گھل سی گئی روح میں اداسی

0
181
Urdu Sad Peotry
- Advertisement -

گھل سی گئی روح میں اداسی

راس آئی نہ ہم کو خود شناسی

ہر موڑ پہ بے کشش کھڑی ہے

اک خوش بدنی و کم لباسی

لالچ میں پروں کے پیر چھوٹے

- Advertisement -

اب رخت سفر ہے بے اساسی

نفس مضموں اسی میں ہے گو

مضمون نفس ہے اقتباسی

آئی بھی تو کیا نگار تعبیر

اوڑھے ہوئے خواب کی ردا سی

جادو سا الم کا کر گئی سازؔ

ان آنکھوں کی ملتفت اداسی

مأخذ : کتاب : khamoshi bol uthi hai (Pg. 102)

شاعر:عبد الاحد ساز

مزید غزلیں پڑھنے کے لیے کلک کریں۔

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here