کئی کوٹھے چڑھے گا وہ کئی زینوں سے اترے گا

0
129
Romantic Poetry in Urdu
- Advertisement -

کئی کوٹھے چڑھے گا وہ کئی زینوں سے اترے گا

بدن کی آگ لے کر شب گئے پھر گھر کو لوٹے گا

گزرتی شب کے ہونٹوں پر کوئی بے ساختہ بوسہ

پھر اس کے بعد تو سورج بڑی تیزی سے چمکے گا

ہماری بستیوں پر دور تک امڈا ہوا بادل

- Advertisement -

ہوا کا رخ اگر بدلا تو صحراؤں پہ برسے گا

غضب کی دھار تھی اک سائباں ثابت نہ رہ پایا

ہمیں یہ زعم تھا بارش میں اپنا سر نہ بھیگے گا

میں اس محفل کی روشن ساعتوں کو چھوڑ کر گم ہوں

اب اتنی رات کو دروازہ اپنا کون کھولے گا

مرے چاروں طرف پھیلی ہے حرف و صوت کی دنیا

تمہارا اس طرح ملنا کہانی بن کے پھیلے گا

پرانے لوگ دریاؤں میں نیکی ڈال آتے تھے

ہمارے دور کا انسان نیکی کر کے چیخے گا

شاعر:زبیر رضوی

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here