آپ بتا سکتے ہیں آپ کے لڑکے نے خود کشی کیوں کی!

سیٹھ: مجھے کچھ معلوم نہیں انسپکٹر صاحب۔۔۔۔۔۔ میں خود حیران ہوں۔۔۔۔۔۔ میرے تو ہوش و حواس بجا نہیں رہے۔۔۔۔۔۔ مجھے کچھ معلوم نہیں کیا ہوا ہے۔

انسپکٹر: وہ نوٹ جو ہمیں تکیئے کے نیچے ملا ہے کیا آپ ہی کے لڑکے کے ہاتھ کا لکھا ہے۔۔۔۔۔۔آپ اس کی ہینڈ رائیٹنگ تو پہچانتے ہوں گے؟

سیٹھ: جی ہاں۔ ہینڈ رائیٹنگ اسی کا ہے۔

انسپکٹر: کیا آپ سے یا آپ کے لڑکے سے کسی کی دشمنی تھی؟

سیٹھ: ہوگی۔ لیکن میرے علم سے باہر ہے میں سمجھتا ہوں ہمارا کوئی دشمن نہیں ہے۔لیکن یہ آپ کیوں پوچھتے ہیں۔۔۔۔۔۔ کیا میرے کندن کو کسی نے قتل کیا ہے؟

انسپکٹر: ایسا ہوسکتا ہے۔۔۔۔۔۔ دراصل ایسے معاملوں میں ہر شے کو شک کی نظروں سے دیکھنا پڑتا ہے۔میں نے آپ کے تین نوکروں کے بیانات لیئے ہیں لیکن ان سے مجھے کوئی مدد نہ ملی۔۔۔۔۔۔ میں اس معاملے کی تہہ تک پہنچنا چاہتا ہوں۔ اس گناہ کا کھوج لگانا چاہتا ہوں جو بقول کندن کے اس کی موت کا باعث ہوا۔۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔۔ یہ عورت کون ہے؟

سیٹھ: ہماری نوکرانی کملا۔

انسپکٹر: کملا ذرا ادھر آؤ۔

سیٹھ: کملا!

کملا: کیا مجھے بلایا ہے آپ نے؟

سیٹھ: ہاں انسپکٹر صاحب بلاتے ہیں۔۔۔۔۔۔ تم سے کچھ پوچھنا چاہتے ہیں۔

کملا: کچھ پوچھنا چاہتے ہیں۔۔۔۔۔۔ مجھے۔۔۔۔۔۔مجھے کیا معلوم ہے جو آپ مجھ سے کچھ پوچھنا چاہتے ہیں؟

انسپکٹر: گھبراؤ نہیں۔ ہم تمہیں کھا نہیں جائیں گے۔۔۔ یہ بتاؤ کہ جس رات تمہارے سیٹھ کے لڑکے نے خود کشی کی تم کہاں تھیں؟

کملا: میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ میں اپنے کمرے میں تھی۔

انسپکٹر: کیا تمہیں رات کو کوئی آواز سنائی دی تھی؟

کملا: آواز۔۔۔۔۔۔ہاں ایک آواز سُنائی دی تھی۔

انسپکٹر : تم سو رہی تھیں؟

کملا: نہیں میں جاگ رہی تھی۔

انسپکٹر: اس وقت کیا بجا ہوگا؟

کملا: مجھے معلوم نہیں۔۔۔۔۔۔آدھی رات ہوگی۔

انسپکٹر : تم جاگ کیوں رہی تھیں؟

کملا: میں جاگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔میں جاگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔ اب میں کیا بتاؤں کہ میں کیوں جاگ رہی تھی۔

انسپکٹر: دیکھو کملا جو کچھ پوچھتا ہوں اس کا ٹھیک ٹھیک جواب دو۔ تم کیوں جاگ رہی تھیں؟

کملا: میری طبیعت خراب تھی۔

سیٹھ: انسپکٹر صاحب! کملا کی طبیعت واقعی کچھ دنوں سے خراب ہے۔

انسپکٹر : ہاں تو آدھی رات کے قریب تم نے کوئی آواز سنی اور کمرے سے باہر نکل کر تم نے دیکھا کہ۔۔۔۔۔۔

کملا: شنک۔۔۔۔۔۔شنک۔۔۔۔۔۔ نہیں نہیں۔۔۔۔۔۔باہر توکوئی بھی نہیں تھا۔

انسپکٹر: یہ تم کس کا نام لیتے لیتے رک گئیں۔۔۔۔۔۔بتاؤ۔۔۔۔۔۔بتاؤ۔

سیٹھ: انسپکٹر صاحب میں آپ کو بتاتا ہوں۔ یہاں ایک اخبار نویس شنکر ہے۔ یہ پہلے اُسی کے پاس رہتی تھی۔ اس نے کملا کی بہت مدد کی ہے۔ یہ بیچاری کسی زمانے میں گلیوں میں بھیگ مانگا کرتی تھی۔ شنکر نے اس کو اپنے گھر پناہ دی اور اس قابل بنا دیا کہ یہ کسی اچھے گھرمیں نوکری کرسکے۔ چنانچہ کملا اس کا بہت احسان مانتی ہے۔۔۔۔۔۔تھوڑے روز ہوئے اسے تیز بخار چڑھاتو بے ہوشی میں شنکر صاحب شنکر صاحب بہت دیرتک پکارتی رہی۔۔۔۔۔۔ کیوں کملا کیا شنکر تجھ سے ملنے آیا تھا؟

کملا: جی نہیں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔میں نے باہر نکل کر دیکھا توکوئی آدمی اندھیرے میں کھڑا تھا۔

انسپکٹر: اور وہ شنکر تھا!

کملا: میں نے کب کہا ہے۔۔۔۔۔۔ میں نے کب کہاہے۔۔۔۔۔۔ وہ۔۔۔۔۔۔وہ۔۔۔۔۔۔ وہ تو چھوٹے لالہ جی تھے۔۔۔۔۔۔چھوٹے لالہ جی(رونا شروع کردیتی ہے)۔

انسپکٹر: (معنی خیز انداز میں)چھوٹے لالہ جی۔۔۔۔۔۔ہوں۔

کملا: (روتی ہے)

سیٹھ: کملا تم جاؤ۔۔۔۔۔۔ اب تم جاؤ(خود سسکیاں بھرنا شروع کردیتا ہے)

(کملا کے رونے کی آواز)

(وقفہ)

کملا: (رونی آواز میں)۔۔۔ میں نے جھوٹ بولا۔۔۔۔۔۔جوکچھ سچ تھا زبان پر نہ آنے دیا۔ میں نے پاپ کیا۔۔۔۔۔۔ مجھے چاہیئے تھا کہ سچ بول دیتی۔۔۔۔۔۔ جو کچھ میں نے دیکھا تھا صاف صاف بتا دیتی۔ پر میں نے ایسا کیوں نہ کیا۔۔۔۔۔۔ کیوں نہ کیا(روتی ہے)

شنکر: ہاں ہاں بتاؤ تم نے ایسا کیوں نہ کیا۔۔۔۔۔۔ تم نے سچ کیوں نہ بولا؟

کملا: (سسکیوں کے ساتھ) یہی تو میں اپنے من سے پوچھتی ہوں۔۔۔۔۔۔میں سوچتی ہوں اور سو چتے سوچتے ایسی جگہ پہنچ جاتی ہوں جہاں سوچ بچار ہو ہی نہیں سکتا ۔۔۔۔۔۔آپ نے میری مدد کی ہے کیا اس لیئے میں نے جھوٹ بولا۔۔۔۔۔۔نہیں یہ تو ادلے کا بدلا ہو جاتا۔ میں کبھی ایسا نہ کرتی۔۔۔۔۔۔ پھر میں نے جھوٹ کیوں بولا۔۔۔۔۔۔میرے دل میں کہیں۔۔۔۔۔۔کہیں۔۔۔۔۔۔نہ جانے کہاں اس کا جواب چھپا بیٹھا ہے۔ مجھے ایسا معلوم ہو تاہے کہ مجھے معلوم ہے میں نے جھوٹ کیوں بولا۔۔۔۔۔۔سوچتی ہوں۔۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔۔ نہیں میں اس کی بابت کیسے سوچ سکتی ہوں۔۔۔۔۔۔میں تو اب اس قابل ہی نہیں رہی(روتی ہے)

(بھاری قدموں کی آواز۔۔۔۔۔۔شنکر سوچنے کے موڈ میں ٹہلتا ہے)

شنکر: تم۔۔۔۔۔۔تم۔۔۔۔۔۔(اپنے آپ سے)لیکن یہ کیسے ہوسکتا ہے؟

کملا: میں بھی یہی سوچتی ہوں۔ میرا دل بھی نہیں مانتا۔۔۔۔۔۔ لیکن پھر۔۔۔۔۔۔پھر۔۔۔۔۔۔میں نے جھوٹ کیوں بولا۔۔۔۔۔۔ میں اس سے کہہ سکتی تھی کہ رات کو آپ چھوٹے لالہ جی سے ملنے آئے تھے۔ اس سے کیا ہو جاتا۔۔۔۔۔۔آپ نے تو اسے نہیں مارا۔۔۔۔۔۔پھر۔۔۔۔۔۔پھر۔

شنکر: کملا! کندن نے خود کشی نہیں کی۔ اس کو قتل کرنے والا میں ہوں۔

کملا: (بڑے تعجبّ سے)آپ۔۔۔آپ۔۔۔۔۔۔

شنکر: ہاں۔ میں۔۔۔اُس رات میں نے ہی اس کوموت کے گھاٹ اُتارا۔۔۔۔۔۔ وہ اسی قابل تھا۔

کملا: شنکر صاحب یہ آپ نے کیا کیا۔۔۔۔۔۔ یہ آپ نے کیا کیا۔۔۔۔۔۔ ایسے کئی آدمی اسی دنیا میں بستے ہیں جو موت کے قابل ہیں۔۔۔۔۔۔ آپ کی نظروں میں ایسے ان گنت آدمی ہوں گے جن کا جیتے رہنا بہت خطرناک ہے لیکن آپ نے صرف کندن ہی پرکیوں وار کیا !صرف اسی کو نشانہ کیوں بنایا؟

شنکر: یہی میں خود سوچتا ہوں(ٹہلنے کی آواز)۔۔۔۔۔۔یہی میں خود سوچتا ہوں۔۔۔۔۔۔لیکن ٹھہرو۔۔۔۔۔۔ میں نے اس کو اس لیئے قتل کیا کہ اس نے تمہیں دکھ پہنچایا تھا۔۔۔۔۔۔ تمہیں۔۔۔۔۔۔کملا تمہیں جس کی آنکھوں میں مجھ ایسا رد کیا ہوا انسان بھی اپنی تمناؤں کی جھلک دیکھنے کی آرزو کرسکتاہے۔ جس کے دل کی دھڑکنیں سننے کے لیئے آلات کی ضرورت نہیں صرف کانوں کی ضرورت ہے۔۔۔۔۔۔میں کتنا خوش ہوں۔۔۔۔۔۔میں کتنا خوش ہوں کہ میرے دل کی بات جو میں خود نہ سمجھ سکا تم جان گئیں اور جو بات تم نہ جان سکیں میں سمجھ گیا۔۔۔۔۔۔ میں نے کندن کو کیوں قتل کیا۔۔۔۔۔۔تم نے جھوٹ کیوں بولا۔۔۔۔۔۔ان دونوں سوالوں کا ایک ہی جواب ہے۔

کملا: کندن کو آپ نے صرف میرے لیئے قتل کیا!

شنکر: نہیں صرف تمہارے لیئے نہیں اگر وہ جرم نہ کرتا تو سزا دینے کا خیال میرے دماغ میں پیدا نہ ہوتا۔پہلے اس نے جُرم کا ارتکاب کیا پھر اس نے تمہیں دکھ پہنچایا اس کے بعد میں نے اس کو سزا دی۔۔۔۔۔۔ تم ٹھیک کہتی ہو، دنیا میں کندن جیسے ہزاروں آدمی موجود ہیں۔۔۔۔۔۔ اس شہر میں اس جیسے کئی مجرم موجود ہوں گے مگر ان میں سے ہر ایک کو میں کیسے سزا دے سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔ وہ سب کے سب گردن زدنی ہیں۔ لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ صرف میرے ہی ہاتھ ان کے ناپاک خون سے آلودہ ہوں۔۔۔۔۔۔کندن کو سزا دینے کا کام میں نے اس لیئے اپنے ہاتھوں میں لیا کہ تمہارے اور میرے درمیان زیادہ فاصلہ نہیں تھا۔

کملا: لیکن اب تو بہت زیادہ ہوگیا ہے(ٹھنڈی سانس بھرتی ہے)۔۔۔۔۔۔مجھے ڈر تھا۔۔۔۔۔۔مجھے ڈر تھا۔

شنکر: ڈر کیسا۔۔۔۔۔۔اب ڈر کیسا۔۔۔۔۔۔ آج سے پہلے میں بھی ڈر محسوس کرتا تھاپر اب تو ہم دونوں ڈر اور خوف کی حدود سے باہر نکل گئے ہیں۔

کملا: مجھے ڈر تھا کہ میری زندگی میں سکھ کی گھڑی جب بھی آئے گی موت کا گھنٹہ بجاتی آئے گی۔۔۔۔۔۔ آج وہی ہوا جس کا کھٹکا تھا۔۔۔۔۔۔ بالکل وہی ہوا۔

شنکر: کیاہوا۔۔۔۔۔۔ ایک پاپی دنیا سے کم ہوا۔۔۔۔۔۔خس کم جہاں پاک۔

کملا: ایک پاپی دنیاسے ضرور کم ہوا پر پاپ تو وہیں رہا۔۔۔۔۔۔شنکر صاحب آپ نے پاپی کومارا ہے پاپ کو نہیں۔۔۔۔۔۔

شنکر: لیکن پاپ اسی نے کیا تھا۔

کملا: اسی نے کیا تھا پر موت اس کے من سے اس کو دھوتو نہیں سکی۔۔۔۔۔۔ آپ اس کو ہلاک کرکے اس کے دل سے وہ پاپ تو دُور نہیں کرسکے ہیں۔

شنکر: نہیں۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔۔۔

کملا: پھر اس کو جان سے مارنے کا فائدہ۔۔۔۔۔۔ اس کو اپنے پاپ کے پرائسچت کا موقع اب کیسے ملے گا۔۔۔۔۔۔آپ نے اس کو مار کر اس سے وہ موقع بھی چھین لیا جب کہ وہ سچے دل سے معافی مانگ سکتا تھا۔۔۔۔۔۔ آپ نے اسے اچھا بننے سے پہلے موت کے گھاٹ اُتار دیا۔۔۔۔۔۔ آپ نے غلطی کی۔

شنکر: (بھنا کر)۔۔۔کیا غلطی کی۔۔۔۔۔۔نادر شاہ اپنی ہوس کی پیاس بجھانے کے لیئے دلی کے گلی کوچوں میں خون کے دریا بہا سکتا ہے۔۔۔۔۔۔چنگیز خاں اپنا د ل خوش کرنے کے لیئے بادۂ ہرجام بنا سکتا ہے۔۔۔۔۔۔ تیمور انسان کے خون سے محض تفریح کے لیئے ہولی کھیل سکتا ہے۔۔۔۔۔۔ یورپ میں ایک ہٹلر اپنا شوق پورا کرنے کے لیئے کئی شمشان بنا سکتا ہے مگر میں ایک مجرم کو سزا نہیں دے سکتا۔۔۔۔۔۔ کیوں۔۔۔۔۔۔کیوں!

کملا: اس لیئے کہ شنکر ہٹلر نہیں ہے۔۔۔۔۔۔ ایک معمولی انسان ہے جس کے دل میں کوئی ہوس نہیں ہے۔ آپ نے اپنا دل خوش کرنے کے لیئے کندن کو نہیں مارا۔۔۔۔۔۔ آپ کو دُکھ ہوا تھا اس کے برے کام سے۔ آپ نے برے کام کو مٹانا چاہا۔ ایک انسان کو مٹا دیا۔۔۔۔۔۔ یہ غلطی تھی۔بہت بڑی غلطی تھی۔۔۔۔۔۔آپ نے سانپ کو مارنا چاہا اور یہ خیال رکھا کہ لاٹھی ٹوٹنے نہ پائے۔ آپ کی لاٹھی ٹوٹ گئی پر سانپ نہ مرا۔۔۔۔۔۔ سانپ اس کا باپ تھا جو سدا رس گھولتا رہے گا۔۔۔۔۔۔رس گھولتا رہے گا۔

(دروازے پر دستک کی آواز۔۔۔۔۔۔ خاموشی۔۔۔۔۔۔پھر دستک کی آواز)

شنکر: کون ہے۔۔۔۔۔۔(دروازہ کھولنے کی آواز)

انسپکٹر: میں عبدالحمید۔

شنکر: کون۔۔۔۔۔۔(سنبھل کر) انسپکٹر عبدالحمید۔۔۔۔۔۔آؤ۔۔۔۔۔۔آؤ۔

انسپکٹر: مجھے افسوس ہے میں تمہارے تخلیئے میں دخل انداز ہوا۔۔۔۔۔۔مجھے کچھ کہنا ہے:۔

شنکر: (جلدی جلدی) کہو کہوکیا کہتے ہو؟

انسپکٹر: میں تمہاری سب باتیں سُن چکا ہوں۔۔۔۔۔۔ جن حالات میں تم لوگوں کو ایک دوسرے کی محبت کا احساس ہوا بہت ہی دردناک ہے۔۔۔۔۔۔ قانون کی آنکھیں بھی یہ کہانی سن کر نمناک ہوگئیں۔۔۔۔۔۔ میرا اصول۔۔۔۔۔۔میرا فرض۔۔۔۔۔۔میراضمیرتمہاری محبت کے سامنے اپنا سر جھکاتا ہے۔۔۔۔۔۔ کندن مر گیا ہے اب اسے کوئی طاقت زندہ نہیں کرسکتی لوگوں کو یہی معلوم ہے کہ اس نے خود کشی کی ہے۔۔۔۔۔۔تمہارا راز میرے سینے میں ہمیشہ محفوظ ر ہے گا۔۔۔۔۔۔ بس مجھے یہی کہنا تھا۔

(تھوڑا وقفہ)

شنکر: انسپکٹر عبدالحمید۔۔۔۔۔۔ ٹھہرو۔۔۔۔۔۔(تھوڑا وقفہ)۔۔۔۔۔۔ مجھے بھی ساتھ لے چلو۔

انسپکٹر: وہ کیوں!

شنکر: میں قاتل ہوں۔۔۔۔۔۔میں نے ایک پاپ کو مٹانا چاہا مگر ایک انسان کا خون کردیا۔۔۔۔۔۔اس غلطی کی سزا مجھے بھگتنا ہوگی چلو انسپکٹر عبدالحمید جلدی چلو۔۔۔۔۔۔ ایسا نہ ہومیرے ضمیر کی جاگی ہوئی آواز(تمہارے رحم و کرم کے نیچے دب جائے)

انسپکٹر: تمہاری محبت۔۔۔۔۔۔!

شنکر: محبت رُوح کی جائیداد ہے۔ وہ اسے خود سنبھال لے گی۔۔۔۔۔۔ میں چلا کملا۔۔۔۔۔۔میں چلا۔

کملا: جاؤ۔۔۔۔۔۔جاؤ۔۔۔۔۔۔ پر جو شکتی پرماتما نے تمہیں دی ہے تھوڑی سی مجھے بھی دیتے جاؤ۔۔۔۔۔۔ نہیں نہیں میں نہیں روؤں گی۔۔۔۔۔۔ مجھے رونا نہیں چاہیئے۔۔۔۔۔۔ آج کا دن تو بڑا شبھ دن ہے۔۔۔۔۔۔ میں جو کچھ چاہتی تھی مجھے مل گیا۔۔۔۔۔۔۔میری جھولی بھر گئی۔۔۔۔۔۔ اب مجھے کسی سے کچھ نہیں مانگنا۔۔۔۔۔۔جاؤ۔۔۔۔۔۔جاؤ۔۔۔۔۔۔

(فیڈ آؤٹ) (خیال ماخوذ)

مأخذ : کتاب : منٹو کے ڈرامے اشاعت : 1942

مصنف:سعادت حسن منٹو

مزید ڈرامے پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here