بات مہندی سے لہو تک آ گئی

0
132
Romantic Poetry in Urdu
- Advertisement -

بات مہندی سے لہو تک آ گئی

گفتگو اب تم سے تو تک آ گئی

اب وہ شغل چاک دامانی کہاں

اب طبیعت تو رفو تک آ گئی

جان جائے یار ہے اب ڈر نہیں

- Advertisement -

بات اپنی آبرو تک آ گئی

آرزو تھی جس کو پانے کی ہمیں

جستجو اس آرزو تک آ گئی

بوٹے بوٹے سے نمایاں ہے بہار

ڈالی ڈالی رنگ و بو تک آ گئی

وصل کی شب اور اتنی مختصر

باتوں باتوں میں وضو تک آ گئی

مأخذ : کتاب : Nawa-e-harf-e-khamoosh (Pg. 191) Author : Zafar Kaleem مطبع : Zafar Kaleem (2007) اشاعت : 2007

شاعر:ظفر کلیم

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here