سارے عالم میں تیری خوشبو ہے 

0
157
Urdu Romantic Poetry
- Advertisement -

سارے عالم میں تیری خوشبو ہے 

اے میرے رشک گل کہاں تو ہے 

برچھی تھی وہ نگاہ دیکھو تو 

لہو آنکھوں میں ہے کہ آنسو ہے 

ایک دم میں ہزار دفتر طے 

- Advertisement -

چشم حسرت غضب سخن گو ہے 

تو ہی تو اور بال بال اپنا 

فاختہ اور شور کوکو ہے 

تجھ کو دیکھے پھر آپ میں رہ جائے 

دل پر اتنا کسی کو قابو ہے 

جوش اشک و تصور قد یار 

سرو گویا کھڑا لب جو ہے 

حد نہ پوچھو ہماری وحشت کی 

دل میں ہر داغ چشم آہو ہے 

جس نے مومن بنا لیا ہم کو 

وہ تمہارا ہی مصحف رو ہے 

جس کے کشتے ہیں زندۂ جاوید 

وہ تمہاری ہی تیغ ابرو ہے 

یہی ویرانہ عالم ہو ہے 

پل بھی ہے فخر جونپور آسیؔ 

دل جو بے مدعا ہو کیا کہنا 

خواب گاہ جناب شیخو ہے 

شاعر:آسی غازی پوری

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here