نہ مقامات نہ ترتیب زمانی اپنی

0
158
Urdu Ghazal Poetry
- Advertisement -

نہ مقامات نہ ترتیب زمانی اپنی

اتفاقات پہ مبنی ہے کہانی اپنی

جسم سی جاتی ہے تہہ حرف کسی کرب کی موج

تھم کے رہ جاتی ہے لفظوں کی روانی اپنی

پھیل جاتی تھی سماعت کی زمینوں میں نمی

- Advertisement -

تھی کبھی تر سخنی آب رسانی اپنی

لاکھ تم مجھ کو دباؤ میں ابھر آؤں گا

سطح ہموار کیے رہتا ہے پانی اپنی

ماجرا روح کی وحشت کا نجی ہے اے سازؔ

آگے روداد نہیں ہم کو سنانی اپنی

مأخذ : کتاب : khamoshi bol uthi hai (Pg. 131)

شاعر:عبد الاحد ساز

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here