پھر آگہی سے یقیں کی طرف قدم نکلے

0
177
Romantic Poetry in Urdu
- Advertisement -

پھر آگہی سے یقیں کی طرف قدم نکلے

گمان و وہم کی جب سرحدوں سے ہم نکلے

پھر اضطراب کی لذت کہاں وصال کے بعد

خدا کرے کہ بوقت وصال دم نکلے

میں سچ کہوں تو مری خامشی نہ کہنے دے

- Advertisement -

وہ جھوٹ بولے تو بے ساختہ قسم نکلے

چھپا کے ہم نے رکھے بت جب آستینوں میں

صنم کدہ بھی نہ پھر کیوں تہ حرم نکلے

وہ کشمکش میں رہے مصلحت کی نذر ہوئے

جو لوگ اپنی شرافت میں گھر سے کم نکلے

مأخذ : بھینی بھینی مہک

شاعر:ظفر عدیم

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here