نکلی جو روح ہو گئے اجزائے‌ تن خراب

0
64
Romantic Poetry in Urdu
- Advertisement -

نکلی جو روح ہو گئے اجزائے‌ تن خراب

اک شمع بجھ گئی تو ہوئی انجمن خراب

کیوں ڈالتا ہے خاک کہ ہوگا کفن خراب

میں ہوں سفید پوش نہ کر پیرہن خراب

جی میں یہ ہے کہ دل ہی کو سجدے کیا کروں

- Advertisement -

دیر و حرم میں لوگ ہیں اے جان من خراب

نازک دلوں کا حسن ہے رنگ شکستگی

پھٹنے سے کب گلوں کا ہوا پیرہن خراب

دنیا نے منہ پہ ڈالا ہے پردہ سراب کا

ہوتے ہیں دوڑ دوڑ کے تشنہ دہن خراب

ابلیس سے یہ کہتا ہے لعنت کا طوق روز

آدم خراب یا صفت ما و من خراب

کیا خوش نما ہو خضر بڑھے گر لباس عمر

قد سے جو ہو دراز تو ہو پیرہن خراب

میرا سلام عشق علیہ السلام کو

خسرو ادھر خراب ادھر کوہ کن خراب

یوسف کے حسن نے یہ زلیخا کو دی صدا

لو انگلیاں کٹیں وہ ہوئے طعنہ زن خراب

گر بس چلے تو آپ پھروں اپنے گرد میں

کعبے کو جا کے کون ہو اے جان من خراب

زخمی ہوا ہے نام کو در پردہ حسن بھی

یوسف کا خون گرگ سے ہے پیرہن خراب

وعدہ کیا ہے غیر سے اور وہ بھی وصل کا

کلی کرو حضور ہوا ہے دہن خراب

اے خاک گور دیکھ نہ دھبا لگے کہیں

رکھ دوں ابھی اتار کے گر ہو کفن خراب

کیسی بھی ہو زمین عجب ہل ہے طبع تیز

مائلؔ جو بوئیں ہم نہ ہو تخم سخن خراب

مأخذ : Deewan-e-Dr.Maiel(Tohfa-e-Dakan)

شاعر:احمد حسین مائل

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here