محبت کا جنوں طاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

0
263
Urdu Stories Ghazli
- Advertisement -

محبت کا جنوں طاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

خدا رکھے یہ ہشیاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

محبت کی فسوں کاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

یہ کافر عقل سے عاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

محبت میں ہیں گرچہ یاس کے دن ہجر کی راتیں

- Advertisement -

مگر یہ زندگی پیاری ادھر بھی ادھر بھی ہے

دو عالم کیوں نہ پھر اک دوسرے پر ناز فرمائیں

کہ ذوق ناز برداری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

رہیں گے بن کے زینت امتحاں گاہ محبت کی

یہ پیمان وفاداری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

زبان دل یہاں آنسو وہاں بکھرے ہوئے گیسو

خموشی میں صدا کاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

برابر آج کل رنگیں ہے حسن و عشق کا دامن

سرشک خوں سے گل کاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

چھٹا جاتا ہے دامن ضبط کا دونوں کے ہاتھوں سے

کسی محشر کی تیاری ادھر بھی ہے ادھر بھی ہے

شاعر:ضبط انصاری

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here