کیا میں اندر آسکتا ہوں

0
146
Urdu Drama Stories
- Advertisement -

افراد

نعیم: (ایک آزاد خیال نوجوان)

اور چند’’آنا منع ہے‘‘ کے بورڈ

(بالکل آہستہ آہستہ وہ دُھن سازوں پر بجائی جائے جس میں�آگے چل کر اس ڈرامے کا ہیرو ایک غزل گائے)

نعیم: (ایک لمبی سانس لے کر)۔۔۔۔۔۔کیسی پُر فضاجگہ ہے۔۔۔۔۔۔ حیرت ہے کہ آج تک میری نظروں سے اوجھل رہی۔۔۔۔۔۔نظریں۔۔۔۔۔۔اوجھل۔۔۔۔۔۔(مسکرا کر)نظر ہوتو چیزیں نظربھی نہیں آتیں۔۔۔۔۔۔آہ! نظر کی یہ بے نظری!

- Advertisement -

(وقفہ۔۔۔۔۔۔اس دوران میں ساز بجتے رہیں)

نعیم: یہ نرم نرم گھاس کتنی فرحت ناک ہے۔۔۔۔۔۔ جی چاہتا ہے آنکھیں پاؤں کے تلوؤں میں لگ جائیں۔۔۔۔۔۔ اور یہ پھول۔۔۔۔۔۔یہ پھول اتنے خوبصورت نہیں جتنی ان کی ہرجائی خوشبو خوبصورت ہے۔۔۔۔۔۔ ہر شے جو ہر جائی ہو خوبصورت ہوتی ہے۔ ہرجائی عورت ہرجائی مرد۔۔۔۔۔۔کچھ سمجھ میں نہیں آتا۔ یہ خوبصورت چیزیں پہلے پیدا ہوئی تھیں یا خوبصورت خیال۔۔۔۔۔۔ ہر خیال خوبصورت ہوتا ہے۔ مگر مصیبت یہ ہے کہ ہر پھول خوبصورت نہیں ہوتا۔۔۔۔۔۔ مثال کے طور پر یہ پھول۔۔۔۔۔۔ اس ٹہنی پر اکڑوں بیٹھاہے کتنا سفّلہ دکھائی دیتا ہے۔۔۔۔۔۔مگر سفّلہ پن اور بھدا پن دو الگ الگ چیزیں ہیں۔۔۔۔۔۔ بہر حال یہ جگہ خوب ہے۔ ایک بہت بڑا د ماغ معلوم ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ روشنی بھی ہے۔ سائے بھی ہیں اور ان کاباہم اختلاط، شعور اور تحت الشعور کا مرتعش لمس معلوم ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ایسا محسوس ہوتا ہے کہ اس وقت میں نہیں بلکہ یہ سوچ رہی ہے۔۔۔۔۔۔یہ پُر فضا جگہ جو اتنی دیر میری نظروں سے اوجھل رہی۔

(وقفہ۔۔۔۔۔۔اس کے بعد ذیل کی غزل گائی جائے)

غزل

پھر چراغ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن

مجھ کو پھر نغموں پہ اکسانے لگا مرغِ چمن

پھول ہیں صحرا میں یا پریاں قطار اندر قطار

اودے اودے نیلے نیلے پیلے پیلے پیرہن

برگ گل پر رکھ گئی شبنم کا موتی باد صبح

اور چمکاتی ہے اس موتی کو سُورج کی کرن

پھر چراغ لالہ سے روشن ہوئے کوہ و دمن

مجھ کو پھر نغموں پہ اکسانے لگا مرغِ چمن

(موٹرکے ہارن کی آواز۔۔۔۔۔۔بڑی کرخت۔۔۔۔۔۔ پھر موٹرروکنے کی تیز آواز)

مالک: اے تم کون ہو؟

نعیم: (چونک کر)۔۔۔۔۔۔یہ موٹر کہاں سے آگئی؟

مالک: وضع قطع سے تو آدمی شریف معلوم ہوتا ہے مگر یہ گھس کیسے آیا یہاں۔۔۔۔۔۔کس اطمینان سے لیٹا ہے جیسے اس کے باوا کا باغ ہے۔۔۔۔۔۔(بلند آواز میں)۔۔۔۔۔۔اماں کچھ سُنتے ہو؟

نعیم: تشریف لے آئیں۔۔۔۔۔۔بہت اچھی جگہ ہے۔

مالک: (زیر لب)تشریف کا بچہ۔۔۔۔۔۔ (بلند آواز میں) ادھر آؤ۔

نعیم: بھئی مجھ سے نہیں آیا جائے گا۔تم خود ہی چلے آؤ۔ واللہ بڑی دلفریب جگہ ہے۔ تمہاری سب کوفت دُور ہو جائے گی۔

(موٹر کا دروازہ کھولنے اور اس کے غصے میں زور سے بند کرنے کی آواز۔۔۔۔۔۔ پھر پتھریلے فرش پر قدموں کی چاپ)

مالک: (غصے میں) اُٹھو یہاں سے!

نعیم: اتنے اونچے نہ بولو۔۔۔۔۔۔ آؤ یہاں میرے پاس لیٹ جاؤ۔۔۔۔۔۔ بالکل خاموش جس طرح میں لیٹا ہوں اور آنکھیں بند کرلو۔ اپنا سارا جسم ڈھیلا چھوڑ دو، دماغ کی ساری بتیاں گل کردو۔پھر جب تم اس اندھیرے میں چلو گے تو تمہاری ٹٹولتی ہوئی انگلیاں غیر ارادی طور پر ایسے قمقمے روشن کریں گی جن کے وجود سے تم بالکل غافل تھے۔۔۔۔۔۔ آؤ۔ میرے ساتھ لیٹ جاؤ۔

مالک: دیوانے معلوم ہوتے ہو۔

نعیم: دیوانے۔۔۔۔۔۔نہیں تم نے آج تک دیوانے دیکھے ہی نہیں۔۔۔۔۔۔ میری جگہ اگر یہاں کوئی دیوانہ ہوتا تووہ ان چند بکھری ہوئی جھاڑیوں اور ان ٹہنیوں پر بچوں کے گالوں کے مانند لٹکے ہوئے پھولوں سے مطمئن کبھی نہ ہوتا۔۔۔۔۔۔ دیوانگی اطمینان کا نام نہیں میرے دوست۔۔۔۔۔۔ آؤ میرے پاس بیٹھ جاؤ اور دیوانگی کی باتیں کرو۔

مالک: اپنی بکواس بند کرو اور جاؤ یہاں سے نو دو گیارہ ہو جاؤ۔

نعیم: تم مجھے یہاں سے کیوں نکالنا چاہتے ہو۔۔۔۔۔۔بڑے مزے میں بیٹھا تھا۔

مالک: میں تمہیں اس لیئے یہاں سے نکالنا چاہتا ہوں کہ یہ جگہ میری ہے۔

نعیم: یہ جگہ تمہاری ہے۔۔۔۔۔۔ناممکن۔۔۔۔۔۔ ایسا کبھی ہو ہی نہیں سکتا۔

مالک: کیوں؟

نعیم: اس لیئے۔۔۔۔۔۔ اس لیئے کہ۔۔۔۔۔۔ نہیں میرا خیال غلط ہے۔ یہ باغ تمہارا ہی ہوگا۔۔۔۔۔۔ نہیں یہ باغ تمہارا ہی ہے۔

مالک : تو بھاگ جاؤ یہاں سے۔۔۔۔۔۔اور وہ بورڈ پڑھتے جاؤ، جو گیٹ کے پاس لگا ہے۔

نعیم: کون سا بورڈ۔۔۔۔۔۔ ہاں وہ۔۔۔۔۔۔’’بغیر اجازت اندر آنا منع ہے‘‘۔۔۔۔۔۔ حیرت ہے میری نظروں سے اوجھل رہا ۔۔۔۔۔۔(مسکراتا ہے) نظر ہو تو چیزیں نظر نہیں بھی آتیں۔۔۔۔۔۔ نظر کی یہ بے نظری!۔۔۔۔۔۔(پتھریلے فرش پر قدموں کی چاپ)

بغیر اجازت اندر آنا منع ہے(قدموں کی چاپ جاری ہے)

نوٹ: قدموں کی چاپ چند لمحات جاری رہے۔۔۔۔۔۔اس کے بعد یہ آواز ہجوم کے شور میں گھل مل جائے۔ ہجوم کا شور بہت اونچا نہ ہو۔ ایسا معلوم ہو کہ آٹھ دس لڑکیاں اور پندرہ بیس مرد ایک جگہ اکٹھے ہیں اور ادھر ادھر کی باتیں کررہے ہیں کبھی کبھی کسی لڑکی کے ہنسنے کی آواز بھی سنائی دے۔۔۔۔۔۔ آوازوں کے اس پردے پر ذیل کا مکالمہ سپر امپوز کیا جائے۔

مرد نمبر ایک: مسز فوجدار۔ یہ پینٹنگ دیکھی آپ نے؟

مسز فوجدار: (وقفے کے بعد) اوہ۔۔۔۔۔۔اٹ از لولی۔۔۔۔۔۔(آہستہ) آپ نے شیریں کو دیکھا۔۔۔۔۔۔ کتنی سج بن کر آئی ہے۔

عورت نمبر ایک: ثریا آکے تصویریں دیکھ۔ تو وہاں کھڑی کیا کررہی ہے۔

مرد نمبر دو: بڑی پیاس لگ رہی ہے۔۔۔۔۔۔ ان لوگوں نے ڈرنکس کا انتظام کیوں نہیں کیا۔

مرد نمبر تین: شیلا زُکام کی وجہ سے نڈھال ہے ورنہ ضرور آتی۔۔۔۔۔۔ آپ جانتے ہی ہیں کہ پینٹنگز سے اسے کتنی دلچسپی ہے ۔

مرد نمبر چار: بچپن ہی میں اسے تصویریں بنانے کا شوق تھا۔

مرد نمبر تین: اب تو وہ بہت اچھی تصویریں بنا لیتی ہیں پرسوں اس نے پنسل کاغذ لے کر اپنے چھوٹے بھائی کی سائیکل کی تصویر اُتاری۔۔۔۔۔۔ میں تو دنگ رہ گیا۔

نعیم: (ہلکے طنز کے ساتھ) ہو بہو سائیکل معلوم ہوتی ہوگی۔

مرد نمبر تین: جی ہاں۔۔۔۔۔۔(اپنے ساتھی سے دھیمے لہجے میں) یہ آدمی کون ہے!

مردنمبر چار: معلوم نہیں کون ہے۔

عورت نمبر دو: کہاں غائب رہتی ہو بملا۔۔۔۔۔۔ کئی دفعہ تمہارے گھر گئی مگر۔۔۔۔۔۔

عورت نمبر تین: یہ آج کل سوشیلا کے لیئے کوئی اچھا سا بر ڈھونڈنے میں مشغول ہے۔

مرد نمبر چار: میں آپ سے عرض کر چکا ہوں کہ ان شرائط پر کنٹریکٹ نہیں ہوسکتا۔

عورت نمبر چار: یہ تصویر کتنی بھدی ہے۔

نعیم: یہ تصویر بھدی نہیں ہے۔

عورت نمبرچار: (چونک کر) کیا کہا؟

نعیم: میں نے کہا تھا کہ یہ تصویر بھدی نہیں ہے۔

عورت نمبر چار: مگر آپ کی رائے میں نے طلب نہیں کی۔

نعیم: درست ہے مگر تصویرپر آپ نے جو حملہ کیا تھا اس کا جوا ب دینے کا مجھے حق ضرور حاصل ہے۔۔۔۔۔۔ آپ یقین مانیں کہ یہ تصویر جسے آپ بھدی بتا رہی ہیں ان تمام تصویروں سے کہیں زیادہ خوبصورت ہے جو اس گیلری میں لٹکی ہوئی ہیں۔۔۔۔۔۔آپ غور سے دیکھیں تو صرف اسی تصویرمیں آپ کو رنگوں کا صحیح التزام نظر آئے گا۔۔۔۔۔۔ اس تصویر کے رنگ موضوع کی مطابقت رکھتے ہیں یعنی سنجیدہ اور متین ہیں۔ برش کی ہر جنبش پر خلوص ہے۔۔۔۔۔۔

عورت نمبر چار: آپ کون ہیں؟

نعیم: (چونک کر)۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔

مرد نمبر پانچ: میں میں کیا کرتے ہو۔۔۔۔۔۔ بتاؤ تم کون ہو؟

نعیم: آپ ذرا آرام سے پوچھئے۔۔۔۔۔۔ میں آپ کو بتا سکتا ہوں۔

مرد نمبر چھ: تم یہاں آئے کیسے؟

نعیم: پیدل۔

مرد نمبر چھ: عجب مسخرہ ہے۔۔۔۔۔۔ میں اس سے پوچھتا ہوں کہ یہاں کیسے آئے ہو تو جواب دیتا ہے پیدل۔

مرد نمبر پانچ: تمہارے پاس کارڈ ہے۔

نعیم: کارڈ۔۔۔۔۔۔ کیسا کارڈ؟

(کئی عورتوں اور مردوں کے قہقہوں کی آواز)

مرد نمبر چھ: ایسا کارڈ۔۔۔۔۔۔دیکھ لیا آپ نے۔

نعیم: جی ہاں۔۔۔۔۔۔ ایسا کارڈ میرے پاس نہیں ہے۔

مرد نمبر چھ: تو باہر تشریف لے جائیے۔

نعیم: کیوں؟۔۔۔۔۔۔ مجھے یہ تصویر پسند ہے۔ میں اسے ابھی کچھ دیر اور دیکھنا چاہتا ہوں۔

(لوگ ہنستے ہیں)

مرد نمبر چھ: باہر جاکے دیکھو، وہاں تمہیں تھانوں سے اُتری ہوئی کئی تصویریں دیکھنے کو مل جائیں گی۔

نعیم: آپ میرا مذاق کیوں اڑاتے ہیں؟

مرد نمبر پانچ: اس لیئے کہ تمہاری شکل ہی ایسی ہے۔

(لوگ ہنستے ہیں)

مرد نمبر چھ: بغیر اجازت تم اندر چلے آئے ہو۔۔۔۔۔۔ ایسا نہ ہو تمہیں کوئی دھکے مار کر باہر نکال دے۔۔۔۔۔۔جاؤ بھاگ جاؤ یہاں سے۔

(عورتوں اور مردوں کی کُھسرپُھسر۔۔۔۔۔۔ چند لمحات کے بعد اس کو فیڈ کردیا جائے۔۔۔۔۔۔پھر قدموں کی چاپ۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد نعیم پڑھنے کے انداز میں کہے’’ بغیر اجازت اندرآنا منع ہے‘‘۔۔۔۔۔۔ قدموں کی چاپ جاری رہے)۔

(قدموں کی چاپ سمندر کی لہروں کی آواز میں حل ہو جائے۔ لہروں کی ہلکی ہلکی آواز پر ذیل کا مکالمہ سپر امپوز کیا جائے)

نعیم: کیساسہانا منظرہے۔۔۔۔۔۔ ہوا چل رہی ہے۔ لہریں اُٹھ رہی ہیں۔۔۔۔۔۔ ادھر حدِ نظرتک سمندرہی سمندر دکھائی دیتا ہے۔۔۔۔۔۔اُدھر اونچی اونچی عمارتوں کے ساتھ نگاہیں ٹکراتی ہیں اورپتھر اور سیمنٹ کی رنگین دیواروں پررینگنا شروع کردیتی ہیں۔۔۔۔۔۔یہ ساحل کے ساتھ ساتھ دوڑتے ہوئے بجلی کے کھمبے۔۔۔۔۔۔ اور یہ گیلی ریت کا بستر۔۔۔۔۔۔ اوریہ شام کی خنک خاموشی میں گھلی ہوئی گُنگناہٹیں۔۔۔۔۔۔۔یہ سارا منظر ایک سرگوشی سی معلوم ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ جی چاہتاہے میں بھی کسی سے ہولے ہولے باتیں کروں۔۔۔۔۔۔ بالکل سرگوشیوں میں۔۔۔۔۔۔ یہ۔۔۔۔۔۔یہ لڑکی ریت میں کیاڈھونڈ رہی ہے۔۔۔۔۔۔ ایسا معلوم ہوتاہے اپنے گرے ہوئے خیال چن رہی ہے۔۔۔۔۔۔کتنی بھولی ہے۔۔۔۔۔۔

(وقفہ)

نعیم: یہ کھیل دلچسپ ہے۔۔۔۔۔۔آپ یقیناًاپنی مخروطی انگلیاں دیکھ رہی ہیں جن پر سے ریت کے یہ ننھے ننھے ذرے جوانی کے خیالوں کی طرح پھسل پھسل کر نیچے گر رہے ہیں۔۔۔۔۔۔

(لہروں کی آواز)

نعیم: آپ کی انگلیاں ارتعاش پذیر کیوں ہوگئیں۔۔۔۔۔۔ نہیں۔ نہیں اس طرح یہ اور بھی زیادہ خوبصورت معلوم ہوتی ہیں۔۔۔۔۔۔ آپ اپنا کھیل جاری ر کھیئے۔۔۔۔۔۔

(لہروں کی آواز)

نعیم: عورت سے اگریہ ارتعاش علیحدہ کردیا جائے تو کیا باقی رہ جاتا ہے۔

(لہروں کی آواز)

نعیم: آپ خاموش کیوں ہیں؟

لڑکی: (معصوم لہجے میں) پِتاجی۔۔۔۔۔۔پِتا جی۔۔۔۔۔۔

نعیم: آپ کسے بُلانا چاہتی ہیں؟

لڑکی: اپنے پتا جی کو۔

نعیم: کیوں؟

لڑکی: وہ آجائیں تو اچھا ہے۔

نعیم: مگر میں تو صرف تم سے باتیں کرنا چاہتا ہوں۔

لڑکی: پتا جی۔۔۔۔۔۔پتا جی۔۔۔۔۔۔

نعیم: کچھ سمجھ میں نہیں آتا۔۔۔۔۔۔ اُنہیںیہاں بلانے کی کیا ضرورت ہے۔۔۔۔۔۔کیا تم نہیں چاہتی ہو کہ میں تم سے باتیں کروں۔

لڑکی: آپ پتا جی سے پوچھ لیجئے۔

نعیم: وہ مجھے اس بات کا کیا جواب دیں گے!

لڑکی: آپ اُن سے اجازت لے لیجئے۔

نعیم: تمہاری اجازت ہے یا نہیں؟

لڑکی: میں۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ پتا جی یہ مجھ سے باتیں کرنا چاہتے ہیں۔

باپ: (موٹی آواز میں) تم میری لڑکی سے کیوں باتیں کرنا چاہتے ہو؟

نعیم: تشریف رکھیے۔میں آپ کو اس خواہش کا تجزیہ کرکے بتاتا ہوں۔

باپ: میں پوچھتا ہوں تم میری لڑکی سے کیوں باتیں کرنا چاہتے ہو؟

نعیم: (ارادہ بدل کر)۔۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ میں آپ کی لڑکی سے باتیں کرچکا۔۔۔۔۔۔ بس اب یہ خواہش نہیں رہی۔

باپ: تم نے میری لڑکی سے میرے اجازت کے بغیر کیوں باتیں کیں؟

نعیم: مجھ سے غلطی ہوئی۔

باپ: خبردار آئندہ پھرکبھی ایسی غلطی نہ کرنا۔۔۔۔۔۔ ٹھہرو۔ یہاں تم کیسے داخل ہوئے۔

نعیم: اُدھرسے گھومتا آگیا۔

باپ: ادھرتم گھوم سکتے ہو مگر ادھربغیر اجازت اندر آنا منع ہے۔۔۔۔۔۔ یہ کلب ہے۔۔۔۔۔۔ تم نے وہ بورڈ نہیں پڑھا؟

نعیم: پہلے نہیں پڑھا تھا۔۔۔۔۔۔ اب پڑھ لیا ہے( لہروں کی آواز چند لمحات تک آتی ہے)۔۔۔۔۔۔’’بغیر اجازت اندر آنا منع ہے‘‘

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لہروں کی آواز جار ی ہے۔۔۔۔۔۔ اس آواز کے ساتھ ساتھ کوئی موٹی آواز میں وقفوں کے ساتھ یہ کہتا ہے’’بغیر اجازت اندر آنا منع ہے۔۔۔۔۔۔ ’’بغیر اجازت اندر آنا منع ہے‘‘۔۔۔۔۔۔ چند لمحات کے بعد یہ سلسلہ ختم کردیا جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دستک(دروازہ کھلتا ہے)

نعیم: کیا میں اندر آسکتا ہوں؟

نوکر: ہائیں۔۔۔۔۔۔ح۔۔۔۔۔۔ح۔۔۔۔۔۔حضوریہ آپ کا اپنا گھرہے۔ اجازت کیسی۔

نعیم: نہیں فضلویہ میرا گھر نہیں ہے۔۔۔۔۔۔یہ گھر جومجھے راحت بخشتا ہے کیسے میرا ہوسکتا ہے۔۔۔۔۔۔ مجھے اب ایک نئی بات معلوم ہوئی ہے۔

نوکر: کیا سرکار؟

نعیم: یہی کہ یہ میرا گھر نہیں۔۔۔۔۔۔البتہ اس کاگردوغبار۔ اس کی تمام غلاظتیں میری ہیں۔۔۔۔۔۔وہ تمام چیزیں جن سے مجھے کوفت ہوتی ہے۔ میری ہیں لیکن وہ چیزیں جن سے مجھے راحت پہنچتی ہے کسی اور کی ہیں۔۔۔۔۔۔ خدا جانے کس کی ہیں۔۔۔۔۔۔میں اب ڈرتا ہوں۔۔۔۔۔۔کسی اچھی چیز کو اپناتے ڈرتا ہوں۔۔۔۔۔۔یہ پانی میرا نہیں۔۔۔۔۔۔یہ ہوا میری نہیں۔ یہ آسمان میرا نہیں۔ یہ زمین میری نہیں۔وہ پرانا لحاف جو میں سردیوں میں اوڑھتا ہوں۔۔۔۔۔۔ میرا خیال ہے وہ بھی میرا نہیں۔۔۔۔۔۔فضلو! جاؤ تم بھی میرے نہیں۔۔۔۔۔۔

نوکر: نہیں۔ نہیں سرکار۔۔۔۔۔۔

نعیم: نہیں فضلو تم میرے نہیں ہوسکتے۔۔۔۔۔۔ تمہیں اس کا علم نہیں ہوگا۔۔۔۔۔۔ بہت سی باتیں انسان کے علم میں نہیں ہوتیں۔۔۔۔۔۔ میں اب جارہا ہوں۔

نوکر: کہاں؟

نعیم: بس جارہا ہوں۔۔۔۔۔۔

(قدموں کی چاپ۔۔۔۔۔۔ چند لمحات تک۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد اس چاپ کو اس ٹھمری کی دھن میں تحلیل کردیا جائے۔’’پیابن ناہیں آوت چین‘‘۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر کے بعد بول بھی شروع ہو جائیں۔

نعیم: کیا میں اندر آسکتا ہوں؟

(ساز بجتے رہیں۔طوائف گانا بند کردیتی ہے)

طوائف: آئیے آئیے تشریف لے آئیے اندر۔۔۔۔۔۔صاحب اجازت لینے کی کیاضرورت تھی۔

نعیم: نیچے سے گزررہا تھا۔ آپ کو یہ ٹھمری گاتے سنا۔ آواز پسند آئی۔ اوپر چلا آیا۔

طوائف: تشریف لے آئیے۔

نعیم: یہ چند اصحاب جو بیٹھے ہیں۔ انہیں کوئی اعتراض تو نہیں ہوگا؟

(تین چارمردوں کی دبی دبی ہنسی)

طوائف: انہیں کیا اعتراض ہوسکتا ہے۔۔۔۔۔۔ تشریف لے آئیے۔۔۔۔۔۔ ادھر مسند پر بیٹھئے۔۔۔۔۔۔ یہ گاؤ تکیہ لے لیجئے۔

(وقفہ)

نعیم: کتنی اچھی جگہ ہے۔

طوائف: آپ کیوں میرا مذاق اُڑاتے ہیں۔۔۔۔۔۔یہ اچھی جگہ ہے؟۔۔۔۔۔۔ جہاں طاقچیے میں اُلٹی جھاڑو پڑی ہے۔۔۔۔۔۔دیواروں پر تھانوں سے اتری ہوئی بھدی تصویریں لٹک رہی ہیں اور اس ٹوٹے ہوئے پھولدان میں کئی دنوں کے باسی پھول پڑے ہیں۔۔۔۔۔۔ آپ کیوں میرا مذاق اڑاتے ہیں؟

نعیم: میں تمہارا مذاق نہیں اُڑاتا۔۔۔۔۔۔ البتہ تمہارے طاقچیے کی اُلٹی جھاڑو۔ دیواروں پر تھانوں سے اُتری ہوئی تصویریں اور ٹوٹے ہوئے پھولدان کے باسی پھول ضرور کسی چیز کا مذاق اڑا رہے ہیں۔۔۔۔۔۔ تم اس نکتے کو نہیں سمجھوگی اور سچ پوچھو تو اس وقت میں تمہیں سمجھانا بھی نہیں چاہتا۔۔۔۔۔۔ گائے جاؤ۔۔۔۔۔۔ وہی جو تم گارہی تھیں۔۔۔۔۔۔’’پیا بن آوت ناہیں چین‘‘۔۔۔۔۔۔ جانے وہ کون پیا ہے۔ جس کے بنا تمہیں چین نہیں۔۔۔۔۔۔گائے جاؤ۔۔۔۔۔۔

(طوائف ہنستی ہے اور ٹھمری شروع کردیتی ہے)

(آہستہ آہستہ فیڈ آؤٹ)

مأخذ : کتاب : منٹو کے ڈرامے اشاعت : 1942

مصنف:سعادت حسن منٹو

مزید ڈرامے پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here